تازہ ترین خبریںدلی نامہ

میری حکومت مفاد عامہ کے لئے پابند عہد ہے: انل بیجل

دہلی اسمبلی کا بجٹ اجلاس ایل جی کے خطاب اور اپوزیشن کے ہنگا مے کے ساتھ شروع

نئی دہلی (انور حسین جعفری)
دہلی اسمبلی کا بجٹ اجلاس آج اپوزیشن کے ہنگامہ کے ساتھ شروع ہوگیا ہے۔ آج دہلی کے ایل جی انل بیجل کے خطاب سے قبل ہی اپوزیشن ممبران نے جے این یو طلبہ کے معاملے میں سرکار کو گھیرتے ہوئے جم کر ہنگامہ کیا اور سرکار کو ملک کے غداروں کے ساتھ کھڑا بتایا۔ اپوزیشن جے این یو طلبہ پر غدار وطن کا مقدمہ چلانے کےلئے دہلی حکومت کی منظوری نہ دیئے جانے کو لیکر وزیر اعلی اروند کیجریوال سے جواب طلب کر رہے تھے۔ یہ ہنگامہ دہلی کے ایل جی کی موجودگی میں اس وقت ہوا جب اسمبلی کے بجٹ اجلاس کے آغاز میں خطاب کےلئے حسب دستور ایل جی کھڑے ہوئے توان کے کچھ بولنے سے قبل ہی اپوزیشن نے ویل میں اتر کر ہنگامہ شروع کر دیا، اسپیکر رام نواس گوئل نے کہا کہ لیفٹیننٹ گورنر کا خطاب ایوان کی کارروائی کا حصہ نہیں ہے، ابھی ایوان کی کاروائی شروع نہیں ہے، جب آپ کو بو لنے کا موقع ملے تب بات کرنا، لیکن اپوزیشن کا ہنگامہ جاری رہا ، جس پر اسپیکر نے اپنے حقوق کا استعمال کرتے ہوئے ایل جی کے خطاب اور ایوان میں رخنہ ڈالنے پر اپوزیشن کے ممبران کو مارشل کے ذریعہ زبردستی باہر نکلوا دیا گیا۔ جس کے بعد ایل جی نے اپنا خطاب شروع کیا۔ جن ممبران اسمبلی کو باہر نکالا گیا ان میں حزب اختلاف کے رہنما وجیندر گپتا، اوپی شرما اور جگدیش پردھان شامل ہیں۔ وہیں ایل جی کے خطاب کے کچھ دیر وقفے کے بعد شروع ہوئی ایوان کی کاروائی میں اپوزیشن نے بو لنے کو لیکر ہنگامہ کیا ، لیکن اسپیکر نے ان کو اجازت نہیں دی، جس پر اپوزیشن ممبران ایوان سے واک آئوٹ کر گئے، جس میں منجندر سنگھ سرسا بھی شامل تھے۔ ایوان کی کاروائی میں پلوامہ میں شہید ہوئے سیکورٹی فورسیز کے جوانوں اور کشممیر میں دیگر مقامات پر شہید جوانوں کو دو منٹ کی خامموشی اختیار کر کے خراج عقیدت بھی پیش کیا گیا۔ جس کے بعد ایوان کی کاروائی کل تک کےلئے ملتوی کردی گئی۔ دہلی کے ایل جی انل بیجل نے اپنے خطاب میں کہا کہ میری حکومت مفاد عامہ کےلئے پابند عہد ہے ،سرکار کی سرگرمیوں سے دہلی کی ترقی میں تیزی آئی ہے۔

