اترپردیش

دو مریضوں کی مثبت رپورٹ کے ساتھ امروہہ میں بھی کرونا کی دستک

انتظامیہ ہوش فاختہ، عوام میں خوف، متاثروں کے رہائشی علاقے سیل، 61 سالہ امروہہ ساکن گزشتہ 2 اپریل کو اوکھلا سے پہنچا جبکہ 21 سالہ 4 اپریل کو بنارس سے جویا آیا

امروہہ، (سالار غازی)
گزشتہ شب ضلع کے دو مریضوں میں کورونہ مثبت رپورٹ آنے سے خوف ہراس پھل گیا یہ پہلا موقع ہے جب امروہہ میں دو مریضوں کی رپورٹ مثبت آئی ہے، ضلع کے آفیسر آدھی رات کو ہی سرگرم ہو گئے اور دونوں مریضوں کو پہلے امروہہ بعد میں مورادآباد بھیج دیا گیا ہے.

بدھ کے روز دیر رات جب سی ایم او ڈاکٹر میگھ سنگھ اس رپورٹ سے افسران کو آگاہ کیا تو خوف و ہراس پھیل گیا۔ محکمہ صحت کے ساتھ ساتھ پولیس انتظامیہ کے افسران ضلع اسپتال کی طرف دوڑ پڑے۔ فوری طور پر آئسولیشن کے وارڈ میں موجود کورونا کے دیگر مشتبہ افراد کو دوسرے وارڈوں میں منتقل کیا گیا اور ان دونوں کو اس انتہائی نگہداشت میں داخل کیا گیا۔

شہر کے محلہ چوک کا رہائشی ایک 61 سالہ شخص 2 اپریل کو دہلی کے اوکھلا سے امروہہ واپس آیا۔ یہاں آنے کے بعد کھانسی، سردی اور سانس لینے میں تکلیف ہوئی۔ اسی طرح جویا کے جامع مسجد علاقے کا 21 سالہ طالب علم، جو 4 اپریل کو بنارس سے واپس آیا تھا اس کو بھی پریشانی کا سامنا کرنا پڑا۔ تحقیقات سے معلوم ہوا ہے کہ ان کے دونوں علامات کورونا سے ملتے جلتے ہیں۔ 7 اپریل کو دونوں کے نمونے جانچ کے لئے میرٹھ لیب بھیجے گئے تھے۔ بدھ کی رات جب ان کی رپورٹ سامنے آئی تو سب کے ہوش اڑ گئے۔ دونوں مریضوں میں کورونا مثبت پایا گیا۔ محکمہ صحت سے لے کر پولیس انتظامی سطح تک ہلچل مچ گئی۔

ڈی ایم اومیش مشرا، سی ایم او ڈاکٹر میگھ سنگھ موقع پر پہنچ گئے۔ دونوں مریضوں کو الگ تھلگ وارڈ میں داخل دیگر مریضوں سے دور مختلف وارڈوں میں منتقل کردیا گیا تھا۔ رات کے وقت محکمہ صحت کی ٹیموں کو بھی علاقہ کے مکینوں کی نگرانی کے لئے بھیجا گیا، جن میں مثبت طور پر آنے والے دو مریضوں کے اہل خانہ بھی شامل ہیں۔ محلہ چوک میں 50 سے زائد خاندانوں کو گھر کے اندر ہی رہنے کی سخت ہدایات دی گئیں اور دو درجن مکانوں کی سخت نگرانی کی جا رہی ہے جویا میں بھی کورونا مثبت مریض کا گھر اور آس پاس کے کافی تعداد میں کنبوں کو محصورکر دیا گیا تھا۔

سی ایم او ڈاکٹر میگھ  سنگھ نے بتایا کہ ضلع اسپتال میں کورونا مریضوں کے علاج معالجے کی سہولت موجود نہیں ہے۔ دونوں کو مراد آباد ریفر کر دیا گیا۔ اب ترجیح یہ ہے کہ دونوں مریضوں کے آس پاس زیادہ سے زیادہ افراد کی جانچ کرنا۔ دونوں کنبے کے ساتھ ساتھ آس پاس کے لوگوں کے نمونے بھی تفتیش کے لئے بھیجے جا رہے۔ ان دونوں کے مکانات کے ایک کلو میٹر کے دائرے میں صفائی ستھرائی تیز کر دی گئی ہے۔ جمعرات کے روز بھی صورتحال انتہائی سنگین ہو سکتی ہے کیوں کہ شب برات کے موقعے پر لوگ گھروں سے نکل سکتے ہیں جس کی وجہ سے پولیس کی گشت میں بھاری اضافہ کر دیا گیا ہے۔

ڈی ایم امیش مشرا اور ایس پی ڈاکر ویپن تاڈا نے آج صبح محلہ چوک اور جویا کے متعلقہ علاقے کا دورہ کیا اور سبھی مکینوں سے اپیل ہے کہ وہ چوکس رہیں اور پولیس انتظامیہ کے ساتھ تعاون کریں۔ مرکزی اور ریاستی حکومت کی ہدایت پر لاک ڈاؤن اور معاشرتی دوری کی مہم پرعمل کریں۔ ضلع انتظامیہ کوشش کر رہی ہے کہ جلد سے جلد صورتحال پر قابو پایا جاسکے اور مریضوں کو ہر ممکنہ علاج معالجہ فراہم کیا جائے۔ عوامی تعاون کی بنیاد پر ہی اس صورتحال کو جلد کنٹرول کیا جاسکتا ہے دونوں مریضوں کے اہل خانہ کو رات میں ہی آئسولیشن سنٹر میں داخل کر ان کے نمونے بھی جانچ کے لیے بھیج دے گئے ہیں۔ ضلع بھر میں الرٹ جاری کر دیا گیا ہے بغیر ماسک کے کوئی بھی نظر آیا تو اس کو جیل بھیجنے کے احکامات جاری کر دے گئے ہیں۔ ادھر مردآباد سے ملی خبروں کے مطابق دونوں مریضوں کا علاج کیا جا رہا ہے۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close