تازہ ترین خبریںرمضان کی بہاریں

سگریٹ، بیڑی، پان، تمباکو اور حقّہ استعمال نہ کریں روزہ دار: ڈاکٹر تنویر احمد

روزہ دار سحری میں شوگر کی دوا نہ کھائیں

نئی دہلی (انور حسین جعفری)
رمضان المبارک کے با برکت ایام جاری ہیں۔ ماہ صیام میں ہر فرزندان اور دختران توحید کی کوشش ہوتی ہے کہ وہ حکم الہٰی بجا لاتے ہوئے فرض روزوں کی ادائیگی کرتے ہوئے عبادت گذار رہے۔ روزہ دار اس ماہ صیام میں مالک کائنات کی مختلف نعمتوں سے لطف اندوز بھی ہوتے ہیں۔ اس ماہ مبارک میں ننھے روزہ دار بھی خوش نودی خدا کیلئے اپنی حیات کا پہلا ورزہ رکھتے ہیں جن کیلئے روزہ کشائی تقریبات منعقد کی جاتی ہیں، جہاں کھانے پینے کی لاپروائی کے سبب روزہ دار مختلف پریشانیوں میں مبتلہ ہو جاتے ہیں۔ روزہ دار کیا احتیاط کریں کہ وہ آسانی سے روزے رکھ سکیں۔ اس سلسلے میں پارک گروپ آف ہاسپیٹل کے سپریٹیڈنٹ ڈاکٹر سید تنویر احمد (ایم ڈی، ایم بی بی ایس) نے کہاکہ اس گرمی کے موسم میں سب سے ضروری ہے دھوپ سے بچا جائے، سر ڈھنک کر باہر نکلیں۔ کیوں کہ پسینہ نکلنے سے ڈی ہائی ڈریشن کی شکایت یا لو لگ سکتی ہے۔ لو لگنے کی اصل وجہ جسم میں پانی کا کم ہونا ہے اس میں خون گاڑھا ہو جاتا ہے جو دماغ کی طرف نہیں پہنچ پاتا۔ اس لئے ضروری ہے روزہ دار دھوپ سے بچیں اور سر دھنک کر چلیں، ساتھ ہی سحر و افطار میں تھوڑا تھوڑا کرکے پانی کا زیادہ استعمال کریں۔ تاکہ جسم میں پانی کی کمی نہ ہو سکے۔ لیکن ٹھنڈا پانی یا ٹھنڈے مشروبات کا استعمال نہ کریں۔

ڈاکٹر تنویر احمد نے کہاکہ نمک یا کھجور سے افطار کرکے ہو سکے تو گنگنے پانی کا استعمال کریں ورنہ سادہ پانی ہی پئیں۔ نمک اور گنگنے پانی سے افطار کرنے سے گلے میں تکلیف نہیں ہو گی جبکہ ٹھنڈا پانی یا مشروبات سے گلے میں تکلیف، سر درد وغیرہ کی پریشانی پیدا ہوتی ہے۔ ساتھ ہی روزہ داروں کے لئے کولڈ ڈرنک کا استعمال بیحد نقصان دہ ہے۔ ڈاکٹر تنویر احمد نے کہاکہ جو لوگ افطار کے فوراً بعد سگریٹ، بیڑی، پان، تمباکو اور حقّہ استعمال کرتے ہیں وہ اس عمل سے گریز کریں۔ کیوں کہ ویسے تو تمباکو نوشی مضر صحت ہے ہی ساتھ ہی افطار کے بعد ان کے استعمال سے چکر ا ٓجائیں گے اور الٹی آنے کا خطرہ رہتا ہے۔

انہوں نے کہاکہ جن لوگوں کو شوگر جیسی بیماری ہے وہ روزہ دار شو گر مانریٹنگ کریں۔ شوگر کے مریض روزہ دار بغیر سحری کے روزہ نہ رکھیں، سحری میں پیٹ بھر کر کھانا کھائیں ساتھ ہی کچھ میٹھی سیوئیاں بھی ضرور کھالیں۔ روزہ دار سحری میں شوگر کی دوا نہ کھائیں۔ کیونکہ طویل وقت کے روزہ میں انسولن کم ہو جائے گا اور شوگر کم ہو جائے گی۔ جوکہ مریض کے لئے خطرناک ہے۔ اسی طرح افطار کے فوراً بعد شوگر کی دوا نہ کھائیں بلکہ کھانا کھانے کے بعد ہی دوا کھائیں۔ روزہ دار تیز مصالے دار چٹپٹے، تلے بھنے کھانوں سے گریز کریں کیوں کہ ان سے ایسیڈٹی اور جلن کی شکایت ہو گی۔

ڈاکٹر تنویر احمد نے کھجور مکمل غذا ہے اس کا استعمال کریں اور دودھ دہی اور قدرتی مشروبات تازے موسمی پھلوں کے جوس اور پھلوں کا استعمال بیحد مفید ہے۔ ڈاکٹر تنویر احمد نے کہاکہ ان دنوں گرمی کے موسم میں تربوز، خربوزہ، بیل گری اور اس کا شربت، ستّو، پودینے کا جل جیرا، کچے عام کا پنّا وغیرہ استعمال بیحد مفید ہے۔ انہوں نے کہاکہ افطار میں تربوز کا استعمال کریں یہ پانی کی کمی کو دور کرتا ہے، لیکن اس پر پانی نہ پئیں ورنہ ہیزا ہونے کا خطرہ رہتا ہے۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close