سال 2018-19میں جی ایس ڈی پی 7,79,652کروڑ رو پے ہو نے کا اندازہ ہے ،جو کہ 12.98فیصد کی ترقی کو واضح کرتا ہے۔ ملک کے جی ایس ڈی پی میں دہلی کا تعاون 2018-19میں فی شخص آمدنی 3,65,529رو پے رہنے کا اندازہ ہے جو کہ سال 2017-18کے 3,28,985کے مقابلے 11.11فیصد زیادہ ہے۔ ایل جی نے کہاکہ تعلیم ترقی کا ایک بڑا ذریعہ ہے، تعلیم کو بہتر بنانے کے لئے کوشش کی گئی ہیں۔ 149 سرواودیا کے اسکولوں میں نرسری کلاس شروع ہوگئی ہیں، 9 اسکولوں کو اپ گریڈ کیا گیا تھا، انگلش میڈئم کے 5 بہتر اسکولوں نےاسی تعلیمی سال سے کام شروع کر دیا ہے۔ پرا ئمری اسکولوں میں 4,178کلاس لا ئبریری شروع کئے گئے ہیں ، مشن بنیاد کے پہلی سے نویں لاس تک کے 3,30,460طلبہ اپریل سے جون تک خاص مشن کے تحت تعلیمی معیار بڑھانے کی کلاسوں میں شامل ہوئے۔ اسکولوں میں ہیپی نیس کریکلم کی شروعات کی گئی، حکومت اور معاون اسکول میں تعلیم کے حق کےلئے سکول مینجمنٹ کمیٹی، 31 سکول کی تعمیر شروع ہو گئی12000 نئے کمرے بنا ئے ہیں، رنمنٹ اسکول میںسی ٹی سی ٹی وی کیمرے نصب کئے گئے، کھلاڑیوں کو ملازمت کے مواقع فراہم کیے گئے تھے، 5 فیصد رہائش بھی دی گئیں اولمپکس اور پیرا اولمپک میں تمغے جیتنے والوں کے انعام میں اضافہ کیا گیا ہے،گولڈ میڈل جیتنے والے کو 3کروڑ، سلور میڈل والے کودو کروڑ اور طلائی طمغے والے کو ایک کروڑ رو پے دئے جا ئیں گے ۔ اسی طرح فوج ، پیرا ملٹری فوج ،پو لیس ، ڈی سی ڈی ، ہوم گارڈ، دہلی فائر سرویس وغیرہ کے جوانوں کی ڈیوٹی پر موت پر ان کے اہل خانہ کو ایک کروڑ رو پے دئے جا ئیں گے۔

بجٹ سیشن کے دوران گزشتہ چار سال سے دہلی میں حکمراں عام آدمی پارٹی حکومت 26 فروری کو اپنا آخری بجٹ پیش کرنے کے علاوہ گزرے مالی سال کی اقتصادی سروے بھی ایوان میں رکھا ۔دہلی کی چھٹی اسمبلی کا یہ آٹھواں سیشن گے، جو چھ دن چلنے کے ساتھ 28 فروری کو ختم ہوگا۔دہلی کا بجٹ 26 فروری کو پیش کی جائے گا ۔ 25، 27 اور 28 فروری کو سوال کا وقت ہوگا، جس میں 285 سوالات پوچھے جائیں گے ۔ اس میں 60 سوالات کواسٹار کیا جائے گا جبکہ 225 بغیر اسٹار کوشن ہو ں گے۔ بجٹ اجلاس میں دہلی حکومت کی جانب سے دہلی کے عوام کو تعلیم ، صحت ، عوامی فلاح و بہبود پنشن ، مفاد عامہ ، جھغی واسیوں کو مکانات ، بجلی ، پانی ،سیور، سڑکوں ، پل ، دہلی دیہات اور کسانوں کی ترقی ،پبلک ٹرانسپورٹ ، ڈی ٹی سی ، میٹرو، ماحولیات ،وگیرہ کےلئے کئے گئے یا کئے جا رہے کاموں کا بھی تذکرہ ایل جی انل بیجل نے اپنے خطاب میں کیا۔ جس پر تفصیلی روشنی وزیر خزانہ منیش سسودیا ڈالیں گے۔ ایوان کی کاروائی میں دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال نے رول 192 (2)،رو ل 194(2)اور رول 196(2) کے تحت یکم اپریل سے پبلک اکائونٹ کمیٹی میں دہلی اسمبلی کے نو، نو ممبر منتخب کرنے کی تجویز پیش کی جو اتفاق رائے سے پاس کر لی گئی۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close