اترپردیشتازہ ترین خبریں

یوگی حکومت کی تاناشاہی، مظاہرین کو بھیجا نوٹس

اتر پردیش میں شہریت ترمیمی قانون (سی اے اے) 2019 کی مخالفت میں لوگ سڑکوں پر اتر آئے۔ مظاہرین نے اتر پردیش میں کئی مقامات پر تشدد کو انجام دیا، جس کے بعد اب پولیس مظاہرہ کے نام پر لوگوں کو گرفتار کرنے میں مصروف ہوگئی ہے۔ اس دوران مظفر نگر میں 80 دکانوں کو پولیس نے ضبط کرلیا ہے۔ ایس ایس پی کا کہنا ہے کہ دکان کے مالکان کو نوٹس بھیجا جا چکا ہے اور نقصان کی تلافی کے لئے کہا گیا ہے۔

مظفرنگر کے سول لائن تھانہ علاقہ میں کچی سڑک کے پاس کیول پوری میں ہفتہ کو دو گروپوں کے درمیان پتھراؤ ہوگیا تھا۔ اس دوران دونوں فریقوں کی جانب سے پتھراؤ کیا گیا۔ موقع پر پہنچی پولیس نے لاٹھی چارج کرکے بھیڑ کو وہاں سے بھگا دیا، کشیدگی کو دیکھتے ہوئے بڑی تعداد میں پولیس فورس کو تعینات کر دیا گیا۔

پولیس ڈائریکٹر جنرل سنگھ نے کہاکہ تشدد کرنے والوں کو بخشا نہیں جائے گا۔ تشدد میں باہری لوگوں کا ہاتھ ہے۔ انہوں نے خدشہ ظاہر کیاکہ تشدد میں این جی او اور سیاسی لوگ بھی شامل ہو سکتے ہیں، ہم کسی معصوم کو گرفتار نہیں کریں گے۔ پرتشدد احتجاج پر پولیس ڈائریکٹر جنرل اوپی سنگھ نے کہا کہ اب تک 879 افراد کو گرفتار کیا جا چکا ہے۔ وہیں پوری ریاست میں پولیس کی تعیناتی کی گئی ہے۔ اس کے ساتھ ہی پی اے سی اور ریپڈ ایکشن فورس کو بھی تعینات کیا گیا ہے۔

احتجاج کے دوران ہوئے تشدد کے بارے میں ڈی جی پی وپی سنگھ نے کہا کہ 282 پولیس افسر جھڑپ میں زخمی ہوئے ہیں۔ اب تک 18 لوگوں کی موت ہوئی ہے۔ انہوں نے عام لوگوں سے اپیل کی کہ وہ ریاست میں امن و امان قائم کرنے میں پولیس کی مدد کریں۔ او پی سنگھ نے کہا کہ ریاست میں احتجاج کی وجہ سے ہونے والے نقصان کی تلافی شروع کر دی گئی ہے۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close