آئینۂ عالمتازہ ترین خبریں

شراب کے استعمال سے سالانہ 30 لاکھ افراد کی موت ہوتی ہے: ڈبلیو ایچ او

دنیا بھر میں تقریبا 23 کروڑ 70 لاکھ مرد اور چار کروڑ 60 لاکھ خواتین شراب کی وجہ سے ہونے والی بيماريوں کی زد میں آتے ہیں اور اس کی وجہ سے ہر سال 30 لاکھ افراد کی موت ہوجاتی ہے۔ امیر ممالک میں شراب کا استعمال سب سے زیادہ ہو رہا ہے۔ دنیا میں ہر 20 میں سے ایک موت شراب کی وجہ سے ہوتی ہے۔

عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) نے 2018 کی صحت رپورٹ جاری کی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ شراب کی وجہ سے مردوں کی سب سے زیادہ موت ہوتی ہے۔ 2016 میں اس کی وجہ سے 30 لاکھ لوگوں کی جان چلی گئی ہے۔ تنظیم نے دنیا کے ممالک سے شراب کے استعمال پر کنٹرول لگانے کے تدارک کے بارے میں معلومات مانگی ہے۔ڈبلیو ایچ او کے ڈائرکٹر جنرل ڈاکٹر ٹیڈرو س ادھنوم گیبریس نے کہا’’صحت مند معاشرے کی ترقی کے لئے اس سنگین خطرے کے خلاف بڑے اقدامات کرنے کا وقت آ گیا ہے‘‘۔

رپورٹ کے مطابق ہر سال شراب کے استعمال سے ہونے والی کل اموات میں 28 فیصد شراب کے استعمال سے متعلق واقعات- مثلاً نشے میں گاڑی چلانا اور گھر میں مارپیٹ، خود کو نقصان پہنچانے وغیرہ سے هوتي ہیں۔ 21 فیصد قوت انہضام میں خرابی آنے کی وجہ سے، 19 فیصد دل سے متعلق بیماریوں کی وجہ سے اور باقی اموات کینسر، خطرناک وبا، ذہنی بیماریوں اور دیگر صحت کی وجوہات هوتي ہیں۔

ڈاکٹر گیبريس نے کہا کہ شراب کے ضرورت سے زیادہ استعمال سے نہ صرف اس کا استعمال کرنے والا شخص بلکہ اس کا خاندان کوبھی زبردست مسائل کا سامنا کرتا ہے۔انہوں نے کہا’’شراب کے استعمال سے بڑی تعداد میں لوگ اور ان کے خاندان کے رکن پریشانیوں کا سامنا کرتے ہیں ۔ شراب کی ضرورت سے زیادہ مقدار سے بڑی تعداد میں لوگ کینسر اور فالج کی زد میں آ رہے ہیں۔ اس کے علاوہ شرب نوشی کی وجہ سے ذہنی حالت بگڑنے پر سماج میں تشدد کے واقعات میں بھی اضافہ ہو رہا ہے۔

ٹیگز
اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close