اپنا دیشتازہ ترین خبریں

بابری مسجد انہدام معاملہ: فیصلہ 30 ستمبر کو، اڈوانی-جوشی سمیت 49 ہیں ملزم

اس معاملے میں سابق نائب وزیراعظم اور وزیر داخلہ رہے لال کرشن اڈوانی، سابق گورنر اور یوپی کے وزیر اعلیٰ رہے کلیان سنگھ، بی جے پی لیڈر ونے کٹیار، سابق مرکزی وزیر اور مدھیہ پردیش کی وزیر اعلیٰ رہیں اوما بھارتی ملزم ہیں۔ سی بی آئی نے 49 ملزمین کے خلاف چارج شیٹ فائل کی تھی جس میں سے17 افراد کی موت ہوچکی ہے۔

لکھنؤ: (یواین آئی)
سی بی آئی کی خصوصی عدالت نے بابری مسجد انہدام کے تقریبا 27 سال بعد 30 ستمبر کو اس ضمن میں اپنا فیصلہ سنائے گی۔

سی بی آئی کے اسپیشل جج ایس کے یادو نے حکم دیا ہے کہ 30 ستمبر کو فیصلہ آنے کے وقت سبھی ملزمین عدالت میں موجود رہیں۔ اس معاملے میں سابق نائب وزیراعظم لال کرشن اڈوانی، سابق گورنر کلیان سنگھ، بی جے پی لیڈر ونے کٹیار، سابق وزیر اوما بھارتی ملزمین کے نام قابل ذکر ہے۔ سی بی آئی نے 49 ملزمین کے خلاف چارج شیٹ فائل کی تھی جس میں سے17 افراد کی موت ہوچکی ہے۔

سی بی آئی کی خصوصی عدالت میں 351 گواہوں اور تقریبا 600 دستاویزات ثبوت کے طور پر پیش کئے جا چکے ہیں۔ سی بی آئی کے وکیل للت سنگھ نے بتایاکہ عدالت نے فریق دفاع اور استغاثہ کی دلیلیں سننے کے بعد ایک ستمبر کو اپنا فیصلہ محفوظ کر لیا تھا۔ قابل ذکر ہے کہ سپریم کورٹ نے گذشتہ مہینے لکھنؤ میں بابری مسجد انہدام کے معاملے کی سماعت کرنے والی خصوصی عدالت کے وقت مقررہ میں ایک ماہ کا اضافہ کرتے ہوئے فیصلے کی حتمی تاریخ 30 ستمبر تک کر دیا تھا۔

نیوز ایجنسی (یو این آئی ان پٹ کے ساتھ)

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close