تازہ ترین خبریںدلی نامہ

گھبرانے کی ضرورت نہیں، دہلی حکومت ہر صورت حال سے نپٹنے کے لئے تیار: کجریوال

جمنا میں ممکنہ تغیانی پر وزیر اعلی کی جمنا فلڈپلینس کے مقیموں سے حکومت کے ٹینٹوں میں شفٹ ہونے کی اپیل

نئی دہلی (انور حسین جعفری)
جمنا ندی میں ممکنہ تغیانی کے سبب بڑھنے والی آبی سطح پر دہلی کے وزیر اعلی اروند کجریوال نے آج کہا کہ گھبرانے کی قطعی ضرورت نہیں ہے، دہلی حکومت کسی بھی صورت حال سے نپٹنے کو تیار ہے، انہوں نے کہاکہ حکومت حالات پر مسلسل نظر رکھے ہوئے ہے اور ضرورت پڑنے پر ٹیلی فون نمبر 22421656 اور 21210849 پر رابطہ کیا جا سکتا ہے۔ وزیر اعلی نے جمنا فلڈ پلینس کے مقیموں سے دہلی حکومت کے خیموں میں منتقل ہونے کی اپیل کی ہے۔ دہلی سکریٹریٹ میں منعقدہ پریس کا نفرنس میں وزیر اعلی اروند کجریوال نے کہاکہ جمنا کے پانی کی سطح کے شام تک خطرے کے نشان 20533 میٹر سے تجاوز کر جانے کا خدشہ ہے۔ کیونکہ ہریانہ نے اتوار شام کو 8.28 لاکھ کیوسک پانی چھوڑا ہے اور یہ پانی 36 سے 72 گھنٹوں کے اندر دہلی میں پہنچ جائے گا۔

وزیر اعلی نے اپیل کی جمنا فلڈ پلینس میں رہنے والے لوگ اپنی جگہیں خالی کر دیں اور دہلی حکومت کی طرف سے لگائے گئے عارضی خیموں میں منتقل ہو جائیں۔ پریس کانفرنس کی جس میں وزیر ستیندر جین، کیلاش گہلوت، دہلی کے چیف سکریٹری وجے کمار دیو کے ساتھ دیگر سینئر افسران بھی موجود رتھے۔ واضح رہے کہ اس سے قبل دہلی سیکرٹریٹ میں وزیر اعلی کی صدارت میں ایک اعلی سطحی ہنگامی میٹنگ منعقد ہوئی جس میں تمام متعلقہ محکموں کے سینئر افسران موجود تھے۔ جس میں سیلاب کی صورتحال اور تیاریوں کا جائزہ لیا گیا۔ وزیر اعلی نے لوگوں سے اپیل کی کہ وہ بالکل بھی نہ گھبرائیں کیونکہ اس صورت حال سے نمٹنے کے لئے حکومت تمام ضروری اقدامات کر رہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ دہلی کے چھ اضلاع (شمال، شمال مشرقی، شاہدرہ،مشرقی،وسطی اور جنوبی مغری)کے نچلے علاقوں میں رہنے والے لوگ اس سے متاثر ہو سکتے ہیں۔کسی بھی صورت حال سے نمٹنے کی تیاری کے علاوہ دہلی حکومت پہلے ہی لوگوں کو ایسی جگہوں سے نکالنے اور جمنا کے دونوں کناروں لگائے گئے حکومت کے عارضی خیموں لے جانے کا کام کر رہی ہے۔ اب تک 2120 خیمے لگائے جا چکے ہیں، جہاں پر بجلی، کھانے پینے، پانی اور بیت الخلا وغیرہ کا انتظام کیا گیا ہے۔

وزیر اعلی اروند کجریوال نے فلڈ پلینس میں رہنے والے لوگوں سے اپیل کرتے ہوئے کہا کہ وہ شام 6 بجے تک حکومت کے خیموں میں شفٹ ہو جائیں اور اس وقت تک واپس نہ جائیں جب تک ان علاقوں سے پانی نہ نکل جائے۔ کیونکہ جمنا کے پانی کے بہاؤ کے بارے میں کوئی بھی پیشن گوئی نہیں کی جا سکتی کہ اس کا بہاؤ کتنا تیز ہو گا۔ وزیر اعلی نے بچوں کو لے کر خصوصی طور پر اپیل کرتے ہوئے کہا کہ اپنے بچوں کا خاص طور پر خیال رکھیں کیونکہ اکثر بچے کھیلنے یا نہانے دریا میں چلے جاتے ہیں، گزشتہ سال اسی طرح سے دو بچوں کی موت ہو گئی تھی۔ انہوں نے کہا کہ امدادی کام کیلئے 53 کشتیوں کو تیار کر لیا گیا ہے اور 30 کشتیوں کو ان 30 مقامات پر پہلے سے ہی لگا دیا گیا ہے جہاں سیلاب کا اثر زیادہ ہو نے کے امکانات ہیں۔

وزیر اعلی نے بتایا کہ ہنگامی صورت حال کیلئے دہلی حکومت ایک ایمرجنسی رابطہ ٹیلی فون نمبر 22421656 جاری کیا ہے۔ ساتھ ہی ایس ڈی ایم پریت وہار نوڈل آفیسر ہیں اور ان کے کنٹرول روم کے ٹیلی فون نمبر 21210849 ہے جس پر رابطہ کیا جا سکتا ہے۔ وزیر اعلی نے کہا اگلے دو دن بے حد اہم ہیں۔ ہم صورت حال پر مسلسل نظر بنائے ہوئے ہیں۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ دہلی حکومت مرکزی حکومت، ایل جی آفس اور تمام متعلقہ ایجنسیوں کے ساتھ رابطہ بنائے ہوئے ہیں۔ حکومت کیلئے ہر کسی کی زندگی انتہائی قیمتی ہے، اسی کو دیکھتے ہوئے مکمل سرکاری مشینری کسی بھی ہنگامی اورحادثاتی صورت حال سے نمٹنے کے لئے تیار ہے۔

واضح رہے کہ اس سے پہلے 2013 میں ہریانہ میں 806 لاکھ کیوسک پانی چھوڑا تھا جس کی وجہ سے جمنا کی آبی سطح 2073 میٹر تک ہو گئی تھی۔اتوار کو ہریانہ کے ہتھنی کنڈ سے جتنی زیادہ مقدار میں پانی چھوڑا گیا ہے، اس سے جمنا کی پانی سطح بہت زیادہ بڑھ سکتی ہے۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close