تازہ ترین خبریںدلی نامہ

مودی حکومت نے انگریزوں کی ’ہڑپ نیتی‘ چلا کر دہلی کا حق ہڑپنے کا کام کیا ہے: گو پال رائے

نئی دہلی (انور حسین جعفری)
2019 کے پارلیمانی انتخابات کی سرگرمیاں جاری ہیں۔ دہلی کو مکمل ریاست کا درجہ دلانے کے موضوع پر الیکشن میں عام آدمی پارٹی کو کہیں نہ کہیں دہلی میں کانگریس سے اتحاد کا ملال باقی ہے۔ جس کےلئے آج بھی عام آدمی پارٹی اتحاد نہ ہونے کا ٹھیکرا کانگریس کے سر پھوڑ رہی ہے۔ دہلی کنوینر گو پال رائے نے آج کہاکہ ہم چاہتے تھے کہ مودی اور امت شاہ کی جوڑی کو روکنے کےلئے اتحاد کرتے مگر کانگریس نے اتحاد نہیں کیا۔ گو پال رائے آج پارٹی دفتر میں پریس کانفرنس سے خطاب کر رہے تھے۔ ان کے ساتھ ’آپ‘ اقلیتی ونگ کے نائب صدر ایف آئی اسمائیلی بھی موجود تھے۔

دہلی کے وزیرگوپال رائے نے کہا کہ امت شاہ۔مودی کی آئڈیو لوجی اور جس راستے پر بڑھ رہے ہیں وہ ملک کے سسٹم کو تبدیل کر دیں گے۔ اس خطرے کو دیکھتے ہوئے کانگریس سب سے بڑی حریف اور کانگریس سے 36 کا آنکڑا ہونے کے باوجود بھی عام آدمی پارٹی کانگریس سے اتحاد کےلئے آگے بڑھی۔ پارٹی نے یہ فیصلہ کیا کہ ملک بھر میں امیدوار نہیں اتاریں گے جہاں جو پارٹیاں بی جے پی کو شکست دے رہی ہیں ان کی حمایت کریں گے اور جہاں ہم مضبوط ہیں وہاں مل کر اتحاد کرکے بی جے پی کو ہرائیں گے۔ تاکہ ووٹوں کی تقسیم نہ ہو سکے۔ گوپال رائے نے کہا کہ نہ ہونے والے اتحاد کےلئے جتنی لمبی کہانی چلی اتنی لمبی کہانی کہیں نہیں چلی ہوگی۔ انہوں نے کہاکہ وزیراعلی کجریوال پہلے ہی کہہ چکے ہیں کہ جو بھی بی جے پی کے خلاف حکومت بنائے گا ہم اس کی حمایت کریں گے۔ اتحاد نہیں ہوا لیکن ہمیں یقین ہے کہ عوام متحد ہوکر ایک بار پھر عام آدمی پارٹی کو جتائیں گے اور دہلی کی ساتوں سیٹوں پر عام آدمی پارٹی کے امیدوار کامیاب ہوں گے۔

گو پال رائے نے کہاکہ ملک میں مودی حکومت بننے کے بعد جو سلسلہ رہا اس میں ہمارا ماننا ہے کہ یہ ایک سوچی سمجھی پالیسی کے تحت ملک کے تمام اداروں پر قبضہ کیا گیا، ملک کی گنگا جمنی تہذیب کے خلاف ایک لمبی کمپین چلی ہے۔ مودی حکومت کی آئڈو لوجی کو تھوپنے کےلئے سرکاری مشینری کا استعمال کیا گیا ہے، تعلیمی اداروں اور عدلیہ پر قبضے کی کوشش کی گئی، سی بی آئی حکومت کا طوطا رہا لیکن سی بی آئی پر آپریشن چلایا گیا، الیکشن کمیشن پر قبضہ کیا گیا، یہ ایسے معاملات ہیں جن کی ملک میں مثال نہیں ملتی۔

گو پال رائے نے کہاکہ دہلی مکمل ریاست نہیں ہے، لیکن پہلے کی دہلی حکومتوں کو اپنی طاقت کا استعمال کرنے کا موقع ملتا تھا۔ اے سی بی دہلی حکومت کے پاس تھی۔ لیکن دہلی میں عام آدمی پارٹی کی حکومت سازی کے بعد مرکزی مودی حکومت نے انگریزوں کی’ ہڑپ نیتی‘ چلائی اور دہلی کے ایک ایک حق کو ہڑپنے کا کا م کیا ہے۔ ملک میں کوئی بھی حکومت ایسی نہیں ہے جس کو اپنی بیورو کریسی کو چلانے کا حق نہ ہو۔ لیکن دہلی ایسی حکومت ہے جہاں مکمل ریاست نہ ہونے کی وجہ سے منتخب حکومت کے مفاد عامہ کے کاموں میں رخنہ ڈالا جاتا ہے۔ لیکن اس کے باوجود دہلی میں ’آپ‘ حکومت نے تعلیم، صحت سمیت دیگر سیکٹر میں نمایاں کام انجام دیئے ہیں۔ اس لئے عام آدمی پارٹی دہلی کو مکمل ریاست کا درجہ دلانے کےلئے لڑ رہی ہے۔ انہوں نے کہاکہ ہم مانتے ہیں کہ سات ارکان پارلیمنٹ سے دہلی مکمل ریاست نہیں بنے گی لیکن یہ لڑائی جاری رہے گی۔ سڑک سے پارلیمنٹ تک ہم اس لرائی کو لڑیں گے۔

دہلی میں بی جے پی اور کانگریس کی طرز پر کسی بھی مسلم کو امید وار نہ بنائے جانے کے سوال کے جواب میں حالانکہ گوپال کتراتے نظر آئے لیکن انہوں نے کہا کہ پارٹی ابھی آگے بڑھ رہی ہے آگے سب کو موقع ملے گا۔ انہوں نے کہاکہ عام آدمی پارٹی سب کو ساتھ لیکر چلنے میں یقین رکھتی ہے۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close