تازہ ترین خبریںکھیل کھلاڑی

عالمی چمپئن شپ میں دیپک سے روشن ہوا ہندوستان

جونیئر عالمی چمپئن پہلوان دیپک پنیا نے یہاں چل رہی عالمی کشتی چمپئن شپ کے 86 کلوگرام فری اسٹائل اولمپکس وزن کی کلاس مقابلے میں ہفتہ کو تاریخ رقم کرتے ہوئے فائنل میں جگہ بنا لی اور وہ اب اس چمپئن شپ کی تاریخ میں ملک کو دوسرا طلائی تمغہ دلانے سے صرف ایک قدم دور رہ گئے ہیں، دیپک نے اس کے ساتھ ہندستان کو ٹوکیو اولمپکس 2020 کے لیے چوتھا کوٹہ بھی دلا دیا۔

دیپک نے اس کے ساتھ ہی ملک کے لئے اس مقابلے میں پہلا چاندی کا تمغہ یقینی کر لیا۔ اگرچہ وہ سونے کا تمغہ اور 2010 میں پہلوان سشیل کمار کی طلائی کامیابی کی تاریخ دہرانے سے ایک قدم دور ہیں۔ ایک اور ہندوستانی پہلوان راہل اوارے 61 کلو غیر اولمپک کلاس کے کانسی مقابلے میں اتریں گے۔ سونے اور کانسی کے مقابلے اتوار کو کھیلے جائیں گے۔ جونیئر عالمی چمپئن شپ میں ملک کو 18 سال کے بعد طلائی تمغہ دلانے والے دیپک ابھی سینئر چمپئن شپ میں ہندوستان کو نو سال بعد طلائی تمغہ دلانے کے قریب پہنچ گئے ہیں۔ عالمی کشتی مقابلہ میں ہندوستان کا واحد طلائی تمغہ سشیل نے 2010 میں جیتا تھا۔

درون اچاریہ پہلوان ستپال کے شاگرد دیپک نے سیمی فائنل میں سوئٹزرلینڈ کے اسٹیفن ریچمتھ کو یکطرفہ انداز میں 8-2 سے شکست دے کر فائنل میں داخلہ حاصل کر لیا جہاں ان کا مقابلہ ایران کے حسن عالیہ زم یزدانی چراتي کے ساتھ ہو گا۔ ستپال کے ایک اور شاگرد روی کمار پہلے ہی 57 کلوگرام کلاس میں کانسی کا تمغہ جیت چکے ہیں اور ملک کو اولمپک کوٹہ دلا چکے ہیں۔ ہندوستان کا اس مقابلے میں یہ چوتھا تمغہ اور چوتھا اولمپک کوٹہ ہو گیا ہے۔ اس سے پہلے روی کمار نے 57 کلوگرام فری اسٹائل، بجرنگ پنیا نے 65 کلوگرام فری اسٹائل اور خاتون پہلوان ونیش پھوگاٹ نے 53 کلوگرام کلاس میں ملک کو اولمپک کوٹہ دلایا تھا۔ روی ، بجرنگ اور ونیش اپنے وزن میں کانسی کا تمغہ جیت چکے ہیں۔

ہندستان کو 18 سال کے طویل وقفے کے بعد جونیئر عالمی چمپئن شپ میں حال میں طلائی تمغہ دلانے والے دیپک نے اپنی شاندار کارکردگی سینئر چمپئن شپ میں برقرار رکھتے ہوئے 86 کلوگرام کے فائنل میں جگہ بنالی ہے۔ دیپک نے اپنے مقابلوں میں شاندار شروعات کرتے ہوئے كوالیفکیشن میں قازقستان کے ادلت داولمبایو کو 8-6 سے شکست دی۔ دیپک نے پری کوارٹر فائنل میں تاجکستان کے بخودر قدریو کو 6-0 سے پیٹا۔ انہوں نے کوارٹر فائنل میں کولمبیا کے كارلوس ارترو کو نزدیکی مقابلے میں 7-6 سے شکست دے کر سیمی فائنل میں جگہ بنانے کے ساتھ ملک کو اولمپک کوٹہ دلا دیا۔ دیپک نے سیمی فائنل میں سوئٹزرلینڈ کے اسٹیفن ریچمتھ کو آسانی سے 8-2 سے ہرا دیا اور فائنل میں پہنچ گئے۔ دیپک کے جیتتے ہی مکمل ہندستانی خیمہ خوشی سے اچھل پڑا۔ پچھلی عالمی چمپئن شپ میں بجرنگ نے چاندی کا تمغہ جیتا تھا اور اس بار دیپک نے کم سے کم چاندی کا تمغہ یقینی کر لیا ہے۔ بجرنگ کو اس بار کانسہ سے اکتفا کرنا پڑا۔

اس درمیان راہل اوارے کو 61 کلوگرام کلاس کے سیمی فائنل میں شکست کا سامنا کرنا پڑا جس کے بعد وہ کانسی کے لیے اتریں گے۔ اوارے وزن زمرہ غیر اولمپک وزن کی کلاس ہے۔ اوارے نے پری کوارٹر فائنل میں ترکمانستان کے كرم هوجاكوو کو 13-2 سے اور کوارٹر فائنل میں قازقستان کے راسل كاليو کو 10-7 سے شکست دے کر سیمی فائنل میں جگہ بنائی جہاں ان کو جارجیا کے بیكا لومتادجے سے 6-10 سے شکست کا سامنا کرنا پڑا۔ اوارے ابھی کانسی کے لئے کھیلیں گے۔

ہندستان کے دو دیگر پہلوانوں جتیندر کو 79 کلوگرام کے کوارٹر فائنل اور موسم کھتری کو 97 کلوگرام کے قریب پری کوارٹر فائنل میں شکست کا سامنا کرنا پڑا اور ان کا چیلنج ختم ہو گیا۔79 کلو گرام میں جتیندر کو کوارٹر فائنل میں سلوواکیہ کے تیمراج سالكاجانوو نے 4-0 سے شکست دی۔ سالكاجانوو کو سیمی فائنل میں شکست کھانی پڑی جس سے جتندر کی ریپینچیز میں اترنے کی توقع ٹوٹ گئی۔97 کلو گرام میں کھتری کو پری کوارٹر فائنل میں امریکہ کے کائل فریڈرک سنائیڈر نے 10-0 سے تکنیکی برتری کی بنیاد پر شکست دے دی۔ سنائیڈر اپنا سیمی فائنل میچ ہار گئے اور کھتری کی بھی ریپینچیز میں اترنے کی توقع ختم ہو گئی۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close