تازہ ترین خبریںدلی نامہ

مرکزی حکومت کو فائدہ پہنچانے کا کام کر رہا ہے الیکشن کمیشن

الیکشن کمیشن پر پولنگ ڈائریوں کو دو بارہ بھروانے کا’آپ‘ کا الزام

نئی دہلی (انور حسین جعفری)
ملک میں ای وی ایم میں سے ووٹنگ کرائے جانے پر الیکشن کمیشن سیاسی جماعتوں کے نشانے پر رہا ہے۔ گذشتہ پارلیمانی انتخابات میں ای وی ایم پر گڑبڑی ہونے کے الزامات کے ساتھ الیکشن کمیشن پر جانب داری کئے جانے کے الزامات بھی لگائے گئے تھے۔ عام آدمی پارٹی کی دہلی حکومت نے تو باقائدہ دہلی اسمبلی کے اجلاس کے دوران ای وی ایم ٹیمپرڈ کئے جانے کا ڈیموں بھی دکھایا تھا اور ای وی ایمسے ووٹ کرانے کی زبردست مخالفت کی تھی۔ اس مرتبہ پارلیمانی انتخابات 2019 میں دہلی میں برسر اقتدار عام آدمی پارٹی نے الیکشن کمیشن پر جانب داری کرنے اور پو لنگ ڈائریوں میں گڑبڑی کر نے کا الزام لگایا ہے۔

عام آدمی پارٹی کے چیف ترجمان سوربھ بھار دواج نے آج پارٹی دفتر میں منعقدہ پریس کانفرنس میں کہا کہ الیکشن کمیشن جس طرح سے 2019 کا لوک سبھا الیکشن کروا رہا ہے اس سے کمیشن کی غیر جانبداری پر کئی سوال اٹھ رہے ہیں۔ کمیشن پر لگاتار الزام لگ رہے ہیں کہ کمیشن بی جے پی کے اشارہ پر مرکز کو فائدہ پہنچانے کا کام کر رہا ہے۔ سوربھ بھاردواج نے یہ بھی کہاکہ ہر بوتھ پر افسروں کے ذریعہ 12 تاریخ کو جو پولنگ ڈائری جمع کرائی گئی تھی ان میں گڑبڑی کرکے بدلا جارہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ دہلی میں ای وی ایم کے ذریعہ الیکشن کرایا گیا اور جب کبھی ای وی ایم کے ذریعہ الیکشن کیا جاتا ہے تو اس سے متعلق بہت ساری جانکاری تحریری طور پر الیکشن کمیشن کے پاس ریٹرننگ آفسر کے ذریعہ جمع کرائی جاتی ہے۔ انھوں نے کہاکہ ہر بوتھ پر ایک افسر ہوتا ہے جس کی دیکھ ریکھ میں پورا الیکشن ہوتا ہے، وہ اپنی ڈائری میں یہ باتیں لکھتا ہے کہ میرے پاس کن کن باتوں کیلئے تنازعہ آیا، کتنی اعتراض ہوئے،کتنی شکایات آئیں، ماک پول کیا نتیجہ آیا، کتنے ووٹ ڈالے گئے، کتنی خواتین تھیں، کتنے مرد تھے وغیرہ۔ یہ ڈائری الیکشن کے دن شام کو جمع کرائی جاتی ہے۔

سوربھ بھاردواج نے کہاکہ ہمارے پا س باوثوق ذرائع کے اطلاع ہے کہ الیکشن کے 3 دن بعد یعنی 16 مئی کو تقریبا 200 سے 250 افسران کو الیکشن کمیشن نے بلاکر ان سبھی افسران سے نئے سرے سے ای پولنگ ڈائری بھروائی گئی، ان پر افسران کے دستخط کرائے گئے، کل امبیڈکر نگر علاقہ کے پاس افسران کو بلایا گیا تھا اور ان سبھی افسران سے بھی دوبارہ یہ پولنگ ڈائری بھروا کر دستخط کرائے گئے اور آج بدرپور اسمبلی کے 53 نمبر سے افسران کو بلاکر ان سے نئی ڈائریاں بھرواکر دستخط کروائے گئے ہیں۔

بھاردواج نے کہاکہ جب ہمارے لوگوں نے الیکشن کمیشن کے افسران سے پوچھا تو انھوں نے کہاکہ ایسا کچھ بھی نہیں ہو رہا، جس کی وجہ سے شک اور بڑھ گیا۔ اس کا مطلب یہ بنتا ہے کہ جو کچھ بھی سرگرمیاں ہورہی ہیں وہ غیر قانونی طریقہ سے کی جارہی ہیں، غیرقانونی طریقہ سے ان افسران کو بلاکر دوبارہ سے پولنگ ڈائری میں گڑبڑی کرکے نئی ڈائری تیار کروائی جارہی ہے۔ سوربھ نے کہاکہ اس تعلق سے ہم نے ریٹرننگ آفسر ایم بی روڈ ساکیت کو، ان الیکشن ایجنٹ پربھاکر گور کے ذریعہ ایک لیٹر دیا ہے۔ الیکشن کمیشن سے ہمارا مطالبہ ہے کہ الیکشن کمیشن اس معاملہ پر جواب دے۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close