دلی این سی آر

عوام کے فیصلہ کا قتل جمہوریت کی تاریخ میں سیاہ حرفوں میں لکھا جائے گا

مہاراشٹر کی فڑنویس سرکار معاملے پر بی جے پی ہیڈ کوارٹر پر کانگریس کا احتجاجی مظاہرہ

نئی دہلی (انور حسین جعفری)
مہارشٹر میں رات کے اندھیرے میں سرکار کی کایہ پلٹ ہو نے کو کا نگریس کی جانب سے بی جے پی کے ذریعہ جمہوریت کی دھجیاں اڑانا بتایا جا رہا ہے۔ مہاراشٹر میں وجود میں آئی فڑنویس سرکار کے خلاف دہلی پر دیش کانگریس کمیٹی کے صدر سبھاش چوپڑہ کی قیادت میں آج ہزاروں کانگریسیوں نے ڈی ڈی یومارگ پر واقع بی جے پی دفتر پر احتجاجی مظاہرہ کیا۔ ہاتھوں میں بی جے پی مخالف اور رات کے اندھیرے میں حکومت سازی کو جمہوریت کا قتل بتا نے والے نعرے لکھی تختیاں اٹھائے کا نگریسی مظا ہرین بی جے پی ہیڈ کواٹر پر پہنچنا چا ہتے تھے لیکن پولیس نے بیچ میں ہی بیریکیٹ لگا کر انہیں روک دیا۔

مظاہر ین سے خطاب کرتے ہوئے ریاستی صدر سبھاش چوپڑا نے کہا کہ مودی سرکار نے نہ صرف جمہوریت کا قتل کیا ہے بلکہ قانون کو بھی ٹھینگا دکھایا ہے۔انہوں نے کہا کہ تاریخ میں پہلی بار ایسا ہوا ہے جب صبح پانچ بجے صدر راج ہٹایا گیا ہو۔ محض 22 منٹ میں مہاراشٹر کے عوام کے فیصلہ کا قتل جمہوریت کی تاریخ میں سیاہ حرفوں میں لکھا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس سڑک سے پارلیمنٹ تک جمہوریت کی حفاظت کیلئے لڑائی کو جاری رکھے گی۔

سبھاش چوپڑا نے الزام لگایا کہ مرکزی حکومت سرکاری ایجنسیوں کے ذریعہ ارکان اسمبلی کو جھوٹے مقدموں میں پھنسانے کی دھمکیاں دے رہی ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ دہلی کے عوام بی جے پی کی اس کالی کرتوت سے کافی غصہ میں ہیں۔ملک کے عوام کسی بھی قیمت پر جمہوریت کو بچانا چاہتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ آج یہ سوچنے پر مجبور ہوناپڑ رہا ہے کہ ہندوستان میں الیکشن کے عمل کو تو ختم نہیں کر دیا جائے گا۔

سابق صدرجے پر کاش اگروال اور اروند سنگھ لولی نے کہا کہ ایمرجنسی کی باتیں کرکے اقتدار حاصل کرنے والی بی جے پی حکومت نے پورے ملک میں غیر اعلانیہ ایمرجنسی لگا رکھی ہے۔بلکہ سرکاری غنڈہ گردی اورسرکارطاقت کا غلط استعمال عروج پر ہے۔انہوں نے کہا کہ اقتدار کی لالچی بی جے پی سرکاروں کو بچانے کیلئے کسی بھی حد تک گر سکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس ہی واحد پارٹی ہے جس نے ہمیشہ عوام کے فیصلہ کو تسلیم کیا ہے۔انہوں نے مطالبہ کیا کہ فڑنویس اور اجیت پوار فورا اپنے عہدوں سے استعفی دیں۔

مکیش شرما نے اس موقع پر کہا کہ مہاراشٹر کا ایل جی ہاؤس مرکز کی بی جے پی کے ایجنٹ کے طور پر کام کر رہا ہے۔الکا لامبا نے کہاکہ یہ جمہوریت کا قتل ہے۔ اب یہ فلور ٹیسٹ طے کر دیگا کہ بی جے پی کے ساتھ کون ہے اور کون نہیں ہے۔ اس موقع پر دہلی مہیلا کانگریس کی صدر شرمشٹھا مکھرجی، سابق وزیر پور فیسر کرن والیہ، ڈاکٹر نریندر ناتھ، سابق ایم ایل اے چو دھری متین احمد، آصف محمد خان، نصیب سنگھ،جے کشن، بلرام تنور، شیشپال، وجے لوچر، بیرج بسویا، کنور کرن سنگھ، انل بھاردواج، راجیش جین، جتیندر کوچر، برہم پال، محمد عثمان، شعبہ اقلیت کے صدر علی مہدی، کونسلر آل محمد اقبال، سیما طاہرہ، سلطانہ عباد خان، مکیش گویل، ابھیشیک دت،رنکو،جگ جیون شرما،امت ملک،عبد الواحدقریشی، بھائی مہر بان قریشی، پرتھوی سنگھ راٹھور،محمود ضیاء، مرزا جاوید علی،سلیم زیدی،دلشاد حسین جعفری،محمد نسیم،مقصود جمال، جمیل ملک، محمد انصار، بشیرا تیل والے،سندیپ تنوراور تمام ضلع صدرو، یوتھ کا نگریس، مہیلا کانگریس کے مرد و خواتین کارکنان موجود تھے۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close