اپنا دیشتازہ ترین خبریں

تیج بہادر کی درخواست سپریم کورٹ سے خارج، مودی کے انتخاب کو کیا تھا چیلنج

نئی دہلی، (یو این آئی)
سپریم کورٹ (Supreme Court) نے منگل کو وزیر اعظم نریندر مودی کے وارانسی میں 2019 کے انتخابات کو چیلینج کرنے والی ایک درخواست کو خارج کر دیا۔ چیف جسٹس شرد اروند بوبڈے کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے نریندر مودی (Narendra Modi) کے انتخاب کو چیلنج کرنے والے بارڈر سیکیورٹی فورس (BSF) کے سابق جوان تیج بہادر (Tej Bahadur Yadav) کی درخواست خارج کر دی۔

عدالت عظمی نے گزشتہ بدھ کو اس معاملے میں فیصلہ محفوظ کرلیا تھا۔ گذشتہ سماعت پر درخواست گزار تیج بہادر کے وکیل پردیپ یادو کی طرف سے سماعت ملتوی کرنے کے کافی زور لگایا تھا، لیکن عدالت عظمیٰ نے ان کے ارادے کو محسوس کرتے ہوئے ایسا کرنے سے انکار کردیا۔ درخواست گزار کے وکیل نے متعدد بار بینچ سے معاملے کی سماعت ملتوی کرنے کی درخواست کی تھی، لیکن جسٹس بوبڈے نے وکیل کے مقصد کو بخوبی بھانپ لیا ہے اور وکیل سے بار بار جرح کرنے کو کہا تھا۔ جسٹس بوبڈے نے کہا تھا کہ سماعت بار بار موخر نہیں کی جاسکتی۔ یہ مقدمہ ایک طویل عرصے سے جاری ہے اور چار بار تو وہ ہی سن چکے ہیں –

چیف جسٹس نے تیج بہادر کے سماعت ملتوی کرنے کے مطالبے پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا تھا کہ "آپ کئی بار سماعت ملتوی کراچکے ہیں۔” آپ عدالت کی توہین کر رہے ہیں۔ "چیف جسٹس نے درخواست گزار کو سرزنش کرتے ہوئے کہا، "ہم آپ کی بات صرف اس لئے سن رہے ہیں کہ یہ وزیر اعظم سے متعلق معاملہ ہے۔” درخواست گزار کے وکیل نے وزیراعظم کی جانب سے پیش ہونے والے وکیل سے وکالت نامہ دینے کی مانگ کی تھی اور نوٹس جاری کرنے کو کہا تھا۔ وزیراعظم کی جانب سے پیش ہوئے سینئر وکیل ہریش سالوے نے کہا تھا کہ درخواست گزار نے دو کاغذات نامزدگی داخل کیے تھے، ایک آزاد کے طور پر اور ایک سماج وادی پارٹی کے امیدوار کے طور پر۔ ایک نامزدگی میں کہا گیا ہے کہ اسے ملازمت سے برخاست کردیا گیا ہے اور ایک میں ایسا کچھ نہیں کہا گیا تھا- بعد میں عدالت نے فیصلہ محفوظ کر لیا۔

واضح ر ہے کہ بارڈر سکیورٹی فورس کے سابق فوجی تیج بہادر یادو نے الہ آباد ہائی کورٹ کے اس فیصلے کو چیلنج کرتے ہوئے عدالت عظمی میں درخواست دائر کی تھی جس میں ہائی کورٹ کا خیال تھا کہ تیج بہادر نہ تو وارانسی ووٹر ہیں اور نہ ہی وزیر اعظم مودی کے خلاف امیدوار تھے۔ اس بنیاد پر، ان کی انتخابی درخواست دائر کرنے کا کوئی جواز نہیں ہے۔ قابل ذکر ہے کہ وارانسی سے وزیر اعظم مودی کے خلاف انتخاب لڑنے کے خواہاں تیج بہادر کی نامزدگی کو غلط معلومات کی وجہ سے مسترد کردیا گیا تھا۔

نیوز ایجنسی (یو این آئی ان پٹ کے ساتھ)

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close