اترپردیشتازہ ترین خبریں

شرمناک: چلتی کار میں 4افراد نے طالبہ کو بنایا اپنی ہوس کا شکار، سڑک پر پھینک کر ہوئے فرار

اترپردیش کی راجدھانی لکھنؤ کے شہید پتھ پر چار افراد کے ذریعہ مبینہ طور پر چلتی کار میں ایک طالبہ کے ساتھ اجتماعی آبروریزی کا معاملہ روشنی میں آیا ہے۔ سبھی ملزمین متأثرہ کے جاننے والے ہیں۔ واقعہ کے بعد متاثرہ کو تیلی باغ علاقے میں کار سے نیچے روڈ پر ڈھکیل دیا اور وہاں سے فرار ہوگئے۔ ملی اطلاعات کے مطابق متاثرہ بی اے سال اول کی طالبہ ہے.

اطلاعات کے مطابق متاثرہ ایک ریٹائرڈ پولیس کی بیٹی ہے۔ متاثرہ کو طبی معائنے کے لئے اسپتال بھیجا گیا ہے اور ملزموں کے خلاف مقدمہ درج کرلیا گیا ہے۔ متاثرہ نے چار ملزمین کا نام ببلو، کاشی رام، جے پی گپتا اور ہریش بتایا۔ متاثرہ نے مزید بتایا کہ ان لوگوں نے چلتی کار میں اس کے ساتھ ایک گھنٹے تک منھ کالا کیا۔ متاثرہ کے والد ملیح آباد کے رہنے والے ہیں اور وہ محکمہ پولیس سے 2015 میں ریٹائرڈ ہوئے۔ الزام یہ بھی ہے کہ متاثرہ نے ببلو اور کاشی رام کو مبینہ طو ر پر 50 ہزار روپئے نوکری دلانے کے نام پر دیئے تھے۔ تاہم ایک سال بعد بھی جب اس کو نوکری نہ ملی تو اس نے دونوں سے دی ہوئی رقم واپس کرنے کا مطالبہ کیا۔ رقم واپس کرنے کے لئے انہوں نے اسے وبھوتی کھنڈ آنے کے لئے کہا۔

متأثرہ نے مزید بتایا کہ جب وہ پہلے سے متعینہ مقام پر وہ پہنچی تو اس نےدیکھا کہ ببلو ایک کار میں بیٹھا ہے جب وہ اس کی جانب جانے کے لئے مڑی تو دیگر نے اسے کار میں زبردستی بٹھا لیا اور اس کے ساتھ چلتی کار میں ایک گھنٹوں تک اجتماعی طور پر منھ کالا کیا۔ تاہم پولیس کا یہ بھی دعوی ہے کہ متأثرہ لڑکی کے گھر اور ببلو کے اہل خانہ کے درمیان پرانی دشمنی بھی اس واقعہ کی وجہ ہو سکتا ہے۔ پولیس پورے واقعہ کی جانچ کر رہی ہے جبکہ ملزمین ابھی تک مفرور ہیں۔

ٹیگز
اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close