تازہ ترین خبریںکھیل کھلاڑی

پاک شوٹروں کو نہیں دیا ویزا، آئی او سی ہندوستان پر برہم

بین الاقوامی اولمپک کمیٹی (آئی او سی) نے نئی دہلی میں آئی ایس ایس ایف ورلڈ کپ کے لئے پاکستانی نشانے بازوں کو ویزا جاری نہیں کئے جانے کے بعد بین الاقوامی کھیل ایوینٹس کی میزبانی کے بارے میں ہندستان کے ساتھ تمام بات چیت کو ملتوی کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

گذشتہ 14 فروری کو پلوامہ میں سی آر پی ایف جوانوں پر ہوئے دہشت گردانہ حملے کے بعد پاکستانی نشانےبازوں کو ویزا جاری نہ کرنے پر آئی او سی نے سخت قدم اٹھاتے ہوئے ورلڈ کپ سے مردوں کے 25 میٹر ریپڈ فائر مقابلے کے لئے اولمپک کوٹہ کی پوزیشن کو بھی منسوخ کر دیا ہے۔ پاکستانی نشانےبازوں نے اس مقابلے میں حصہ لینا تھا۔
آئی او سی نے کہا کہ جب تک حکومت ہند سے تحریری طور پر یقین دہانی نہیں مل جاتی تب تک وہ ہندستان کو مستقبل میں اولمپک سے متعلق کسی بھی پروگرام کو منعقد کرنے کی اجازت نہیں دے گا۔ پلوامہ میں ہوئے دہشت گردانہ حملے کے بعد ورلڈ کپ کے لئے پاکستانی نشانےبازوں کی شرکت مشکوک ہو گئی تھی۔ غور طلب ہے کہ پاکستان نے دو نشانےبازوں جی ایم بشیر اور خلیل احمد کے لئے ویزا کی درخواست کی تھی۔

آئی او سی کا یہ فیصلہ بین الاقوامی شوٹنگ فیڈریشن (آئی ایس ایس ایف ) کے اس فیصلے کے کچھ گھنٹے بعد آیا جس میں آئی ایس ایس ایف کے صدر ولادیمیر لسن نے کہا تھا کہ اس ورلڈ کپ سے 2020 اولمپک کھیلوں کے لئے مختص کئے تمام 16 اولمپک کوٹہ کو ختم کیا جائے گا۔ اگرچہ آئی او سی نے صرف دو کوٹہ ختم کئے اور باقی 14 کو برقرار رکھا۔ آئی او سی نے سوئٹزرلینڈ کے لوزان میں ایگزیکٹو بورڈ کے اجلاس کے بعد بیان جاری کر کہا کہ آئی او سی نے 25 میٹر کے ریپڈ فائر پسٹل مقابلے میں ہی اولمپکس کوٹہ پر پابندی لگا دی ہے جس میں دو پاکستانی نشانےبازوں نے حصہ لینا تھا۔ لیکن 61 ممالک کے دیگر 500 نشانےبازوں کے مفاد کو ذہن میں رکھتے ہوئے دیگر مقابلوں کا کوٹہ برقرار رکھا گیا ہے۔ یہ شوٹر اس وقت ورلڈ کپ میں حصہ لینے کے لئے ہندستان میں ہیں۔

عالمی ادارے نے کہا کہ آئی او سی، آئی ایس ایس ایف اور ہندستانی اولمپک ایسوسی ایشن (آئی او اے) اور حکومت ہند کے حکام کے ساتھ آخری وقت تک بات چیت کے باوجود پاکستانی وفد کو وقت سے اس ٹورنامنٹ میں داخلہ دینے کے لئے کوئی حل نہیں نکل پایا۔ آئی او سی نے اولمپک چارٹر کے خلاف جانے کے لئے ہندستان کی سخت تنقید کی ہے۔ آئی او سی نے کہا کہ یہ صورت حال اولمپکس چارٹر کے بنیادی اصولوں کے خلاف ہے۔ بین الاقوامی کھیل تقریبات میں حصہ لینے والے کھلاڑیوں اور کھیل وفد کے ساتھ میزبان ملک کو کسی بھی قسم کے امتیازی سلوک اور سیاسی مداخلت کے بغیر یکساں برتاؤ کی ضمانت دینی چاہئے۔

آئی او سی نے کہا کہ اس کے نتیجے میں، ہمارے ایگزیکٹو بورڈ نے ہندوستان میں مستقبل کے کھیل اور اولمپکس سے متعلق پروگراموں کی میزبانی کے لئے ممکنہ ایپلی کیشنز کے بارے میں آئی اواے اور حکومت ہند کے ساتھ تمام بات چیت کو ملتوی کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ جب تک حکومت داخلہ یقینی بنانے کے لئے تحریری ضمانت نہیں دیتی تب تک اس بارے میں کوئی بات نہیں کی جائے گی۔

ٹیگز
اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close