بہار- جھارکھنڈتازہ ترین خبریں

49لوگوں پر غداری کے مقدمہ سے بی جے پی اور آر ایس ایس کا کوئی واسطہ نہیں: سشیل

بہار کے نائب وزیراعلیٰ سشیل کمار مودی نے ملک میں موب لنچنگ کے معاملوں پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے وزیراعظم نریندر مودی کو کھلا خط لکھنے والے مورخ رام چندر گوہا، فلم ساز شیام بنیگل اور منی رتنم سمیت 49 افراد کے خلاف مظفر پور میں درج کرائے گئے غداری کے مقدمے پر آج کہاکہ اس سے بھارتیہ جنتا پارٹی اور آر ایس ایس کا کوئی لینا دینا نہیں ہے۔

بی جے پی کے سنیئر لیڈر مسٹر مودی نے یہاں کہاکہ بی جے پی نے کبھی بھی ہجومی تشدد کی حمایت نہیں کی ہے۔ اس مسئلے پر وزیراعظم مسٹر مودی خط لکھنے والوں کے خلاف دائر معاملے سے بی جے پی یا سنگھ پریوار کا کوئی واسطہ نہیں ہے۔ انہوں نے کہاکہ عادتا مقدمے باز (سیریل لیٹی گینٹ) نے محض اخباری کترنوں کی بنیاد پر ملک کی 49 شخصیات کے خلاف 23 جولائی کو ایف آئی آر درج کرایا۔ جس میں دیگر الزامات کے ساتھ غداری والے دفعات بھی جوڑ دیئے گئے تھے۔

مسٹر مودی نے کہاکہ جو شخص سابق وزیراعظم منموہن سنگھ، امیتابھ بچن، ریتک روشن سمیت کئی مشہور شخصیات کے خلاف معاملے دائر کر چکا ہے اور جس نے اب تک 715 مفاد عامہ میں عرضی داخل کی ہیں اس نے چار سال قبل میرے خلاف بھی معاملہ دائر کیا تھا۔ انہوں نے کہاکہ ایسے سیریل لیٹی گینٹ کے تازہ مقدمے کو طول دے کر انعامات واپسی مہم اور ٹکڑے۔ ٹکڑے گینگ کے لوگ مرکز ی حکومت کو اظہار رائے کی آزادی کا مخالف ثابت کرنے کی مہم چلارہے ہیں۔

بی جے پی لیڈر نے کہاکہ آر ایس ایس چیف موہن بھاگوت نے بھی واضح کیا ہے کہ سنگھ ہجومی تشدد کے خلاف ہے۔ یہ بدقسمتی ہے کہ خود وزیراعظم نریندر مودی اور آر ایس ایس چیف موہن بھاگو ت جیسے اعلیٰ سطح کے افراد سے اس مسئلے پر کئی بار وضاحت کئے جانے کے بعد بھی مبینہ دانشوران ایک مقدمے باز پر بھروسہ کرنا چاہتے ہیں۔

غورطلب ہے کہ وکیل سدھیر کمار اوجھاکی جانب سے دائر کئے گئے مقدمہ پر چیف جوڈیشیل مجسٹریٹ (سی جی ایم) سوریہ کانت تیواری کی ہدایت کے بعد پولیس سپرنٹنڈنٹ کے توسط سے یہ ایف آئی آر 02 اکتوبر کو درج ہوئی ہے۔ ایف آئی آر میں مورخ رام چندر گہا، فلم ساز شیام بنیگل، پروڈیوسر ڈائریکٹر منی رتنم، ادکارہ اپرنا سین، ریوتی، کونکنا سین، پروڈیوسر ارون گوپال کرشن، اداکار سومتر چٹرجی اور گلوکار شوبھا مردل سمیت 49 لوگوں کے نام ہیں۔تعزیرات ہند کی دفعہ 124 اے، 153 بی، 160,290,297,504 کے تحت ایف آئی آر درج کی گئی ہے۔ اس میں غداری، فساد کرنے، امن کو برباد کرنے کے ادارے سے مذہبی جذبات کو ٹھیس پہنچانے سے متعلق دفعات لگائی گئی ہیں۔

مسٹر اوجھا نے کہاکہ وزیراعظم نریندر مودی کو کھلا خط لکھنے اور اس کا مختلف میڈیا ذرائع سے تشہیر کرنے سے پوری دنیا میں ملک اور وزیراعظم مسٹر مودی کی شبیہہ خراب ہوئی ہے۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close