تازہ ترین خبریںکھیل کھلاڑی

چہل-دھونی کی بدولت ہندستان کی تاریخی جیت، پہلی بار دوہری سیریز پر قبضہ

لیگ اسپنر يجویندر چہل (42 رن پر چھ وکٹ) کی بہترین کارکردگی اور وکٹ کیپر مہندر سنگھ دھونی کی ناقابل شکست 87 رنز اور کیدار جادھو کی 61 رن کی زبردست نصف سنچری اننگز کی بدولت ہندستان نے آسٹریلیا کو جمعہ کو تیسرے اور فیصلہ کن ون ڈے کرکٹ میچ میں سات وکٹ سے شکست دے کر تین میچوں کی سیریز میں 2-1 سے تاریخی جیت درج کرلی۔

ہندستان نے سیریز کا پہلا میچ ہارنے کے بعد شاندار واپسی کرتے ہوئے اگلے دو میچ جیت کر سیریز اپنے نام کی۔ ہندستان نے اس طرح پہلی بار آسٹریلیا کی زمین پر دو ون ڈے سیریز میں کامیابی حاصل کی۔ ہندستان نے اس سے پہلے آسٹریلیا میں پہلی بار ٹیسٹ سیریز میں 2-1 سے جیت درج کی تھی۔ کپتان وراٹ کوہلی کی سینا نے اس طرح آسٹریلیا میں ڈبل تاریخی جیت اپنے نام کر اس دورے کو ہندستانی کرکٹ تاریخ میں سنہرے الفاظ میں درج کرا دیا۔ لیگ اسپنر چہل نے سیریز میں پہلا موقع ملنے کا پورا فائدہ اٹھاتے ہوئے 42 رنز پر چھ وکٹ لے کر آسٹریلیا کو 48.4 اوور میں 230 رن پر سمیٹ دیا۔ ہندستان نے اپنے تین وکٹ 113 رن پر گنوانے کے بعد دھونی اور جادھو کے درمیان چوتھے وکٹ کے لئے 121 رن کی ناٹ آؤٹ ساجھےداری کے دم پر آسٹریلیا کو شرمندگی کا سامنا کرنے پر مجبور کر دیا۔ ہندستان نے 49.2 اوور میں تین وکٹ پر 234 رن بنا کر جیت اور سیریز اپنے نام کر لی۔ جادھو نے ہندستان کے لئے جیت کا چوکا مارا۔

دھونی نے 114 گیندوں پر ناٹ آوٹ 87 رن میں چھ چوکے لگائے جبکہ جادھو نے 57 گیندوں پر ناٹ آوٹ 61 رن میں سات چوکے لگائے۔ دونوں نے 116 گیندوں پر ناٹ آوٹ 121 رن کی میچ فاتح ساجھےداری کی۔ دھونی نے سیریز میں مسلسل تیسری نصف سنچری بنائی اور ان سب ناقدین کو خاموش کر دیا جو ان کی بلے بازی پر مسلسل سوال اٹھاتے رہے تھے۔دھونی نے 49 ویں اوور میں پیٹر سڈل کی پانچویں گیند پر چوکا مار کر اسکور برابر کر دیا۔ انہوں نے چھٹی گیند پر کوئی رن نہیں لیا تاہم تب تک مکمل ہندوستانی ٹیم اور کوچ روی شاستری باؤنڈري پر آکر کھڑے ہو گئے تھے۔

جادھو نے 50 ویں اوور میں مارکس اسٹوئنس کی پہلی گیند پر کوئی رن نہیں لیا لیکن اگلی گیند پر چوکا مار کر ہندستانی خیمے میں خوشی کی لہر دوڑا دی۔ میچ اور سیریز جیت سے ہی ہندوستانی خیمے میں مبارک بادی کا دور شروع ہو گیا۔ چہل کو ان کے چھ وکٹ کے لئے مین آف دی میچ اور دھونی کو مین آف دی سیریز کا ایوارڈ دیا گیا۔ہندستانی اننگز میں روہت شرما کے نو رن بنا کر آؤٹ ہونے کے بعد شکھر دھون نے 46 گیندوں میں بغیر کسی باؤنڈري کے 23 رن بنائے جبکہ کپتان وراٹ کوہلی نے 62 گیندوں میں تین چوکوں کی مدد سے 46 رن بنائے۔ اس کے بعد ہندستان کو جیت دلانے کام دھونی اور جادھو نے کیا۔

