تازہ ترین خبریںدلی نامہ

حج خدمت کےلئے لوگوں کو بھیجنے کے نام پر ہو رہی ہے جعلسازی

50 ہزار روپے میں خادم الحجاج کےلئے بھیجنے والا گروہ سرگرم، حج فارم پر ’اپروڈ‘ کی مہر لگا کر رہے ہیں ٹھگی، فرضی فون نمبر، ایڈرس اور نام سے ہو رہی لوٹ، کئی افراد ٹھگی کا شکار، دہلی حج کمیٹی نے اس طرح بھیجنے کے طریقے کو بتایا جعلسازی، لوگوں سے کی ہوشیار رہنے اور جھانسے میں نہ آنے کی اپیل،

نئی دہلی ( انور حسین جعفری) :
حج مشن 2019کے آغاز کے ساتھ ہی حج اور حج خدمات پر جانے کے خواہشمندوں کو ٹھگنے کے لئے دھوکے باز، جعلسازوں کے گروہ بھی سرگرم ہو گئے ہیں۔ جو بھولے بھالے، گاؤں دیہات کے اور نہ خواندہ افراد کو اپنے جال میں پھنسا لیتے ہیں۔ ہر سال ہی حج پر جانے والے خواہشمندوں اور حج کی خدمات پر جانے کے خواہشمندوں کو خادم الحجاج کے لئے بھیجے جانے کے نام پر جعلسازی کے اکثر واقعات سننے کو ملتے ہیں، جو لوگوں کو ٹھگ کر ان سے پیسہ جمع کرکے بھاگ جاتے ہیں۔

تازہ واقع میں دہلی میں سر گرم ایک ایسے ہی جعلساز گروہ کا انکشاف ہوا ہے، جو 50ہزار روپے میں حج خدمات پر بھیجنے کے نام پر لو گوں کو ٹھگنے کا کام کر رہا ہے۔ اس کی جعلسازی کا شکار گجرات کے کئی افراد بن چکے ہیں۔ یہ جعلساز گروہ نیو فرینڈس کالونی میں سن رائز ڈائگنوسٹکس سینٹر B-4 بیس منٹ خضرا ٓباد، نددیک لائنس اسپتال نیو فرینڈس کالونی میں لوگوں کا میڈیکل کرا رہا ہے۔ جن سے 5500روپے اینٹھے جا چکے ہیں، جبکہ 44 ہزار روپے بعد میں لینے کی بات کی جا رہی ہے۔ ٹھگی کےلئے اس گروہ کے ذریعہ جو وزیٹنگ کارڈ حج خدمات کے خواہشمندوں کو دیا جا رہا ہے اس پر حاجی جی، گڈو خان اور غیور خان نام اور فون نمبر دیئے گئے ہیں۔ جبکہ لوگوں کو پھنسانے کےلئے اسٹار مڈل ایسٹ نام کی کمپنی جس کا پتہ 196/A سیکنڈ فلور رمیش مارکیٹ مین روڈ ایسٹ آف کیلاش نئی دہلی دیا گیا ہے۔ تاکہ بھولے لوگ آسانی سے ان کی جعلسازی کا شکار بن جائیں۔

اطلاع کے مطابق یہ گروہ حج 2019کے حج فارم پرمنظوری کی ’اپروڈ‘ لکھی جعلی مہر لگاکر اس کو استعمال کر رہا ہے۔ ساتھ ہی لو گوں کو جھانسا دینے کےلئے اس پر ’ٹروکاپی‘ لکھی ہوئی مہر بھی لگائی گئی ہے اور کسی کے جعلی سائن بھی کئے گئے ہیں۔ تاکہ لوگ آسانی سے ان کی ٹھگی کا شکار بن سکیں۔ اس جعلسازی کا انکشاف اسوقت ہوا جب کچھ افراد نے اس کی سچائی جاننے کےلئے حج پر بھیجنے والے سرکاری ادارے حج کمیٹی سے اس طرح خادم الحجاج کےلئے بھیجے جانے کے طریقے کے تعلق سے دریافت کیا، تودہلی حج کمیٹی نے ایسے کسی بھی طرح کے حج خدمات پر بھیجے جانے کے طریقے سے انکار کرتے ہوئے اسے جعلسازی بتایا۔ جس سے ان جعلسازوں کی حقیقت سامنے آ گئی۔ دہلی حج کمیٹی کے ڈپٹی ایگزیکٹو آفیسر محسن علی نے بتایا کہ خادم الحجاج کے طور پر صرف سرکاری ملازمین یا سرکار کے تحت چلنے والے اداروں کے ملازمین ہی حج خدمات پر جاتے ہیں۔ اس کے علاوہ ایک یا دو حکومت سے منظور شدہ بڑے ادارے ہیں جو پرائیوٹ طور پرحج کے دوران نوکری کےلئے لیکر جا تے ہیں۔ اس کے علاوہ کوئی بھی خادم الحجاج کےلئے سرکاری طور پر منظوری دینے کا مجاز نہیں ہے، کوئی اگر اس طرح خادم الحجاج کےلئے لیجانے کی بات کرتا ہے تو وہ صرف دھوکہ دے رہا ہے اور وہ جعلساز ہیں۔ ڈپٹی ایگزیکٹو آفیسر محسن علی نے اسٹار مڈل ایسٹ کے تعلق سے کہا کہ یہ کوئی فرضی کمپنی ہے جو لوگوں کو ٹھگنے کاکام کر رہی ہے۔ لہذا ایسے جعلسازوں سے ہوشیار رہیں ان لوگوں کے جال میں لوگ نہ پھنسیں اور فوراً ہی ایسے لوگوں کی پولیس میں شکایت کرکے انہیں پکڑوائیں۔

ڈی ای او نے کہا کہ ہماری معلومات میں یہ بات آئی ہے جس کےلئے حج مشن میں خدمات انجام دینے والی دہلی اور ملک بھر میں موجود حج رضاکار تنظیموں کے رضاکاروں سے بھی ہم یہ اپیل کریں گے کہ ایسے جعلسازوں پر نظر رکھیں اور اپنے اپنے علاقوں میں لوگوں میں بیداری لانے کا کام کریں، انہوں نے کہاکہ ہم اوکھلا اور دیگر علاقوں کے رضاکاروں کو بھی کہیں گے وہ اس گروہ کو کیفر کردار تک پہنچا نے کےلئے مستعد رہیں تاکہ کوئی ان جعلسازوں کا شکار نہ بن سکے۔

ٹیگز
اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close