اپنا دیشتازہ ترین خبریں

رابرٹ واڈرا کو ملی بیرون ملک جانے کی اجازت

دہلی کی راؤز ایونیو کورٹ نے پیر کے روز کانگریس کی عبوری صدر سونیا گاندھی کے داماد اور منی لانڈرنگ کیس میں ملزم رابرٹ واڈرا کو بیرون ملک جانے کی اجازت دے دی۔ اسپیشل جج اروند کمار نے یہ حکم دیا۔

سماعت کے دوران ای ڈی نے واڈرا کی عرضی کی مخالفت کی۔ ای ڈی نے کہاکہ واڈرا نے بیرون ملک جانے کے لئے وقت سے ٹھیک پہلے عرضی دائر کی ہے۔ ان کے بیرون ملک کے پروگرام کو ویری فائی کرنے کا بھی وقت نہیں ملا۔ اس پر واڈرا کی جانب سے سینئر وکیل کے ٹی ایس تلسی نے کہا کہ واڈرا نے کورٹ کے احکامات کی ہمیشہ پیروی کی ہے۔ انہیں اپنا علاج کرانے کے علاوہ بزنس کے کام سے اسپین جانا ہے۔ اس لیے انہیں بیرون ملک جانے کی اجازت دی جائے۔ وارڈا نے عرضی داخل کر دو ہفتے کے لئے بیرون ملک جانے کی اجازت مانگی تھی۔

قابل ذکر ہے کہ اس سے پہلے کورٹ انہیں 13 ستمبر اور 3 جون کو بیرون ملک جانے کی اجازت دے چکی ہے۔ منی لانڈرنگ کے معاملے میں عدالت نے 1 اپریل کو واڈرا کو مشروط پیشگی ضمانت دی تھی۔ کورٹ نے کہا تھا کہ انہیں ملک سے باہر جانے سے پہلے کورٹ کی اجازت لینی ہو گی۔ واڈرا نے دہلی ہائی کورٹ میں ایک درخواست دائر کر ٹرائل کورٹ میں اپنے خلاف چل رہے معاملے کو منسوخ کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ یہ پٹیشن اب زیر التوا ہے۔ یہ معاملہ واڈرا کی قریب 1.9 ملین برطانوی پاؤنڈ کی جائیداد کی خریداری سے منسلک ہے۔ ای سی آئی آر کی بنیاد پر ای ڈی نے واڈرا سے کئی بار پوچھ گچھ کی ہے۔ اس معاملے میں واڈرا نے دہلی کی پٹیالہ ہاؤس کورٹ میں پیشگی ضمانت کی درخواست دائر کی ہے۔ ای ڈی نے واڈرا کو حراست میں لے کر پوچھ گچھ کا مطالبہ کیا ہے اور کورٹ سے کہا ہے کہ وہ تحقیقات میں تعاون نہیں کر رہے ہیں۔

ای ڈی کے مطابق لندن کی یہ پراپرٹی 12، برائن اسٹون اسکوائر میں واقع ہے۔ اس جائیدادکو سنجے بھنڈاری 1.9 ملین برطانوی پاؤنڈ میں خریدا تھا اور اسے 2010 میں 1.9 ملین برطانوی پاؤنڈ میں ہی فروخت کر دیا تھا۔ جبکہ بھنڈاری نے 65900 برطانوی پاؤنڈ اس کی تزئین کاری پر خرچ کر چکا ہے۔ اس کا صاف مطلب یہ ہے کہ اس پراپرٹی کا اصلی مالک بھنڈاری نہیں تھا بلکہ رینوویشن کا خرچ واڈرا نے برداشت کیا تھا۔ اس معاملے میں واڈرا نے اپنی صفائی میں کورٹ کو بتایا تھا کہ اس کیس کے پیچھے سیاسی وجہ ہے۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close