بہار- جھارکھنڈتازہ ترین خبریں

بہار لوٹے مزدوروں سے این ڈی اے کو خطرہ

پٹنہ، (پی این این)
بہار کے چناوی موسم میں سبھی جماعتوں کی نظریں بہار کے باہری لوگوں پر ہیں، جو ہندوستان کی تقریباً ہر ریاستوں میں روزگار کے لئے سکونت پذیر ہیں۔ ایک اطلاع کے مطابق باہر رہنے والے بہار کے عوام کی تعداد فی الحال 55 لاکھ ہے، جن میں سے تقریبا 40 لاکھ مزدور کورونا کے دور میں پریشان ہو کر بہار لوٹ چکے ہیں۔

مبصرین کے مطابق باہر رہنے والے بہاری کے مزدوروں کا تناسب 7 فیصد ہے اور چناؤ میں ان کا رول بہت اہم ہے۔ یہ بہاری مزدور اپنے گاؤں پر خاص رسوخ بھی رکھتے ہیں، جس کی وجہ سے تمام پارٹیاں ان کی آؤبھگت کرنے میں لگی ہوئی ہے، حالانکہ اپریل، مئی میں جس بے کسی کے عالم میں بہار کے باہر رہنے والے مزدور وطن واپس آئے ہیں، اس کا درد ابھی تک ان میں قائم ہے۔

گجرات، مہاراشٹر، ہریانہ پنجاب سے لے کر دہلی تک سے آئے مزدور اپنا درد نہیں بھولے ہیں۔ کورونا کے دور میں انہوں نے سخت تکلیفیں اٹھائی ہیں۔ پردیس میں رہنے والے ان بہاریوں کی بیویوں نے بھی عزم کیا ہے کہ وہ اس بار حکومت کو اکھاڑ پھینکیں گی۔ لیکن تمام تر ناراضگی کے باوجود سیاسی جماعتیں انہیں اپنی طرف راغب کرنے کی کوشش کر رہی ہیں۔ لیکن ان مزدورں کے علاقوں میں حکمراں جماعت کے امیدوار جانے سے خوفزدہ بھی ہیں۔ سیتا مڑھی، سمستی پور، حاجی پور وغیرہ علاقوں میں بی جے پی- جے ڈی یو امیدواروں کی بڑی فضیحت بھی ہو رہی ہے۔ کئی ایم پی بھی عوامی غصے کا شکار ہوئے ہیں، حتی کہ ریاستی وزیر تعلیم کرشنا نندورما کو بھی شدید عوامی غصے کا سامنا کرنا پڑا ہے اور انہیں حلقے سے راہ فرار اختیار کرنی پڑی۔

امکان ہے کہ باہری مزدوروں کا رجحان آر جے ڈی مہاگٹھ بندھن کی طرف ہے، کیونکہ جس طرح مہا گٹھ بندھن کے امیدواروں کی حلقے میں پذیرائی ہو رہی ہے، وہ اس بات کا غماز ہے کہ پردیس میں رہنے والے 40 لاکھ بہاری مزدور نوجوان اس بار اپنی نئی سوچ کا استعمال کریں گے۔ حالانکہ تیش حکومت کا اقتدار ختم کرنے کے لئے ایل جے پی کے قائد چراغ پاسوان پہلے ہی این ڈی اے کا ساتھ چھوڑ چکے ہیں، اس کا بھی اب چناؤ میں اثر پڑے گا۔

پردیس میں رہنے والے مزدوروں میں 70 فیصد مزدور دلت، پسماندہ اور اقلیت طبقے کے ہیں، ان مزدوروں پر یوپی کے ہاتھرس کی دلت لڑکی کے قتل کا بھی زبردست اثر ہوا ہے۔ آر جے ڈی نے اسے بھی اپنا چناوی ایشو بنایا ہے، مگر بی جے پی بہار میں وکاس کے نام پر یا وزیراعظم مودی کے ذریعہ کئے گئے اعلانات کے بل پر ووٹ مانگ رہی ہے، مگر سیلاب، کورونا، بے روزگاری سے برسر پیکار بہار کے عوام خاص کر پردیسی مزدور کی خاموشی بتا رہی ہے کہ کوئی طوفان آنے والا ہے۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close