تازہ ترین خبریںدلی نامہ

کانگریس اور ’آپ‘ میں نہیں بنی بات

6 لوک سبھا سیٹوں پر ’آپ‘ امیدوار کریں گے کل کاغذات نامذدگی داخل

نئی دہلی(انور حسین جعفری)

2019 کے پارلیمانی انتخابات میں کانگریس اور ’آپ‘ میں اتحاد کی بات نہیں بن سکی ہے۔ کل 22 اپریل کو عام آدمی پارٹی کے 6 امیدوار اپنے پرچہ نامزدگی داخل کریں گے۔

اس سلسلے میں عام آدمی پارٹی دہلی کے کنوینر گو پال رائے نے کہاکہ کل عام آدمی پارٹی کے باقی 6 لوک سبھا سیٹوں کے امیدوار اپنا اپنا نامزدگی داخل کریں گے۔ انہوں نے بتایا کہ کابینہ وزیر راجندر پال گوتم جی کی موجودگی میں شمال مشرقی دہلی لوک سبھا سے دلیپ پانڈے اپنا پرچہ نامزدگی داخل کریں گے، نائب وزیر اعلی منیش سسودیا کی موجودگی میں مشرقی دہلی لوک سبھا امیدوار آتشی نامزدگی داخل کریں گی۔ نئی دہلی لوک سبھا سے برجیش گوئل راجیہ سبھا ایم پی این ڈی گپتا جی کی موجودگی میں نامزدگی داخل کریں گے، شمال مغربی دہلی لوک سبھا سے گوگن سنگھ راجیہ سبھا ممبر پارلیمنٹ سنجے سنگھ اور کابینہ وزیر کیلاش گہلوت کی موجودگی میں اپنا پرچہ نامزدگی داخل کریں گے، جنوبی دہلی سے راگھو چڈھا اپنا نامزدگی داخل کریں گے اور چاندنی چوک لوک سبھا سے کابینہ وزیر ستیندر جین اور کابینہ وزیر عمران حسین کی موجودگی میں پنکج گپتا اپنا پرچہ نامزدگی داخل کریں گے۔

گو پال رائے نے کہاکہ جس طرح سے کانگریس دہلی اور ملک کے عوام کے سامنے جھوٹ پھیلا رہی ہے، کہ عام آدمی پارٹی اتحاد سے بھاگ رہی ہے۔ اب ان کا اصلی چہرا عوام کے سامنے لانے کےلئے ہم نے اپنی تینوں لوک سبھا امیدواروں کی نامزدگی روک کر ان کو مزید وقت دیا، تاکہ وہ کوئی فیصلہ لے سکیں۔ لیکن کانگریس کا اصل چہرہ ایک بار پھر نکل کر سامنے آیا اور بالآخر انہوں نے اپنی بات سے پلٹی ماری اور کسی بھی قسم کے اتحاد سے انکار کرتے ہوئے تمام امکانات کو ختم کر دیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ عام آدمی پارٹی نے اب طے کیا ہے، کہ جس طرح سے عام آدمی پارٹی ہریانہ میں جے جے پی کے ساتھ مل کر بی جے پی کو شکست رہی ہے، اسی طرح سے دہلی میں اپنے طور پر الیکشن لڑکر بی جے پی کو شکست دینے کا کام کرے گی اور ساتھ ہی ساتھ کانگریس کے اس ڈبل کردار کو عوام کے سامنے بے نقاب کرنے کا کام کرے گی۔

واضح رہے کہ دہلی میں کانگریس اور عام آدمی پارٹی کے اتحاد میں رخنہ کےلئے دونوں پارٹیاں ایک دوسرے کو ذمہ دار بتا رہی تھیں، جس کے چلتے عام آدمی پارٹی نے 18 اپریل کو ایک امیدوار کی نامزدگی داخل ہونے کے بعد اس عمل کو روکتے ہوئے 22 اپریل تک ملتوی کرکے اتحاد کی گیند کانگریس کے پالے میں پھینک دی تھی۔ لیکن کانگریس اور ’آپ‘ میں آج بھی اتحاد نہ ہو سکا۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close