بہار- جھارکھنڈتازہ ترین خبریں

منگل پانڈے کے استعفیٰ پر اسمبلی میں زبردست ہنگامہ

بہار اسمبلی میں آج وزیر صحت منگل پانڈے کے استعفیٰ کے مطالبے پر اپوزیشن کے ہنگامہ کی وجہ سے ایوان کی کاروائی وقفہ طعام سے قبل صرف پانچ منٹ ہی چل سکی۔

اسمبلی کی کاروائی گیارہ بجے شروع ہونے کے بعد وقفہ سولات وجوابات کے دوران راشٹریہ جنتادل (آرجے ڈی) کے عبد الباری صدیقی کے مظفرپور میں دماغی بخار سے متعلق مختصر سولات کا جواب جیسے ہی وزیر صحت منگل پانڈے جواب دینے کیلئے کھڑے ہوئے آرجے ڈی اراکین ان کے استعفیٰ کے مطالبے پر شوروغل اور نعرے بازی کرنے لگے۔ ہنگامہ کے دوران وزیرصحت مسٹر پانڈے نے گذشتہ دس سالوں سے مظفر پور، موتیہاری، سیتامڑھی اور شیوہر سمیت مظفرپور کے آس پاس کے دیگر اضلاع میں دماغی بخار کی وجہ سے ہرسال بچوں کی اموات کے سوال کو جزوی طور سے قابل قبول بتایا اور کہاکہ اس سال اس سے 154 بچوں کی موت ہوئی ہے۔

انہوں نے کہاکہ ریاستی حکومت اس بیماری سے مقابلے کیلئے ایس او پی 2018 کی بنیاد پر کاروائی بھی کر رہی ہے۔ اس بیماری سے مقابلہ کیلئے 445 ڈاکٹروں کو ٹریننگ بھی دی گئی ہے اور اسپتال میں اس بیمار ی سے متعلق دوا ئیں بھی وافر مقدار میں دستیاب ہے۔ آرجے ڈی کے اراکین شوروغل اورنعرے بازی کرتے ہوئے ایوان کے بیچ میں آگئے۔ اس کے بعد کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا۔ مارکسوادی۔لینن وادی (سی پی آئی۔ ایم ایل) کے اراکین بھی ایوان کے بیچ میں آکر مسٹر پانڈے کے استعفی کے مطالبے پر نعرے بازی کرنے لگے۔

نعرے بازی کے درمیان وزیر نے کہاکہ آرجے ڈی اراکین ایوان میں ہنگامہ کر رہے ہیں لیکن اس سنگین بیماری سے متعلق ابھی تک حکومت کو اور نہ ہی ان کی جانب سے کوئی مشورہ دیا گیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ ویسے تو آرجے ڈی اراکین کو جب کوئی اپنا کام ہوتا ہے تو وہ انہیں فون کرتے ہیں لیکن اتنے بڑے سانحہ پر ابھی تک کوئی مشورہ نہیں دیا ہے۔ اسمبلی اسپیکر وجے کمار چودھری نے ایوان کو غیر منظم دیکھ کر ایوان کی کاروائی کو دوبجے دن تک کیلئے ملتوی کردی۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close