تازہ ترین خبریںدلی نامہ

شہریت ترمیمی قانون: جامعہ میں مظاہرین پر پولیس کا لاٹھی چارج، کئی زخمی

شہریت ترمیمی قانون کے خلاف پورا ملک سراپا احتجاج ہے۔ شمال مشرقی ہند میں آگ لگی ہوئی ہے اور لوگ سڑکوں پر ہیں وہیں دارالحکومت دہلی کے جامعہ ملیہ اسلامیہ سے لے کر اوکھلا شاہین باغ علاقے بھی میں شہریت قانون کے خلاف بڑی تعداد میں لوگوں نے احتجاج کیا۔

بتا دیں کہ جامعہ ملیہ اسلامیہ کے طلبہ وطالبات آج مسلسل تیسرے روز بھی احتجاجی مظاہرہ جاری رکھتے ہوئے شہریت ترمیمی قانون کی سخت مخالفت کی ہے. وہیں شہریت قانون اور این آرسی کے خلاف لوگوں نے احتجاجاً اپنی دوکانوں کو بند کرکے سڑک پر اتر آئے۔ احتجاج کر رہے لوگ مودی، امت شاہ مردہ باد کے نعرے لگا رہے ہیں اور شہریت قانون کی مخالفت میں بھی نعرے لگا رہے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ ملک کا امن پسند شہری کبھی بھی اس قانون کو قبول نہیں کرے گا جو لوگوں کے درمیان تفریق پیدا کررہا ہو۔ لیکن اس دوران احتجاج کر رہے لوگوں پر پولیس نے لاٹھی چارج کیا اور آنسو گیس کے گولے بھی چھوڑے جس میں کئی لوگ زخمی بتائے جا رہے ہیں.

یاد رہے کہ اس پہلے جمعہ کے روز بھی احتجاج کرے رہے طلبہ اور پولیس کے درمیان پر تشدد چھڑپ ہوگئی تھی۔ جہاں طالب علموں کے احتجاج کو روکنے کے لئے پولیس نے پہلے پانی کی بوچھاریں کیں اور پھر آنسو گیس کے گولے چھوڑے۔ اس کے بعد پولیس نے طالب علموں پر لاٹھی چارج بھی کیا۔ پولیس کی اس کارروائی میں بڑی تعداد میں طلبہ و طالبات زخمی ہوئے۔ اس کے علاوہ پولیس نے احتجاج کر رہے سیکڑوں طلبہ کو حراست میں لے لیا تھا۔

واضح رہے کہ کل جامعہ انتظامیہ نے کشیدہ صورتحال کو مدنظر رکھتے ہوئے تمام امتحانات ملتوی کردیا اور 16 دسمبر سے آئندہ برس پانچ جنوری تک سرمائی تعطیل کا بھی اعلان کر دیا ہے۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close