تازہ ترین خبریںدلی نامہ

دہلی کانگریس میں تبدیلوں کے باوجود آپسی رسہ کشی جاری

نئی دہلی (انور حسین جعفری)
دہلی پردیش کانگریس کمیٹی میں ان دنوں دہلی کانگریس کمیٹی کی صدر شیلا دکشت اور دہلی کے انچارج پی سی چاکو میں زبردست رسہ کشی جاری ہے۔ جس کے سبب پارٹی میں تبدیلوں کے امکانات بھی قوی ہو گئے ہیں۔

سیاسی ماہرین کی مانیں تو پارٹی میں زبردست اندرونی خلفشار جاری ہے اور اتحاد ختم ہو رہا ہے۔ ایک جانب جہاں دہلی کانگریس کمیٹی کی ذیلی کمیٹیوں میں میں تبدیلی چل رہی ہیں وہیں دوسری طرف پارٹی میں دہلی کی صدر کے فیصلہ کی مخالفت کی جا رہی ہے۔ یہ کہنا غلط نہ ہوگا کہ دہلی پردیش کانگریس کمیٹی دو گروپوں میں تقسیم ہو گئی ہے۔ بلاک کمیٹی کی تحویل کے بعد صوبائی کانگریس نے نئے سرے سے اس کی تشکیل کا کام شرو ع کر چکی ہے۔

کانگریس کا کہنا ہے کہ جن بلاک صدور نے پارلیمانی الیکشن میں اچھا کام کیا ہے انہیں دوبارہ عہدہ دیا جا سکتا ہے۔ یہ فیصلہ بلاک ابزور کی بنیاد پر طے ہوگا۔ صوبائی ترجمان جتیندر کوچر نے کہاکہ ہمارا مقصد صر ف صوبائی کانگریس کو مضبوط کرنا ہے، اگر کسی نے اچھا کام کیا ہے تو اسے دوبارہ موقع دیا جانا چاہئے۔

سیاسی تبصر ہ نگاروں کا کہنا ہے کہ صوبائی کانگریس کمزور ہو چکی ہے۔ صوبائی کانگریس کمیٹی میں رسہ کشی کے سبب آج حالات ایسے ہیں کہ کانگریس کی ریلی میں دو ڈھائی ہزار لوگ بھی شامل نہیں ہو پاتے یہ ناکامی نہیں تو اور کیا ہے۔ صوبائی کانگریس کے ذرائع کے مطابق 272 وارڈوں میں نگم الیکشن لڑ چکے لیڈر 280 بلاک صدر، 70 اسمبلی علاقوں میں الیکشن لڑ چکے امیدوار، پارلیمانی الیکشن میں پارٹی کے امیدوار رہ چکے ہیں۔ سات لیڈر کو ملا دیں تو یہ تعداد 629 ہو جاتی ہے۔ اس کے علا وہ یوتھ کانگریس سیوا دل، خواتین کانگریس، جیس فری ٹیمیں ہیں۔ساتھ ہی 15 الگ الگ سیل ہیں۔ ان سب کے باوجود کانگریس کے مظاہر ے میں پانچ ہزار لوگ بھی نہیں ہوتے ہیں۔ ہمیں بھیڑ جمع کرنے کے لئے گاڑیاں بھیجنی ہوتی ہیں۔ اتنی تعداد میں لیڈران اور عہددران کے باوجود سب کے سب کام چور بنے ہوئے ہیں۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close