آئینۂ عالمتازہ ترین خبریں

مسجد پر حملہ: امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کو ’ہیرو‘ مانتا ہے دہشت گرد برینٹن

نیوزی لینڈ تیسرے بڑے شہر کرائسٹ چرچ کی دو مسجدوں میں آج نماز جمعہ سے قبل مسلح حملوں میں 49 لوگ ہلاک اور 39 زخمی ہوگئے۔ نیوزی لینڈ پولس کے مطابق ڈینز ایونیو میں واقع مسجد میں 41اور لین وُڈ مسجد میں 7جانوں کا زیاں ہوا۔ ایک شدید زخمی اسپتال میں زخموں کی تاب نہ لا کر چل بسا۔ اس کے علاوہ فائرنگ کی زد میں آنے والے 39 زخمی اسپتال میں زیرعلاج ہیں۔

پولیس نے ایک خاتون سمیت 4 حملہ آوروں کو گرفتار کیا، جن میں سے ایک اسٹریلوی ہے۔ گرفتار شدگان میں سے ایک 28 سالہ شخص پر فرد جرم عائد کیا جا چکا ہے. اسے 24 گھنٹوں میں کرائسٹ چرچ کی عدالت میں پیش کر دیا جائے گا۔، میڈیا رپورٹس کے مطابق حملہ آور کی یہ جانکاری سامنے آئی ہے کہ اس کا نام برینٹن ٹیرینٹ ہے جو برطانوی نژاد ہے اور آسٹریلیا میں رہتا ہے۔ حملہ آور نے اس حملہ سے پہلے ایک سنسنی خیز منشور "دی گریٹ ریپلیسمنٹ” لکھا تھا۔ اس میں اس نے دہشت گردانہ حملوں میں یوروپی شہریوں کی جانیں تلف ہونے کا بدلہ لینے کی بات کہی۔ اس کے ساتھ ہی اس نے وہائٹ سپریمیسی قائم کرنے کی بھی بات کہی۔

انگریزی اخبار ’دی سن‘ کے مطابق حملہ آور امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کا فین ہے۔ اتنا ہی نہیں حملہ آور ٹرمپ کو گوروں کی نئی پہچان مانتا ہے۔ اس نے حملہ کرنے سے پہلے لکھا کہ حملہ آوروں کو دکھانا ہے کہ ہماری زمین کبھی بھی ان کی زمین نہیں ہوگی۔ جب تک ایک بھی گورا شخص رہے گا، تب تک وہ کبھی جیت نہیں پائیں گے۔ منشور میں برینٹن ٹیرینٹ نے خود کو عام گورا شخص بتایا ہے۔ اس کا کہنا ہے کہ اس کے والدین برٹش نزاد ہیں۔ اس نے گورے لوگوں کی تعداد بڑھانے کی بات کہی ہے۔ اس کا کہنا ہے کہ ہماری فرٹیلیٹی شرح کم ہے جبکہ کے باہر سے آئے لوگوں کی فرٹیلیٹی شرح زیادہ ہے۔ ایک دن وہ گوروں سے ان کی زمین چھین لیں گے۔

واضح رہے کہ مجموعی طور پر 42 لاکھ کی آبادی والے نیوزیلینڈ میں مسلمانوں کی آبادی بمشکل ایک فیصد گویا 40ہزار کے قریب ہے۔ خبروں کے مطابق حملہ آوروں نے مساجد پر حملے کے رخ پر کیمرے سے مکمل ویڈیو بنائی، جس میں حملے سے قبل سے لے کر فائرنگ اور بعد کی تمام صورتحال ریکارڈ ہوتی رہی۔ سوشل میڈیا پر یہ ویڈیوز تیزی سے وائرل ہوئیں۔ البتہ فیس بک، ٹوئٹر اور یوٹیوب سمیت کئی آن لائن میڈیا سے ان ویڈیوز کو فوری طور پر ہٹا دیا گیا۔

حملے کے بعد، بنگلہ دیش کے بلے باز تمیم اقبال نے ٹویٹ کرکے کہا کہ ’’پوری ٹیم حملے میں محفوظ ہے۔ خوف زدہ تجربہ، برائے مہربانی ہمارے لئے دعا کریں‘‘۔ اس کے علاوہ دوسرا حملہ کرائسٹ چرچ کے مضافات میں ایک مسجد میں ہوا۔ پولیس نے ایک مشتبہ شخص کو گرفتار کرلیا ہے۔ قبل ازیں نیوزی لینڈ ہیرالڈ نے ایک عینی شاہد کےحوالے سے بتایا کہ کم از کم دو مسلح افراد نے فائرنگ کی۔ ایک دیگر عینی شاہد ادریس خیرالدین نے بتایا کہ اسے گولیوں کی آواز سن کر پہلے لگا کہ کہیں تعمیر کا کام چل رہا ہے یا ایسا ہی کچھ لیکن کچھ ہی دیر میں لوگ ادھر ادھر بھاگتے اور چیخ و پکارکرتے نظر آئے۔ حملے کے وقت مسجد میں تقریبا 200 افراد تھے۔

ٹیگز
اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close