اپنا دیشتازہ ترین خبریں

سی بی آئی کے نمبر٢ افسر بنے ملزم نمبر ایک، رشوت خوری کے الزام میں مقدمہ درج

سینٹرل بیورو آف انویسٹیگیشن (سی بی آئی) نے اپنے ہی نمبر دو افسر پر رشوت خوری کا الزام لگایا ہے خصوصی ڈائریکٹر راکیش استھانا کا نام گزشتہ ہفتے اس معاملے میں سامنے آنے کے بعد انکے خلاف سی بی آئی نے منگل (16 اکتوبر) کو مقدمہ درج کرایا ہے. ایف آئی آر میں استھانا کے علاوہ ملک کی انٹیلیجنس ایجنسی ریسرچ اینڈ انلیسیس ونگ (را) کے خصوصی ڈائریکٹر سمنت کمار گویل کا نام بھی شامل ہے.

ذرائع کے مطابق سیکشن 164 کے تحت سی بی آئی نے مجسٹریٹ کے سامنے کچھ ٹیلی فون انٹررپٹس، واٹسپ میسج، منی ٹرول اور ا سٹیٹمنٹ پیش کئے ہیں. استھانا کو جو ٹیکسٹ میسج بھیجے گئے، انکا جواب ان کی طرف سے نہیں دیا گیا. سی بی آئی نے اس سے پہلے 21 ستمبر کو کہا تھا کہ "ہماری طرف سے اس بارے میں مرکزی نگرانی کمشنر (سی وی سی ) کو اطلاع دے دی گئی ہے کہ ہم بدعنوانی کے چھ معاملات میں استھانا کے بارے میں تحقیقات کر رہے ہیں.”

اس کے جواب میں استھانا نے سرکار کو ورما کے خلاف شکایت میں لکھا کہ ڈائریکٹر نے ان کے (استھانا) کام کاج میں رکاوٹ ڈالی، تحقیقات میں مداخلت کی اور ان کی شخصیت کو نقصان پہنچایا. آپکی جانکاری کے لئے بتا دیں کہ کہ استھانا پر کیس درج کرنے سے پہلے سی بی آئی نے دبئی کے بچولیا منوج پرساد کو گرفتار کیا تھا، جسے لے کر یہاں حیدرآباد کے کاروباری ثنا ستیش نے شکایت کی تھی. سی بی آئی کی ایس آئی ٹی ٹیم انہی کو لے کر قریشی کے بدعنوانی معاملے میں جانچ کر چکی ہے.

غور طلب ہے کہ قریشی کے یہاں فروری 2014 میں ٹیکس ڈپارٹمنٹ نے چھاپہ مارا تھا. اہلکاروں کو تب انکے بلیک بیری میسنجر (بی بی ایم) میسج پر سی بی آئی کے سابق ڈائریکٹر ایپی سنگھ کے ساتھ چیٹ ملا تھا، جس کے بعد سنگھ کو یونین پبلک سروس کمیشن (یو پی پی ایس) سے بطور رکن استعفی دینا پڑا تھا

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close