آئینۂ عالمتازہ ترین خبریں

’جیل جانے سے بچنا ہے تو بی جے پی کے آگے گھٹنے ٹیکنے ہوں گے‘

راشٹریہ لوک سمتا پارٹی (آرایل ایس پی) کے صدر اور سابق مرکزی وزیر اوپندر کشواہا نے مہاراشٹر کی سیاست میں رات و رات ڈرامائی تبدیلی میں نیشنلسٹ کانگریس پارٹی (این سی پی) کے تعاون سے ایک بار پھر بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کی حکومت بننے پر این سی پی پر طنز کرتے ہوئے کہا کہ بدعنوانی کے خلاف سے جیل جانے سے بچنا ہے تو بھارتیہ جنتا پارٹی(بی جے پی) کے آگے گھٹنے ٹیکنے ہوں گے۔

مسٹر کشواہا نے مائکرو بلاگنگ سائٹ پر ