تازہ ترین خبریںدلی این سی آر

لاک ڈاؤن: دہلی-گڑگاؤں سرحد پر روکا تو پولیس پر ہوا پتھراؤ

دہلی-گڑگاؤں بارڈر فی الحال سیل، دہلی سے جانے پر نہیں دیا جا رہا داخلہ، پولیس نے لوگوں کو روکا تو کیا پولیس پر پتھراؤ

نئی دہلی(انور حسین جعفری)
ملک بھر میں کورونا وائرس کے پیش نظر لاک ڈاؤن جاری ہے۔ دہلی سے یوپی اور ہریانہ کے تمام بارڈر سیل کئے گئے ہیں۔ لوگوں کی آمد کو روکنے کیلئے پولیس تعینات ہے صرف ضروری خدمات انجام دینے والوں اور سرکار ملازمین کو ہی پاس اور ان کا آئی ڈی دیکھ کر ہی آنے جانے دیا جا رہا ہے۔

بارڈر سیل کئے جانے کے دوران دہلی، گڑگاؤں بارڈر پر پولیس کے ذریعہ لوگوں کو روکے جانے پر پولیس پر پتھراؤ کئے جانے کی اطلاع ملی ہے۔ بتایا جا رہا ہے کہ دہلی سے گڑگاؤں جانے کی کوشش کر رہے لوگوں کو پولیس روک رہی تھی جس پر لوگوں نے ہریانہ پولیس پر پتھراؤ کر دیا۔ معاملہ دہلی کا سالا پور گاؤں کا ہے، اس کا راستہ گڑگاؤں کے سیکٹر 21 کی طرف جاتا ہے، جہاں لوگوں نے گڑگاؤں پولیس پر پتھراؤ کیا۔ یہاں پولیس پر پتھراؤ کر رہی خواتین کی بھی تصویریں کیمروں میں قید ہوئی ہیں۔ بتایا جا رہا ہے کہ دہلی کے لوگ نوکریوں یا دوسرے کام کی وجہ سے گڑگاؤں جانے کی کوشش کر رہے تھے، لیکن پولیس نے انہیں روک دیا۔ اس کے بعد پتھراؤ شروع ہوگیا، لوگ پولیس کو گالی دیتے ہوئے پتھراؤ کر رہے تھے، جبکہ کچھ لوگ یہ بھی کہہ رہے تھے کہ پتھر نہ مارو، پولیس بات کرنے کو تیار ہے۔ فی الحال حالت کنٹرول میں ہے اور بارڈر کو پوری طرح سیل کردیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ یکم مئی کے بعد سے دہلی سے ملحقہ یوپی اور ہریانہ کی سرحدیں سیل ہیں۔ یہاں کسی کے داخلے پر ایک ہفتہ تک مکمل پابندی عائد تھی۔ اس کے بعد یہاں لوگوں کو مرکزی وزارتوں کے لوگوں کو اینٹری دی گئی۔ اس کے بعد ڈاکٹروں، پیرامیڈیکل اسٹاف اور نجی اسپتالوں کے ملازمین وغیرہ اور دیگر سرکاری محکموں کے ملازمین کو داخلہ دیا گیا۔ جبکہ کئی روز سے پھلوں، سبزیوں، دودھ، گیس ایجنسی، فوڈ وغیرہ کی سپلائی سے وابستہ افراد کو داخلہ دیا گیا۔ لاک ڈاؤن 4 کے پہلے دن یہاں سختی دیکھی گئی۔ دہلی سے آنے اور جانے والی دونوں جانب پولیس کی سختی رہی۔ جس کی وجہ سے یہاں بھاری ٹریفک بھی ہوگیا۔ فی الحال دہلی، گڑگاؤں سرحدیں پہلے کی طرح ہی رہیں گی اور جن لوگوں کے پاس جاری کئے گئے پاس اور آئی ڈی ہیں ان کو آنے جانے کی اجازت ہے۔

قابل ذکر ہے کہ راجدھانی دہلی میں لاک ڈائون 4 میں کافی راحت دی گئیں ہیں، جس میں دکانیں اور صنعتیں کھول دی گئی ہیں۔ لیکن لاک ڈائون میں ابھی دہلی جیسی راحت دوسری ریاستوں میں نہیں ہے۔ مرکزی حکومت نے ریاستی حکومتوں کو لائحہ عمل بنانے کو کہا ہے۔ یاد رہے کہ یہ پہلی مرتبہ نہیں ہے دہلی کے باردڑ پر کوئی ہنگامہ ہوا ہو اس سے قبل غازی پور بارڈر پر دہلی سے پیدل ہی یوپی جا رہے مزدوروں کو روکے جانے پر انہوں نے ہنگامہ کیا تھا، اس کے علاوہ پولیس کی جانب سے مہاجر مزدوروں کو بارڈر کراس کرنے سے روکنے کیلئے لاٹھی چارج کی خبریں سامنے آئی ہیں۔ جبکہ آج گڑ گاؤں پولیس پر لوگوں کے ذریعہ پتھراؤ کرنے کی خبر سامنے آئی ہے۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close