تازہ ترین خبریںدلی نامہ

دہلی تشدد: اروند کجریوال کا فساد متاثرین کے لئے معاوضہ کا اعلان

فساد میں ہلاک افراد کے لواحقین کو 10 لاکھ روپے ٭نابالغ مہلوکین کیلئے 5 لاکھ روپے ٭شدید زخمیوں کو 2 لاکھ ٭تشدد میں یتیم ہوئے بچوں کو 3 لاکھ ٭معذور ہو جانے والے افراد کو 5 لاکھ معاوضہ ٭مکانات اور دکانیں جلنے والوں کو 5-5 لاکھ معاوضہ ٭فرشتہ اسکیم کے تحت ہوگا تشدد میں زخمیوں کا مفت علاج ٭فساد متاثرین کو مفت کھانا بھی مہیا کرائے گی دہلی حکومت

نئی دہلی(انور حسین جعفری)
دہلی کے وزیر اعلی اروند کجریوال نے آج شمال مشرقی دہلی کے مختلف علاقوں جعفرآباد، موجپور، کردم پوری، یمنا وہار، گوکل پوری، مصطفی آباد، چاند باغ، بھجن پورا، اشوک نگر، سونیا وہار، کھجوری، شیو وہار، بابو نگر اور دیگر علاقوں میں بھڑکے فرقہ وارانہ فسادات میں متاثرین کو معاوضہ دینے کا اعلان کیا ہے۔

دہلی سکریٹریٹ میں منعقدہ پریس کانفرنس میں آج وزیر اعلی کجریوال نے اعلان کیا کہ دہلی میں پیش آئے پر تشدد واقعات میں جاں بحق ہوئے افراد کے لواحقین کو 10 لاکھ روپے معاوضہ دیا جائے گا۔ شدید زخمیوں کو دو لاکھ معاوضہ، جن کے مکانات جل گئے ہیں انھیں 5 لاکھ معاوضہ، جن کی دکانیں جلی ہیں ان کو بھی 5 لاکھ معاوضہ (انشورنس نہ ہونے پر)، ٹوٹے ای رکشا کیلئے 25 ہزار، تشدد میں معذور ہو جانے والے افراد کو 5 لاکھ معاوضہ اور تشدد میں یتیم ہونے والے بچوں کو -3 3 لاکھ معاوضہ دیا جائے گا۔ وزیر اعلی نے کہاکہ اس کے علاوہ دہلی حکومت کی فرشتہ اسکیم کے تحت فسادات میں زخمیوں کا مفت اور بہتر علاج کیا جائے گا۔ کاغذات میں تاخیر پر فوری امداد کیلئے 25ہزار رو پے دیئے جائیں گے۔

سکریٹریٹ میں منعقدہ پریس کانفرنس میں وزیر اعلی اروند کجریوال کے ساتھ نائب وزیر اعلی منیش سسودیا، وزیر ستیندر جین اور کیلاش گہلوت بھی بطور خاص موجود تھے۔ وزیر اعل اروند کجریوال نے کہاکہ شمال مشرقی دہلی میں تشدد میں کمی آئی ہے اور صورتحال میں بہتری آرہی ہے۔ کجریوال نے کہا کہ اس تشدد سے سب کو بڑا نقصان ہوا ہے۔ دہلی حکومت مرنے والوں اور مکان و دکان کا نقصان اٹھانے والوں کو معاوضہ دے گی۔ اگر کسی زخمی کو نجی اسپتال میں علاج کرایا جاتا ہے تو اس کے علاج کے اخراجات بھی دہلی حکومت برداشت کرے گی۔

دہلی حکومت کی فرشتہ اسکیم کے تحت مفت علاج کیا جائے گا۔ اروند کجریوال نے کہاکہ دہلی حکومت متاثرین کو مفت کھانا مہیا کرائے گی، کھانا پہنچانے کا کام آج سے شروع کر دیا گیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ فسادات میں جن کے کاغذات جل گئے ہیں ان کیلئے اسپیشل کیمپ منعقد کئے جائیں گے، طلباء کی کتابیں جلنے پر کتابیں اور یونیفارم مفت دی جائے گی، ساتھ ہی بورڈ کے امتحانات دینے کیلئے دوبارہ انتظامات کریں گے۔ انہوں نے کہاکہ ڈی ایف سی کو لون دینے کے احکامات جاری کر دیئے گئے ہیں ساتھ ای ڈی ایم سی کو فساد کے علاقوں میں فوری صفائی کرنے کی بھی ہدایات جاری کر دی گئی ہیں۔

انہوں نے کہاکہ فساد زدہ علاقوں میں متاثر افراد کیلئے 24گھنٹے چلنے والی ہیلپ لائن نمبر جاری کئے جا رہے ہیں۔ 18 ایس ڈی ایم کو نو ڈل افسر کے طور پر مقرر کیا ہے، محلوں میں امن وامان برقرار رکھنے کیلئے ہر جگہ امن کمیٹیاں تشکیل دی جا رہی ہے۔ دہلی حکومت کی طرف سے تشدد کو روکنے کیلئے تمام ضروری اقدامات اٹھائے جا رہے ہیں۔ دہلی تشدد میں عام آدمی پارٹی کے کونسلر طاہر حسین کا نام آنے کے بارے میں کئے گئے سوال کے جواب میں وزیر اعلی اروند کجریوال نے کہاکہ اگر عام آدمی پارٹی کا کوئی لیڈر پر تشدد میں ملوث ہونے کا الزام ثابت ہوتا ہے تو اسے دوگنا سزا دی جانی چاہئے۔ جو بھی اس معاملے میں قصوروار پایا جاتا ہے اسے سخت سزا ملنی چاہئے۔ وزیر اعلی نے کہا کہ قومی سلامتی کے معاملے پر کوئی سیاست نہیں ہونی چاہئے۔

واضح رہے کہ اتوار کے روز بی جے پی کے لیڈر کپل مشرا کی اشتعال انگیز تقریر کے بعد شمال مشرقی دہلی کے مختلف علاقوں میں فرقہ وارانہ فسادات کی آگ بھڑک گئی تھی۔ جس میں تقرباً 35 افراد ہلاک اور 200 سے زیادہ زخمی ہیں، یہ فساد کی آگ تقریباً ٹھنڈی ہوگئی ہے، لیکن کشیدگی پوری طرح برقرار ہے آج صبح بھی موجپور اور مصطفی آباد سمیت کئی علاقوں میں کچھ واردات پیش آئی ہیں۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close