تازہ ترین خبریںفلمی دنیا

مشہور ادیب اور فنکار کپیلا واتسیاین کا انتقال

نئی دہلی، (یواین آئی)
پدم و یبھوشن سے نوازی گئیں ملک کی معروف فنکار اور ادیب کپیلا واتسیاین کا بدھ کی صبح یہاں انتقال ہوگیا۔ وہ 91 برس کی تھیں اور ہندی کے مشہور مصنف سچید آنند ہیرا آنند واتسیاین اگئے کی بیوی تھیں۔

انڈیا انٹرنیشنل سینٹر کے سکریٹری کنول والی نے یواین آئی کو بتایا کہ محترمہ واتسیاین نے صبح آٹھ بج کر 50 منٹ پر آخری سانس لی۔ ان کی آخری رسومات دارالحکومت دہلی کے لودھی روڈ پر واقع شمشان گھاٹ پر ادا کی گئی ہیں۔ کوویڈ کی وجہ سے بہت محدود تعداد میں لوگ موجود تھے۔ محترمہ واتسیاین کے انتقال سے شعبہ فن میں سوگ کی لہر ہے۔ لوک سبھا اسپیکر اوم برلا نے بھی ان کے انتقال پر گہرے دکھ کا اظہار کیا ہے اور شعبہ فن کا ناقابل تلافی نقصان بتایا ہے۔

محترمہ واتسیاین ملک کے کئی فنی اداروں سے جڑی تھیں۔ نامور ثقافت کارکن اشوک واجپئی نے ان کے انتقال پر گہرا سوگ ظاہر کرتے ہوئے کہا ہے کہ محترمہ واتسیاین ایک عظیم ادیب تھیں اور غیر معمولی صلاحیت رکھتی تھیں۔ انہوں نے ادب و فن اور ثقافت کے تحفظ اور ترقی کے لئے تاریخی کام کیا۔ وہ اپنے آپ میں ایک تنظیم تھیں اور فن سے جڑے اداروں کی تعمیر کی اور اداکاروں کے درمیان تال میل قائم کرنے میں ایک ستون کا کام کیا۔ ان کا انتقال میرے لئے ایک انفرادی نقصان ہے۔ 25 دسمبر 1928 کو پیدا ہوئیں کپیلا واتسیاین قومی تحریک کی مشہور مصنفہ ستیہ وتی ملک کی بیٹی تھیں۔ وہ رقص و موسیقی اور فن کی عظیم ویدوشی تھیں۔ ان کی تعلیم دہلی بنارس ہندو یونیورسٹی اور امریکہ کے مشیگن یونیورسٹی سے ہوئی تھی۔

سنگیت ناٹک اکاڈمی فیلو رہ چکیں کپیلا جی مشہور رقاص شمبھو مہاراج اور معروف مورخ واسودیو شرن اگروال کی شاگرد بھی تھیں۔ وہ راجیہ سبھا کے لئے 2006 میں نامزد رکن مقرر کی گئی تھیں اور فائدے کے عہدے کے تنازع کی وجہ سے انہوں نے راجیہ سبھا کی رکنیت چھوڑ دی تھی۔ اس کے بعد وہ دوبارہ پھر راجیہ سبھا کی رکن نامزد کی گئی تھیں۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close