تازہ ترین خبریںدلی نامہ

پارلیمانی انتخابات 2019: شیلا سمیت دیگر امیدواروں نے داخل کیے کاغذات نامزدگی

نئی دہلی (انور حسین جعفری)
ملک کے سب سے بڑے جمہوری تہوار پارلیمانی انتخابات کی ملک بھر میں گہما گہمی جاری ہے۔ قومی دارالحکومت دہلی میں سیاسی سرگرمیوں کے چلتے 12مئی کو ہونے والی ووٹنگ کےلئے آج نامزدگی کے آخری دن کانگریسی امیدواروں نے سیکڑوں حامیوں کے ساتھ اپنے کاغذات نامزدگی داخل کئے۔

دہلی کی سابق وزیر اعلی شیلا دکشت، اجے ماکن، جے پرکاش اگروال سمیت دیگر کانگریسی امیدواروں نے آج لوک سبھا الیکشن کے لئے اپنے اپنے کاغذات نامزدگی داخل کئے۔ ریاستی کانگریس کے صدر اور 15سال دہلی کی وزیراعلی رہ چکی شیلا دکشت نے آج شمال مشرقی دہلی سیٹ سے نندنگری میں نامزدگی داخل کی۔ یہاں ان کا مقابلہ بی جے پی کے ریاستی صدر منوج تیواری اور عام آدمی پارٹی کے دلیپ پانڈے سے ہوگا۔

شیلا دکشت کے نامزدگی کےلئے قافلہ سگنے چربرج سے شروع ہو کر سونیاوہار چوک، کھجوری چوک، جمنا وہار اور بھجن پورا چوک سے ہوتا ہوا نند نگری ڈی سی آفس پہنچا۔ جہاں شیلا دکشت نے شمال مشرقی دہلی لوک سبھا سیٹ کےلئے اپنا پرچہ نامزدگی داخل کیا۔ ان کے ساتھ معروف سینئر وکیل محمود پراچہ تھے۔ سابق وزیراعلی شیلا دکشت کا قافلہ تقریبا 3 کلومیٹر لمبا تھا، جس میں سینکڑوں گاڑیاں اور ہزاروں کانگریس کارکنان اور لیڈران نے شرکت کی۔ نامزدگی داخل کرنے کے بعد شیلا دکشت نے کہا کہ میں شمال مشرقی دہلی سے جذباتی طور پر جڑی ہوئی ہوں کیوں کہ یہیں سے میں نے دہلی میں سیاست شروع کی تھی اور اپنا پہلا انتخاب بھی اسی جگہ سے لڑا تھا۔ دہلی میں انتخاب لڑ کر مکمل حمایت سے کانگریس کی حکومت بنائی اور میں وزیر اعلی بنی اور 15 سال تک دہلی کے لوگوں کی خدمت کی۔ انہوں نے کہا کہ آج دہلی ترقی کی جن بلندیوں کو چھو رہی ہے وہ کانگریس کی دہلی حکومت کی ہی دین ہے۔ اس موقع پر شیلا دکشت کے ساتھ سابق رکن اسمبلی چودھری متین احمد، حسن احمد، رنکو وغیرہ سمیت کانگریس کے عہدیداران اور کارکنان موجود تھے۔

دہلی کانگریس کے سابق صدر اور سابق کابینہ وزیر اجے ماکن نے نئی دہلی پارلیمانی حلقہ سے نامزدگی داخل کی ہے۔ یہاں ان کا مقابلہ ایک بار پھر بی جے پی امیدوار اور موجودہ ممبر پارلیمنٹ میناکشی لیکھی اور عام آدمی پارٹی کے برجیش گوئل سے ہوگا۔ انہوں نے کہاکہ ملک کے عوام کے ساتھ صرف کانگریس ہی انصاف کر سکتی ہے۔ بات دیں کہ کانگریس نے سابق ریاستی صدر اروندر سنگھ لولی کو مشرقی دہلی سے نامزدگی داخل کیا، یہاں ان کا مقابلہ عام آدمی پارٹی کی امیدوار آتشی سے ہوگا۔ سابق ایم پی مہابل مشرا نے مغربی دہلی اور شمال مغربی دہلی سے ریاست کے کارگذار صدر راجیش للوٹھیا نے پرچہ بھرا ہے۔ کانگریس پارٹی نے جنوبی دہلی سے اولمپک گولڈ میڈلسٹ باکسر راجندر سنگھ کو میدان میں اتارا ہے۔

شمال مشرقی دہلی سے ایم پی رہے جے پرکاش کو اس مرتبہ کانگریس نے چاندنی چوک سے امیدوار بنایا ہے۔ جے پرکاش اگروال نے آج علی پور میں اپنے ہزاروں حامیوں کے ساتھ جاکر پرچہ نامزدگی داخل کیا۔ جے پرکاش اگروال نے کہاکہ مجھے خوشی ہے کہ ایک مرتبہ پھر چاندنی چوک کے عوام کی خدمت کا موقع پارٹی نے دیا ہے۔ اگروال نے کہاکہ کانگریس پارٹی نے ہمیشہ بلاتفریق ہر طبقے اور ہر فرقہ کے لوگوں کی ترقی کے لئے کا م کیا ہے۔ ملک کو مذہب کی سیاست سے بچانے اور ترقی یافتہ بنانے کےلئے کانگریس ہی واحد پارٹی ہے۔ جو سب کو ساتھ لیکر چلتی ہے۔ جے پرکاش اگروال کے ساتھ سابق ارکان اسمبلی، کونسلر اور عہدیداران چاندنی چوک ضلع کے صدر محمد عثمان، دہلی پردیش کانگریس کمیٹی کے سکریٹری محمد حامد خان، محمد طیب، عبدالرحمن شاستری، محمد منیر، عبدالواحد قریشی، مسعود ضیا، سیتا رام بازار بلاک کے سابق صدر حسنین اختر منصوری سمیت کثیر تعداد میں کانگریسی کارکنان اور عہدیداران موجود تھے۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close