اپنا دیشتازہ ترین خبریں

پی چدمبرم کی عبوری ضمانت کی درخواست مسترد، ایمس سے مانگی گئی ہیلتھ رپورٹ

دہلی ہائی کورٹ نے آئی این ایکس میڈیا ڈیل میں سابق وزیر خزانہ پی چدمبرم کی عبوری ضمانت کی درخواست مسترد کر دی ہے۔ دہلی ہائی کورٹ نے کہا کہ ارکان پارلیمنٹ اور وزراء کا علاج ایمس میں ہوتا ہے۔ وہاں کیا مسئلہ ہے؟ ہزاروں قیدی روزانہ بیمار پڑتے ہیں۔

ہائی کورٹ نے ایمس اسپتال کو ہدایت دی کہ وہ چدمبرم کی صحت پر غور کرنے کے لئے آج ہی ایک میڈیکل بورڈ تشکیل دے۔ کورٹ نے کہاکہ اس میڈیکل بورڈ میں چدمبرم کا علاج کرنے والے ڈاکٹر ناگیشور ریڈی کو بھی شامل کریں۔ کورٹ نے کہاکہ میڈیکل بورڈ آج شام کو 7 بجے چدمبرم کی صحت پر غور کرے۔ کورٹ نے ایمس سے کل دو بجے تک رپورٹ دینے کی ہدایت دی ہے۔

سماعت کے دوران چدمبرم کی جانب سے سینئر وکیل کپل سبل نے کہاکہ چدمبرم کو کروہن بیماری ہے اور اس کے کینسر میں تبدیل ہونے کا خدشہ ہے۔ سبل نے کہاکہ چدمبرم کو تین دن کی عبوری ضمانت دی جائے تاکہ وہ حیدرآباد میں اپنے ڈاکٹر سے علاج کروا سکیں۔ چدمبرم نے عبوری ضمانت کے لئے اپنے خراب صحت کو بنیاد بنایا تھا۔ چدمبرم فی الحال ای ڈی کی حراست میں ہیں۔ گزشتہ 30 اکتوبر کو دہلی کے راؤز ایونیو کورٹ نے چدمبرم کو 13 نومبر تک عدالتی حراست میں بھیجنے کا حکم دیا تھا۔

چدمبرم نے ہائی کورٹ میں اپنی باقاعدہ ضمانت کی درخواست بھی دائر کی ہے۔ باقاعدہ ضمانت کی درخواست پر سماعت کرتے ہوئے ہائی کورٹ نے ای ڈی کو نوٹس جاری کر 4 نومبر تک جواب داخل کرنے کی ہدایت دی ہے۔ سی بی آئی کے معاملے میں چدمبرم کو سپریم کورٹ سے ضمانت مل چکی ہے۔ گزشتہ 17 اکتوبر کو دہلی کی راؤز ایونیو کورٹ نے آئی این ایکس میڈیا ڈیل معاملے میں چدمبرم کو 24 اکتوبر تک کی ای ڈی حراست میں بھیجنے کا حکم دیا تھا۔

چدمبرم کو آئی این ایکس میڈیا ڈیل کے سی بی آئی سے جڑے معاملے میں گزشتہ 21 اگست کو گرفتار کیا گیا تھا۔ آئی این ایکس میڈیا معاملے میں سی بی آئی نے 15 مئی، 2017 کو ایف آئی آر درج کی تھی۔ اس میں الزام لگایا گیا ہے کہ وزیر خزانہ کے طور پر چدمبرم کی مدت کے دوران 2007 میں آئی این ایکس میڈیا کو 305 کروڑ روپے کا غیر ملکی فنڈ حاصل کرنے کے لئے فارین انوسٹمنٹ پروموشن بورڈ سے منظوری دینے میں گڑبڑی کی گئی۔ اس کے بعد ای ڈی نے 2018 میں منی لانڈرنگ کا مقدمہ درج کیا تھا۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close