تازہ ترین خبریںدلی نامہ

کورونا کے بہانے گھوٹالے پے گھوٹالے کر رہی ہے یوگی سرکار: سنجے سنگھ

اترپردیش کے 75 اضلاع میں، کرونا کی جانچ کاغذات میں تو ہوئی مگر کٹ پھینک دی گئی جس شخص کی جانچ کی گئی اس کا نام پتہ اور نہ اس کا موبائی نمبرمحفوظ رکھا گیا

نئی دہلی (امیر امروہوی)
یوپی کی یوگی آدتیہ ناتھ کی حکومت نے کورونا مریضوں کی فرضی جانچ پر نہ صرف گھوٹالا کیا ہے بلکہ کورونا کے استعمال میں آنے والے اسٹومنٹ کی خریداری میں بھی ماضی کی طرح کورونا جانچ گھوٹالے کو دوہرایا ہے۔ اترپردیش کے بریلی ضلع میں، 956 گمنام لوگوں کی کورونا جانچ کر دی گئی لیکن اس کا کوئی ریکارڈ نہیں رکھا گیا، اسی طرح، یوپی کے 75 اضلاع میں کورونا کی جانچ کاغذوں میں تو کی گئی مگر کٹ توڑ کر پھینک دی گئی جس شخص کی جانچ کی گئی اس کا نام پتہ اور نہ اس کا موبائی نمبر محفوظ رکھا گیا۔ اس سے قبل یوگی حکومت نے 800 روپیہ کے آکسیمیٹر 5 ہزار روپے میں، 1600 روپے کا ایک تھرمامیٹر 13 ہزار روپے میں، 1.5 لاکھ کا اینلائزر 3.30 لاکھ روپے میں خرید کر گھوٹالا کیا تھا۔ اترپردیش میں نہ کوئی جانچ، نہ کوئی کرونا، نہ کوئی وبا اور نہ کوئی خطرہ ہے، اسی لئے یوپی حکومت میں سب کچھ بہتر ہے یہ بات لوگ کہتے ہیں۔ یوگی حکومت کورونا کو قابو کرنے میں مکمل طور پر ناکام ثابت ہوئی ہے۔ ان خیالات کا اظہار عام آدمی پارٹی کے سینئر رہنما و راجیہ سبھا ممبر پارلیمنٹ سنجے سنگھ نے پارٹی ہیڈ کوارٹرز میں پریس کانفرنس کے داران کیا۔

انہوں نے کہا کہ ان کی حکومت میں جرائم پیشہ گیری، گندراج، جنگل راج چل اور بدعنوانی عروج پر ہے، کورونا کے نام پر وہ کسی انسان کی نہیں بلکہ بھوتوں کی جانچ کر رہے۔ ہم نے صرف ایک ضلع میں 956 افراد کی کورونا جانچ کی تفتیش پکڑی ہے جبکہ اترپردیش کے پورے 75 اضلاع میں جس طرح انہوں نے کورونا گھوٹالہ کیا ہے، اسی طرح انہوں نے ماضی میں بھی گھوٹالہ کیا تھا۔ یعنی، کوئی انسان موجود نہیں ہے اور اس کی کورونا جانچ پڑتال کی جاتی ہے۔ انہوں نے کہاکہ اس کے نام، پتے اور موبائل نمبر کی جگہ زیرو زیرو لگے ہوئے ہیں۔

سنجے سنگھ نے کہا کہ اگر آپ کو بھوتوں کی کورونا جانچ دیکھنی ہے تو آپ یوپی جائیں کیوںکہ وہاں بھوتوں کی جانچ ہو رہی ہے کسی کا بھی ڈاٹا موجود نہیں ہے اور جانچ ہو رہی ہے مزے کی بات یہ ہے اس کی رپورٹ بھی آ رہی ہے جبکہ کٹ توڑ کر برباد کر دی گئی ہے۔ جانچ کئے گئے شخص کے موبائل نمبر کے سامنے زیرو زیرو لکھ دیا گیا ہے اس طرح کا کام یوپی سرکار میں ہو رہا ہے جو زیرو سرکار ہے وہ زیرو زیرو نمبر پر کام کر رہی ہے۔ انہوں نے کہاکہ آدتیہ ناتھ جی آپ نے شمشان میں دلالی کھائی ہر موقع پر بدعنوانی کی یہاں تک کہ 800 روپیہ کے آکسیمیٹر 5 ہزار روپے میں خریدا، 1600 روپے کا ایک تھرما میٹر 13 ہزار روپے میں خریدااور 1.5 لاکھ کا اینلائزر 3.30 لاکھ روپے میں خریدا پی پی ای کٹ میں کھوٹالا کیا گیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ جب ہم نے اس پر سوال اٹھائے تو ایک ایس آئی ٹی بنا دی گئی جو آج یوپی میں سفید ہاتھی بن گئی ہے۔ ایس آئی ٹی یوگی سرکار کا حفاظتی ڈھال بن کر رہ گئی ہے کوئی بھی معاملہ ہو اس میں ایس آئی ٹی بنا دو جس سے اس معاملے میں کچھ بھی سامنے نہ آسکے۔ میں ان سے کہنا چاہتا ہوں کہ محکمہ تعلیم میں تقرری معاملے میں ایس آئی ٹی بنائی مگر کچھ نہیں حاصل ہوا کورونا اسٹومنٹ گھوٹالے میں بھی آپ نے ایس آئی ٹی بنائی اس میں بھی کچھ نکلنے والا نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ اندر کانت ترپاٹھی معاملے میں، کانپور کانڈ میں، ہاتھرس کانڈ میں بھی ایس آئی ٹی بنائی مگر جانچ میں کچھ بھی سامنے نہں آیا، اس کی بھی جانچ ہونی چاہئے اس کے لئے بھی ایک اور ایس آئی ٹی کا نفاذ کر دیجئے۔ لیکن جو بھوت جانچ گھوٹالا ہوا ہے اس کی جانچ کون کرے گا۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close