اپنا دیشتازہ ترین خبریں

پیاز کی قیمت میں لگی آگ پر نرملاسیتارمن کا جواب، ’میں نہیں کھاتی لہسن-پیاز‘

عام آدمی کی پلیٹ سے دور ہو رہی پیاز آسمان چھوتی قیمت پر اگلے ہفتے لگام لگ سکتی ہے۔ دارالحکومت دہلی اور این سی آر میں جہاں پیاز 110 روپے کلو فروخت ہو رہی ہے وہیں ملک کے دیگر حصوں میں پیاز کی قیمت 150 روپے کلو تک پہنچ گئی ہے۔ جسے لیکر پارلیمنٹ میں زبردست ہنگامہ دیکھنے کو مل رہا ہے۔ ایک رکن پارلیمنٹ کے سوال کا جواب دیتے ہوئے مرکزی وزیر برائے مالیات نرملا سیتارمن سب کو حیران کردیا، انھوں نے کہاکہ ’’پیاز کی بڑھتی قیمتوں سے نجی طور پر مجھ پر کوئی خاص اثر نہیں ہے، کیونکہ میری فیملی پیاز-لہسن جیسی چیزوں کو نہیں کھاتی ہے۔‘‘

یاد رہے کہ ایشیا کی سب سے بڑی تھوک منڈی آزاد پور میں پیاز کی تھوک اڑھتی ایچ ایس بھلا نے میڈیا سے بات چیت میں بتایا کہ جمعرات کو پیاز کی تھوک قیمت 60 روپے سے لے کر 75 روپے کلو رہی۔ اگرچہ، مرکزی حکومت نے اس کی بڑھتی ہوئی قیمت کو دیکھتے ہوئے بیرون ملک سے پیاز درآمد کرنے کا فیصلہ کیا ہے، جس کے تحت 10 دسمبر تک بیرون ملک سے 1.10 لاکھ ٹن پیاز 10 دسمبر سے آنی شروع ہو جائے گی۔ حکومت نے یہ پیاز 52 سے 55 روپے فی کلو کی قیمت میں منگوائی ہے۔

ذرائع سے ملی معلومات کے مطابق ممبئی کے جے این پیٹی بندر گاہ پر 10 دسمبر کو 1160 ٹن پیاز کی پہلی کھیپ اترے گی، جسے پورے ملک میں بھیجی جائے گی۔ ذرائع نے بتایا کہ 17 دسمبر تک 1450 ٹن، 24 دسمبر تک 2030 ٹن اور 31 دسمبر تک 1450 ٹن پیاز ممبئی کی بندرگاہ پر آ جائیں گے۔ اس کے علاوہ ملک کی دوسری ریاستوں کے بندرگاہوں پر بھی بیرون ملک سے درآمد پیاز اترے گی۔

قابل ذکر ہے کہ ملک میں پیاز کی کل پیداوار کا تقریبا 30 فیصد حصہ اہم پیداواری ریاست مہاراشٹرکی ہے۔ دراصل کرناٹک، گجرات، راجستھان اور مدھیہ پردیش میں بھی پیاز کی کاشت بڑے پیمانے پر ہوتی ہے۔ بے موسم بارش کی وجہ سے ان ریاستوں میں پیاز کی پیداوار پر اس سال برا اثر پڑا۔ غور طلب ہے کہ گزشتہ سال مہاراشٹر میں پیاز کی کل پیداوار 80.47 ملین ٹن تھی، جو اس سال 65 لاکھ ٹن رہ گئی ہے۔ اس سال پیاز کی پیداوار 15.47 ملین ٹن کم ہوئی ہے۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close