تازہ ترین خبریںدلی نامہ

شیلا دکشت اور آتشی کو کامیاب بنائیں: پروفیسر اختر الواسع

معرو ف اسلامی اسکالر پدم شری پروفیسر اختر الواسع نے دہلی کے ووٹروں سے سیکولر امیدواروں کو کامیاب بنانے پر زور دیتے ہوئے بالخصوص شیلا دکشت اور آتشی کو ان کے پارلیمانی حلقوں میں ووٹ دینے کی اپیل کی ہے۔

پروفیسر اختر الواسع نے کہا کہ دہلی ایک بار پھر آزمائش سے گذر رہا ہے اور ایسے میں سیکولرووٹوں کا بکھراو فرقہ پرستوں کی جیت کا سبب بن سکتا ہے۔ اس لئے ایسے میں وہ کام جو کانگرس اور عام آدمی پارٹی نہیں کرسکیں یعنی اس الیکشن میں فرقہ پرست طاقتوں کا مقابلہ کرنے کے لئے متحد نہیں ہوسکیں، وہ کام اب عوام کو کرنا ہے اور یہ اب عوام کی ذمہ داری ہے کہ قائدانہ کردار ادا کرتے ہوئے فرقہ پرست طاقتوں کوشکست سے دوچار کریں۔

انہوں نے کہا کہ دہلی کے ووٹروں کو چاہئے کہ وہ ساتوں پارلیمانی حلقوں میں اچھے اور سیکولر ذہنیت کے حامل امیدواروں کو اپنا ووٹ دیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ شیلا دکشت نے پندرہ سال کے اپنے دور اقتدار میں دہلی کی تصویر اور تقدیر دونوں کو بدلنے کی کوشش کی اور قومی دارالحکومت کو ایک نیا رخ عطا کیا۔ پروفیسر واسع نے کہا کہ عام آدمی پارٹی کی امیدوار محترمہ آتشی نے حکومت میں پردے کے پیچھے رہ کر تعلیم کی ترقی کے لئے کارہائے نمایاں انجام دیئے۔ انہوں نے سرکاری اسکولوں کو اس معیار تک پہنچایا جہاں سماج کے پسماندہ اور کمزور طبقات کے طلبہ کو بھی معیاری تعلیم مل رہا ہے۔

پروفیسر اختر الواسع نے بھوپال کا بھی ذکر کرتے ہوئے کہا کہ وہاں اس مرتبہ پارلیمانی الیکشن میں حقیقی معنوں میں سیکولر جمہوریت کا امتحان ہو رہا ہے۔ ایک ایسی شخصیت جس کے بارے میں کوئی شبہ نہیں کہ وہ دہشت گردی کی علامت ہے ’جس نے خود اپنی زبان سے اعتراف کیا ہے کہ بابری مسجد کی شہادت میں وہ صف اول میں تھی اور شہید ہیمنت کرکرے نے جسے مالیگاوں دھماکوں میں ایک طرح سے ملزم گردانا وہ ایک طرف ہے جب کہ دوسری طرف وہ شخصیت یعنی دگ وجے سنگھ ہیں جو ہندوستان میں سیکولر جمہوریت کی علامت اور وکیل بھی ہیں۔ اس لئے بھوپال کے لوگوں کو سوچ سمجھ کر اپنے ووٹ کا استعمال کرنا چاہئے تاکہ ان کا ووٹ برباد نہ ہو۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close