اترپردیشتازہ ترین خبریں

’پولیس نے بیٹی کی آخری خواہش پوری نہیں کرنے دی‘

ہاتھرس: (یو این آئی)
اترپردیش کے ضلع ہاتھرس میں درندگی کی شکار متاثرہ کو بدھ کی علی الصبح اہل خانہ کی عدم موجودگی میں آخری رسوم کی ادائیگی کردیا گیا۔ متاثرہ کے والد کا الزام ہے کہ ضلع انتظامیہ نے بیٹی کی آخری خواہش پوری کرنے کا موقع نہیں دیا۔

متاثرہ کے آخری رسوم کی ادائیگی علی الصبح تقریبا سوا تین بجے پولیس کی موجودگی میں کردیا گیا حالانکہ اہل خانہ اور مقامی افراد اس کی مخالفت کر رہے تھے۔ آخری رسوم کی ادائیگی کے وقت مبینہ طور سے اہل خانہ موجود نہیں تھے۔ متاثرہ کے والد کا الزام ہے کہ ضلع انتظامیہ نے بیٹی کی آخری خواہش پوری کرنے کی اجازت نہیں دی۔

نم آنکھوں سے انہوں نے کہاکہ ‘بیٹی نے کہا تھا کہ وہ گھر آنا چاہتی ہے۔ وہ اپنی چوٹ کی وجہ سے نہیں جا سکی لیکن ہم انتظامیہ کے رویہ کی وجہ سے بیٹی کی آخری خواہش بھی پوری نہیں کرسکے۔ متاثرہ کے بھائی سندیپ نے میڈیا نمائندوں سے کہا کہ ضعل انتظامیہ جلدی میں تھا اور چاہتا تھا کہ والد کے پہنچانے سے پہلے آخری رسوم ادا کردیے جائیں۔ متاثرہ کی لاش پہنچنے کے کچھ ہی دیر بعد والد گھر پہنچ گئے تھے۔ وہیں انتظامیہ کا دعوی ہے کہ آخری رسوم کی ادائیگی اہل خانہ کی مرضی سے کی گئی ہے۔ جوائنٹ مجسٹریٹ پریم پرکاش مینا نے صحافیوں سے کہا کہ متاثرہ کے آخری رسوم کی ادائیگی کردی گئی ہے۔ پولیس انتظامیہ متاثرہ کو انصاف دلانے اور مجرمین کو سخت سزا دلانے کے لئے پرعزم ہے۔

وہیں وزیر اعظم نریندر مودی نے اترپردیش کے وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ سے بات کی اور ملزمین کے خلاف سخت کاروائی کی ہدایت دی۔ وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ نے ٹوئٹ کر یہ جانکاری دی۔ انہوں نے کہاکہ وزیر اعظم نریندر نے ہاتھرس کے واقعہ پر بات کی اور کہا ہے کہ خاطیوں کے خلاف سخت کاروائی کی جائے۔ انہوں نے اپنے ٹوئٹ میں لکھا’ہاتھرس میں لڑکی کے ساتھ پیش آنے والے واقعہ کے خاطیوں کو قطعی نہیں بخشا جائے گا۔ معاملے کی جانچ کے لئے خصوصی ٹیم تشکیل دی گئی ہے۔ یہ ٹیم آنے والے 7 ستمبر کو اپنے رپورٹ سونپے گی۔ جلد از جلد انصاف کی فراہمی کے لئے معاملے کی شنوائی فاسٹ ٹریک کورٹ میں ہوگی۔

خصوصی جانچ ٹیم کی قیادت داخلہ سکریٹری بھگوان سوروپ کریں گے جبکہ دیگر دو اراکین میں ڈپٹی انسپکٹر جنرل آف پولیس چندر پرکاش اور پی اے سی کمانڈنٹ آگرہ پونم شامل ہیں۔ سبھی چار ملزمین کو گرفتار کیا جا چکا ہے۔

نیوز ایجنسی (یو این آئی ان پٹ کے ساتھ)

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close