اس سے پہلے چہل نے کیریئر کی بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے 10 اوور میں 42 رن دے کر چھ وکٹ لیے جو آسٹریلوی زمین پر کسی بھی بولر کی مشترکہ طور پر بہترین کارکردگی ہے۔ ہندستانی فاسٹ بولر اجیت اگرکر نے 9 جنوری 2004 کو اسی میدان پر 42 رنز پر چھ وکٹ لئے تھے۔ کسی اسپنر کی آسٹریلوی زمین پر یہ سب سے بہترین کارکردگی ہے۔سیریز میں پہلا میچ کھیل رہے چہل نے اپنی بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کیا۔ ان کی پچھلی بہترین کارکردگی جنوبی افریقہ کے خلاف سنچورین میں 22 رن پر پانچ وکٹ تھی چهل کے چھ وکٹوں کے علاوہ تیز گیند بازوں بھونیشور کمار نے 28 اور محمد سمیع نے 47 رن دے کر دو دو وکٹ لئے۔

آسٹریلیا کے لئے پیٹر ہیڈ اسکومب نے 63 گیندوں میں دو چوکوں کی مدد سے 58 رنز کی اننگز کھیلی۔ گزشتہ میچ کے سنچری میکر شان مارش نے 54 گیندوں پر تین چوکوں کی مدد سے 39، عثمان خواجہ نے 51 گیندوں میں دو چوکوں کی مدد سے 34، گلین میکسویل نے 19 گیندوں میں پانچ چوکوں کے سہارے 26، رچرڈسن نے 16، کپتان آرون فنچ نے 14 اور پیٹر سڈل نے ناٹ آؤٹ 10 رن بنائے۔ہندستان نے ٹاس جیت کر پہلے فیلڈنگ کا فیصلہ کیا۔ ہندستان نے میچ کے لئے ٹیم میں تین تبدیلیاں کیں ۔ آل راؤنڈر وجے شنکر کو ون ڈے ڈیبو کا موقع ملا۔ انہیں محمد سراج کی جگہ ٹیم میں شامل کیا گیا۔ امباٹي رائیڈو کی جگہ کیدار جادھو اور چائنامین بولر کلدیپ یادو کی جگہ چہل کو ٹیم میں شامل کیا گیا۔

آسٹریلیا نے آخری الیون میں دو تبدیلی کرتے ہوئے جیسن بهرنڈورف اور ناتھن لیون کی جگہ بالترتیب بلی اسٹینلک اور ایڈم زمپا کو ٹیم میں شامل کیا۔خراب موسم کی وجہ سے کھیل دس منٹ دیر سے شروع ہوا۔ آسٹریلوی اننگز میں دو گیند ڈالنے کے بعد ہی کھیل ایک بار پھر 20 منٹ کے لئے روکنا پڑا۔ آسٹریلیا کا آغاز خراب رہا۔ بھونیشور نے دونوں سلامی بلے بازوں ایلیکس کیری (5) اور کپتان آرون فنچ (14) کو نویں اوور میں 27 رن تک پویلین بھیج دیا۔عثمان خواجہ (34) اور گزشتہ میچ کے سنچری میکر مارش (39) نے ٹیم کے اسکور کو 100 تک پہنچایا لیکن اس کے بعد چہل کی اسپن میں پھنس کر آسٹریلیا کے بلے باز اپنے وکٹ گنواتے چلے گئے۔ چہل نے 24 ویں اوور میں مارش اور خواجہ کے وکٹ لئے۔

چہل نے مارکس اسٹوئنس کو آؤٹ کیا جبکہ سمیع نے میکسویل کا وکٹ لیا۔ ہیڈ اسکومب نے 42 ویں اوور میں اپنی نصف سنچری مکمل کی۔ انہوں نے رچرڈسن کے ساتھ اسکور کو 200 کے پار پہنچایا۔ لیکن چہل نے رچرڈسن، ہیڈ اسکومب اور زمپا (8) کے وکٹ لے کر جبکہ سمیع نے اسٹینلک کو بولڈ کر آسٹریلوی اننگز 230 رن پر سمیٹ دی۔

ٹیگز
اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close