اپنا دیشتازہ ترین خبریں

راکیش استھانہ معاملہ: سست تحقیقات پر سی بی آئی کو ہائی کورٹ کی پھٹکار

کورٹ نے کہا دو ماہ میں مکمل کریں تحقیقات، اس کے بعد اور وقت نہیں ملے گا

دہلی ہائی کورٹ نے سی بی آئی کے سابق خصوصی ڈائریکٹر راکیش استھانہ کے خلاف جاری تحقیقات مکمل کرنے کے لئے دو مہینے کا مزید وقت دیا ہے۔ کورٹ نے تحقیقات کی سست رفتار کو لے کر سی بی آئی کو پھٹکار لگائی۔ کورٹ نے کہاکہ اب آگے تحقیقات کے لئے مزید وقت نہیں دیا جائے گا۔

سی بی آئی کی جانب سے کورٹ کو بتایا گیا کہ گزشتہ 12 ستمبر کو امریکہ اور گزشتہ ہفتے متحدہ عرب امارات کو لیٹر روگیٹری بھیجے گئے ہیں۔ ان کے جواب کا انتظارہے۔ تب کورٹ نے پوچھا کہ جانچ کا حکم جنوری میں دیئے جانے کے بعد اتنی تاخیر سے لے کر روگیٹری کیوں بھیجے گئے؟ جانچ کو یوں ہی اتنے وقت تک نہیں لٹکایا جا سکتا ہے۔

واضح رہے کہ31 مئی کو ہائی کورٹ نے جانچ مکمل کرنے کے لئے سی بی آئی کو 4 ماہ کا وقت دیا تھا۔ گزشتہ 12 اپریل کو سماعت کرتے ہوئے دہلی ہائیکورٹ نے سی بی آئی کو ہدایت دی تھی کہ وہ جرائم سے متعلق تفصیلی واقعات کی ٹائم لائن بتائے۔ سماعت کے دوران سی بی آئی نے بتایا تھاکہ وہ دوسرے ممالک کو خط لکھ کر ثبوت کے لئے درخواست کرے گا۔ تب کورٹ نے کہا تھاکہ آپ ہمیں یہ بتائیں کی آپ کو دوسرے ممالک کو خط لکھ کر ثبوت کے لئے کب درخواست کریں گے؟

استھانہ کے خلاف کیس ستیش سانا سے منسلک ایک معاملے میں درج کیا گیا ہے۔ ستیش سانا ہی وہ شخص ہے، جس نے قریشی سے منسلک اپنا کیس رفع دفع کرنے کے لئے استھانہ کو تین کروڑ روپے رشوت دینے کا الزام لگایا ہے۔ سانا کا نام آلوک ورما اور راکیش استھانہ کو رشوت دینے کے الزام میں سامنے آیا ہے۔ سانا کے مطابق اس سے رشوت کا مطالبہ کیا گیا تھا۔

ایف آئی آر کے مطابق منوج پرساد اور سومیش پرساد ستیش سانا سے دبئی میں ملے اور اس کا معاملہ رفع دفع کرنے کی یقین دہانی کرائی۔ سانا دبئی کا کاروباری ہے۔ سی بی آئی اس کے خلاف گوشت کاروباری سے تعلق کو لے کر تحقیقات کر رہی ہے۔ قریشی سال 2014 کے بعد سے بدعنوانی کے کیس میں بہت سے ایجنسیوں کے نشانے پر ہے۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close