تازہ ترین خبریںدلی این سی آر

دہلی: سرکاری زمین پر بنی مساجد کا ٹوٹنا طے، بی جے پی رکن پارلیمنٹ کی دھمکی

دہلی میں اقتدار میں واپسی کیلئے ہرممکن کوشش کرنے والی بی جے پی اب دہلی کو ہرطرح سے فرقہ وارانہ رنگ دینے میں مصروف ہوگئی ہے۔ بی جے پی چاہتی ہے کہ کسی بھی طرح سے دہلی کے الیکشن کو فرقہ وارانہ رنگ دے کر اقتدار میں واپسی کے راستہ کو آسان بنایا جاسکے۔ اسی لئے بی جے پی کی اعلیٰ قیادت شہریت قانون جو کہ ملک اور آئین کے خلاف ہے اس کو کسی نہ کسی طرح فرقہ وارانہ رنگ دے کر ہندوووٹ بینک کو مضبوط کرنا چاہتی ہے۔ اور وہ اندرخانہ ہندوؤں کو یہ پیغام دینے کی کوشش کررہی ہے کہ مسلمان دیکھو مودی جی کی حکومت سے کتنا پریشان ہیں۔ اب اگر دہلی میں بھی بی جے پی کی حکومت ہوگی تو مسلمانوں کو مزید پریشانی کا سامنا کرنا پڑے گا۔

اس سلسلے میں بی جے پی کے ممبرپارلیمنٹ پرویش ورما لگاتار مسلمانوں کے مسجدوں کو گرانے کی دھمکیاں دے رہے ہیں اور کہہ رہے کہ اگر بی جے پی اقتدار میں آئی تو دہلی کے مسجدوں کو توڑ دیا جائے گا۔ دہلی سے بی جے پی کے ممبرپارلیمنٹ پرویش ورما نے کہا ہے کہ دہلی کی سرکاری زمینوں پر بنی مسجدوں کا ٹوٹنا کا یقینی ہے۔ بتا دیں کہ کچھ دن پہلے سرکاری زمینوں پر بنی مسجدوں کو لے کر پرویش ورما نے ایل جی کوخط بھی لکھا تھا۔ پرویش ورما نے کہا کہ دہلی کی اروند کیجریوال حکومت نے 5 سال بہانہ بنایا کہ مرکزی حکومت کام نہیں کرنے دیتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ کیجریوال حکومت نے 500 اسکولوں کی بجائے صرف 35 سکولوں کی بلڈنگیں بنوائی ہیں۔

بی جے پی کے ممبرپارلیمنٹ نے کہا کہ دہلی حکومت نے ایک بھی ڈگری کالج نہیں بنایا ہے۔ ہیلتھ کیئر میں کوئی بہتری نہیں لائی ہے۔ لاسٹ مائل سہولیات میں کوئی بہتری نہیں کی گئی ہے۔ ابھی تک 300 بسوں کو خریداگیا جبکہ 5000 کا وعدہ کیا تھا،حکومت فیل ہو چکی ہے۔ سی سی ٹی وی کچھ جگہ لگائے گئے ہیں، لیکن اس کا کنٹرول سینٹر ہی نہیں ہے۔ 14 لاکھ کا وعدہ کیا تھا لیکن 50000 تین ماہ میں لگایا، زیادہ تر سی سی ٹی وی کام نہیں کرتے ہیں۔

پرویش ورما نے کہا کہ گاؤں کی ترقی کی بات کہی تھی لیکن میں چیلنج دیتا ہوں کہ ایک بھی دیہات گاؤں میں ترقیاتی کام کئے گئے ہوں تو بتا دیں۔ دہلی کے مسائل کے بارے میں ا نہیں پتہ ہی نہیں ہے۔ دہلی کا سرکل ریٹ 5 کروڑ کا کرنے کا وعدہ انہوں نے کیا،یہ فیصلہ غلط تھا۔ کون 40 لاکھ کی اسٹامپ ڈیوٹی دے گا۔ کسان اپنی زمین فروخت نہیں کرپائے گا، کیجریوال حکومت کا یہ فیصلہ غلط ہے۔ مرکز کی حکومت نے دہلی کے لئے تمام ترقیاتی کام کئے، جس سے دہلی کی ترقی ہوئی۔ شاہراہ بننے کی وجہ سے آلودگی میں کمی آئی۔ دہلی- ممبئی ایکسپریس وے 90000 کروڑ کا بنایا۔ ایشیا کا سب سے بڑا ایکسپو سینٹر مرکزی حکومت بنانے کی تیاری کر رہی ہے۔ یہ مرکزی حکومت کی کل 26000 کروڑ کا پروجیکٹ تھا، میٹرو فیز 4 کی منظوری حکومت ہند نے دی۔

پرویش ورما نے کہا کہ نجف گڑھ میں مرکزی حکومت نے 100 بستروں کا اسپتال بنانے کا فیصلہ کیا ہے۔ پی ایم کوشل یوجناسے لوگوں کو روزگار کے مواقع مل رہے ہیں۔ لال قلعہ میں میوزیم بنایا گیا۔ تمام ممبران پارلیمنٹ نے 300 سے زیادہ اوپن جم کا نرشروع کریا، جس سے لوگ فٹ رہ سکیں۔ 3 اسٹیڈیم کی تعمیر دواریکا میں کیا گیا۔

پرویش ورما نے کہا کہ جب اروند کیجریوال وزیر اعلیٰ بنے اس وقت دواریکا میں پانی کی قلت تھی۔ بی جے پی حکومت بننے کے بعد دواریکا ٹریٹمنٹ پلانٹ تک پائپ لائن ڈلوائی۔ اس وقت صدر راج تھا۔ اسی وقت یہ وزیر اعلیٰ بنے اور تیسرے دن ہی انہوں نے دواریکا ٹریٹمنٹ پلانٹ کا افتتاح کرنے پہنچے۔ کہا کہ میرے کوششوں سے پانی مل رہا ہے، جبکہ یہ تمام کوششیں میں نے کی تھی، یہ جھوٹ بولتے ہیں۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close