اپنا دیشتازہ ترین خبریں

ملک کے چوکیدار نے غریبوں کے پیسے چرا کر انل امبانی کو فائدہ پہنچایا: راہل گاندھی

صدر کانگریس راہل گاندھی نے وزیراعظم نریندر مودی پرغریبوں اورکسانوں کے پیسےچرا کر اپنے دوست انل امبانی کو فائدہ پہنچانے کا سنگین الزام لگاتے ہوئے آج کہا کہ مسٹر مود ی ملک کے 15امیر ترین افراد کی چوکیداری کرتے ہیں۔ انہوں نے نیرومودی، مہیول چوکسی، وجئے مالیا، انل امبانی کی بھی چوکیداری کی۔

مسٹر گاندھی نے کہا کہ یوپی اے کے دورمیں رفیل طیاروں کی526 کروڑ روپئے میں خریداری کی بات طے پائی تھی تاہم مودی نے سرکاری کمپنی ایچ اے ایل سے اس کنٹرکٹ کو چھین لیااور 30ہزار کروڑ روپئے کی مبینہ رشوت خوری کے ذریعہ اپنے دوست انل امبانی کی کمپنی کو یہ کنٹرکٹ دلوایا۔ حالانکہ 45000 کروڑ روپئے کے قرض میں مبتلا امبانی کی کمپنی کو قائم ہوئے کچھ عرصہ ہی ہوا ہے جبکہ ایچ اے ایل کمپنی گزشتہ 70 برسوں سے ملک کیلئے کئی طیارے بنانے کا کام کرتی آرہی ہے۔ ا س کمپنی نے سکھوئی، جیگیوراور کئی طرح کے لڑاکو طیارے فوج کیلئے بنائے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مودی فرانس سے 1600کروڑروپے میں یہ طیارے خریدرہے ہیں جبکہ یو پی اے نے 526 کروڑ روپئے میں ان طیاروں کی فرانس سے خریداری کی بات کی تھی۔ فرانس کے صدر سے مودی نے ہی مبینہ طور پرکہا تھا کہ انل امبانی کی کمپنی کو یہ کنٹریکٹ دیا جائے۔ ’’اس طرح مودی نے اپنے دوست انل امبانی کو 30,000 کروڑ روپئے کا فائدہ پہنچایا اور چوکیدار نے چوری کرکے دکھائی ہے‘‘ ۔

انہوں نے کہا کہ 56انچ کا سینہ رکھنےکا دعوی کرنے والے مودی ، رفیل معاملہ میں پارلیمنٹ میں ان سے آنکھیں نہیں ملاسکے تھے۔ وزیراعظم نریندر مودی اور تلنگانہ کے وزیراعلی کے چندرشیکھرراو پر پر ہر جگہ جھوٹ کا سہارالینے کا الزام لگاتے ہوئے صدر کانگریس نے کہا کہ مودی نے وعدہ کیا تھا کہ کسانوں کے قرضہ جات معاف کریں گے اور اس وعدے کو پورا نہیں کیا جبکہ یوپی اے نے کسانوں کے 70,000 کروڑ روپئے کے قرضہ جات معاف کئے تھے۔ کسانوں کو ان کی زمین کا حق دلایا تھا۔ قانون حصول اراضی پارلیمنٹ میں یوپی اے نے ہی منظور کروایا تھا۔ دوسری جانب مودی جی اس بل کو منسوخ کرنے کی تین مرتبہ کوشش کر چکے ہیں جس کی کانگریس کی طرف سے شدید مخالفت کی گئی تو اب انہوں نے بی جے پی کی حکومت والی ریاستوں کے وزرائے اعلی کو ہدایت دی کہ وہ ریاستی اسمبلیوں میں اس بل کو منسوخ کریں اور اس بل کو منسوخ کرنے کا کام تلنگانہ کے وزیراعلی کے چندرشیکھر راو نے بھی ریاست کی اسمبلی میں کیا تھا۔

مسٹر گاندھی نے کہاکہ مودی زمین کا حق کسانوں سے چھننا چاہتے ہیں۔ اب کسانوں اورقبائلیوں سے ان کی زمین ان سے پوچھے بغیر زبردستی لے لی جاتی ہے۔ ماضی قریب میں کانگریس نے حصول اراضی بل کے ذریعہ زمین کا حق قبائلیوں اور کسانوں کو دیا تھا۔ انہوں نے مزید کہا کہہ متعلقہ بل کی مخالفت اس لئے کی جارہی ہے کہ اس کے مطابق اگر کسان کی اراضی حاصل کرنا ہوتو اس کے لئے بازاری شرح سے چارگنا دام کسانوں اور قبائلیوں کو دینے پڑیں گے۔ تلنگانہ میں کانگریس کے برسراقتدار آنے کے بعد حصول اراضی بل اور قبائلیوں کے بل کو لاگو کرکے کانگریس دکھائی گی اور کسانوں وقبائیلوں کو ان کا حق دلایاجائے گا۔

ٹیگز
اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close