تازہ ترین خبریںدلی نامہ

سی اے اے کے خلاف جعفرآباد میٹرو کے نیچے مظاہرہ

شہریت ترمیمی قانون (سي اےاے) کے خلاف دہلی کے شاہین باغ کی طرز پر جعفرآباد میٹرو اسٹیشن کے قریب ہفتہ کو دیر رات اچانک خواتین نے جمع ہو کر احتجاج شروع کر دیا۔

سینکڑوں خواتین آدھی رات کو جعفرآباد میٹرو اسٹیشن کے نیچے سے گزرنے والی سڑک پر بیٹھ گئیں اور سي اےاے، این پی آر اور این آرسي کے خلاف نعرے بازی کرنے لگیں۔ ’پنجرہ توڑ آندولن‘ کی ایک رکن دیوانگنا كلتا نے میڈیا کو بتایا کہ جعفرآباد میں طویل عرصہ سے مظاہرہ ہورہا ہے لیکن کل دیر رات تقریبا ایک ہزار خواتین اپنے دھرنے کے مقام سے کوچ کرکے جعفرآباد میٹرو اسٹیشن کے نیچے بیٹھ گئیں۔ یہاں بڑی تعداد میں پولیس فورسز کو تعینات کیا گیا ہے۔ پولیس نے ان سے سڑک سے ہٹنے کی اپیل کی لیکن مظاہرین مذکورہ قوانین کے خلاف کے نعرے لگاتی رہیں۔

ایک سوال کے جواب میں دیوانگنا نے کہا کہ احتجاج و مظاہرہ کو مکمل طور پر مقامی خواتین نے شروع کیا ہے۔ ’پنجرہ توڑ‘ پر یہاں کی سڑک کو جام کرنے کا الزام لگانا بالکل بے بنیاد ہے۔ انہوں نے کہا کہ جہاں جہاں بھی احتجاج ہو رہا ہے وہاں کے لوگوں اور سماجی تنظیموں کو بدنام کرنے کے لئے طرح طرح کی افواہیں پھیلائی جا رہی ہیں تاکہ تحریک کو کمزور کیا جا سکے۔

انہوں نے کہاکہ آئین بچانے کی جنگ میں سماج کے ہر فرقہ کے لوگ خود گھروں سے نکل کر آرہے ہیں اور مظاہرہ کر رہے ہیں۔ جعفرآباد میٹرو اسٹیشن کے قریب بڑی تعداد میں سکیورٹی فورسز کو تعینات کیا گیا ہے۔ دھرنا و مظاہرہ کی وجہ سے میٹرو اسٹیشن کو فی الحال بند کر دیا گیا ہے۔ شمال مشرقی ضلع کے ایک سینئر پولیس افسر نے کہا کہ مظاہرین کو سڑک سے ہٹانے کے لئے بات چیت کی جا رہی ہے۔ سیکورٹی نظام کو برقرار رکھنے کے لئے دہلی پولیس کے ساتھ نیم فوجی دستوں کو بھی تعینات کیا گیا ہے۔

وہیں بھیم آرمی کی جانب سے ’بھارت بند‘ کی حمایت میں چاند باغ (مصطفیٰ آباد) کے مظاہرین نے راج گھاٹ تک مارچ نکالنے کا اعلان کیا ہے۔ قابل غور ہے کہ شہریت ترمیمی قانون کے خلاف شاہین باغ کے ساتھ حوض خاص، جعفرآباد، سیلم پور، مصطفیٰ آباد، نظام الدین، اندرلوك اور منڈاؤلی سمیت دس سے زائد مقامات پر دھرنا و احتجاج ہو رہے ہیں۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close