Khabar Mantra
اترپردیشتازہ ترین خبریں

بلندشہر: زہریلی شراب سے 5 کی موت، 16 کی حالت نازک

بلندشہر: (یو این آئی)
اترپردیش کے ضلع بلندشہر کے سکندرآباد علاقے میں زہریلی شراب پینے سے کم از کم 5 افراد کی موت ہوگئی جبکہ متعدد 16 افراد شدید طور سے زخمی ہوگئے۔ وہیں اس پورے واقعہ کا سخت نوٹس لیتے ہوئے وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ نے خاطیوں کے خلاف راسکا کے تحت کاروائی کرنے کا حکم دیا ہے۔ انہوں نے سینئر افسران کو فورا موقع پر پہنچ کر ہر متاثر کو بہتر علاج کو یقینی بنانے اور خاطی دلیوری کے خلاف بھی سخت کاروائی کرنے کا حکم دیا ہے۔

سینئر سپرنٹنڈنٹ آف پولیس سنتوش کمار سنگھ نے جمعہ کو بتایا کہ اس سلسلے میں لاپرواہی کا مظاہرہ کرنے کے پاداش میں سکندرآباد کے انچارج انسپکٹر، ایک داروغہ اور دو سپاہیوں کو معطل کردیا گیا ہے۔ کلیدی ملزم فی الحال فرار ہے حالانکہ اس کے کنبے کے تین افراد کو حراست میں لے کر ان سے پوچھ گچھ کی جا رہی ہے۔ پولیس ذرائع نے بتایا کہ گاؤں جیتگڑی میں گذشتہ 9 افراد نے گاؤں کے ہی ایک شخص سے شراب خریدی اور سبھی نے ایک ساتھ بیٹھ کر شراب پی۔ دیر رات ان میں سے ستیش (35)، کلوا (40)، رنجیت (41) اور سکھ پال (60) کی حالت بگڑنے لگی۔ اہل خانہ نے متاثرین کو اسپتال میں داخل کرایا لیکن چاروں نے راستے میں ہی دم توڑ دیا۔ وہیں شراب پینے والے دیگر پانچ افراد کو بھی علی الصبح اسپتال میں داخل کرایا گیا جس میں سے ایک کی دوران علاج موت ہو گئی۔

انہوں نے بتایا کہ شراب استعمال کرنے 8دیگر گاؤں کے افراد کو بھی اسپتال میں داخل کرایا گیا ہے۔ محکمہ آبکاری کی ٹیم بھی گاؤں جیتگڑی پہنچ کر معاملے کی جانچ شروع کر دیا ہے۔ ضلع مجسٹریٹ روندر کمار اور سینئر سپرنٹنڈنٹ آف پولیس سنتوش کمار سنگھ آج صبح موقع پر پہنچ گئے۔ ایس ایس پی نے بتایا کہ زہریلی شراب پینے سے پانچ افراد کی موت ہوئی ہے وہیں 16 افراد کی حالت کافی نازک ہے جن کو سرکاری اور پرائیویٹ اسپتال میں داخل کرایا گیا ہے۔

دوسری جانب سے مقامی مکینوں نے ڈی ایم ایس ایس پی کے سامنے پولیس پر ملی بھگت کے ذریعہ گاؤں میں غیر قانون شراب فروخت کرانے کا الزام لگایا ہے۔ مقامی افراد کے مطابق پولیس کی پست پناہی میں شراب مافیا کھلے عام غیر قانونی شراب فروخت کررہے ہیں۔ اس کاروبار میں گاؤں کے ہی کلدیپ کا نام سامنے آیا ہے۔

نیوز ایجنسی (یو این آئی ان پٹ کے ساتھ)

ٹیگز
اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close