اپنا دیشتازہ ترین خبریں

مودی حکومت ریزرو بینک کا خزانہ لوٹنے کے درپے ہے: کانگریس

کانگریس نے الزام لگایا ہے کہ مودی حکومت انتخابی سال میں ریزرو بینک کے فنڈ سے چوری-چھپے ساڑھے تین لاکھ کروڑ روپے وصول کر کے ملک میں نوٹ بندي کا دوسرا مرحلہ لانا چاہتی ہے۔

کانگریس کے ترجمان ابھیشیک منو سنگھوی نے پیر کے روز یہاں معمول کی پریس بریفنگ میں کہا کہ ابھی ملک کے باشندے دو سال پہلے لائی گئی نوٹ بندي کی مار سے ابھربھی نہیں پائے ہیں کہ حکومت ریزرو بینک سے خصوصی منافعہ کے نام پر 3.6 لاکھ کروڑ روپے وصولنے کے لئے دباؤ بنا رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کی ریزرو بینک کے فنڈ پر نظر ہے جو برے وقت کے لئے محفوظ رکھا جاتا ہے۔ پہلے ہی ریزرو بینک کا یہ فنڈ 12 فیصد سے گھٹ کر آٹھ فیصد پر آ گیا تھا اور اب چھ فیصد تک پہنچ گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ 3.6 لاکھ کروڑ روپے کی رقم ریزرو فنڈ کا 40 فیصد ہے اور ملک کے جی ڈی پی کا دو فیصد ہے۔

ترجمان نے کہا کہ نوٹ بندي سے ملک کی معیشت کو برباد کرنے کے بعد مودی حکومت کو اپنے پانچویں سال اور انتخابی ضابطہ اخلاق نافذ ہونے سے صرف چار ماہ پہلے اس فنڈ کی یاد آئی ہے اور وہ اسے کم کرنا چاہتی ہے۔ انہوں نے الزام لگایا کہ حکومت اپنے سرمایہ دار دوستوں کو فائدہ پہنچانے کے لیے یہ رقم لینا چاہتی ہے اور اس کے لئے لوگوں کو گمراہ کرنے میں لگی ہے۔ وزارت خزانہ کے حکام کو لوگوں کو گمراہ کرنے والے بیان دینے کے لئے پابند کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ نوٹ بندي کی وجہ سے ریزرو بینک کی طرف سے حکومت کو ہر سال دی جانے والی رقم پہلے ہی آدھی ہوگئی ہے۔ سال 2016-17 میں بینک نے حکومت کو 65876 کروڑ روپے کی رقم دی تھی جو ناےٹبدي کی وجہ 2017-18 میں گھٹ کر 30659 کروڑ روپے رہ گئی۔

مسٹر سنگھوی نے کہا کہ حکومت کا یہ قدم آئین کی خلاف ورزی ہے اور اس سے اس کی سوچ، پالیسی، چال اور کردار کا پتہ چلتا ہے۔ کانگریس اس کی سخت الفاظ میں مذمت کرتی ہے۔

ٹیگز
اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close