آئینۂ عالمتازہ ترین خبریں

لیبیا: کشتی حادثہ کا شکار، 150 لوگوں کے مارے جانے کا خدشہ

لیبیا کے ساحل کے نزدیک دو کشتیوں کے حادثے کا شکار ہوجانے کے سبب ان میں سوار تقریباً 300 لوگوں میں سے کم از کم 150 افراد کے ہلاک ہونے کا خدشہ ہے۔

لیبیا میں بین الاقوامی تارکین وطن تنظیم کے ترجمان صفا مسیهلي نے کہا کہ جمعرات کو طرابلس سے 100 كلوميٹر دور خومس شہر کے قریب دو کشتیاں غرقآب ہو گئیں۔ اقوام متحدہ کے سربراہ انتونیو گٹیریس نے بھی اس حادثے پر گہرے رنج و غم کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ وہ حادثے سے صدمے میں ہیں۔ انہوں نے ایک ٹویٹ میں کہاکہ ’’لیبیا ساحل سمندر کے قریب پیش آئے کشتی حادثے میں تقریباً 150 لوگوں کا ہلاک ہونا المناک اور تشویش کی بات ہے۔ ہمیں مہاجرین اور تارکین وطن کو محفوظ اور قانونی راستے دستیاب کرانے ہوں گے۔ بہتر زندگی کی تلاش میں بھٹکنے والے تارکین وطن حفاظت اور عزت کے حقدار ہیں۔

لیبیا کوسٹ گارڈ کے ترجمان ایوب قاسم نے کہا کہ حادثے میں غرقآب ہونے والے 300 لوگوں میں سے 134 کو بچا لیا گیا ہے۔ اس درمیان بین الاقوامی تارکین وطن تنظیم نے جمعرات کو جاری ٹویٹر پوسٹ میں اس حادثے میں 150 سے زائد افراد کے ڈوبنے کا خدشہ ظاہر کیا تھا جبکہ 145 لوگوں کو بچایا گیا۔ بعد میں بچائے گئے لوگوں کو لیبیا بھیجا گیا۔ اقوام متحدہ کی پناہ گزین ایجنسی کے ترجمان چارلی ياكسلے نے کہا کہ ڈوبنے والے لوگوں کو بچانے کے لئے سب سے پہلے مقامی ماہی گیر آگے آئے اور بعد میں لیبیا کوسٹ گارڈ بھی حرکت میں آیا۔

دی گارڈین کی رپورٹ کے مطابق یورپ کی سرحد پار کرنے کے واقعات میں گرمی کے دوران اضافہ جاتا ہے کیونکہ اس دوران سمندر بھی پرسکون رہتا ہے۔ بین الاقوامی تارکین وطن تنظیم کے مطابق رواں سال 2019 میں اب تک 37555 لوگ سمندر کے راستے اور 8007 لوگ زمین کے راستے یوروپ میں داخل ہوئے۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close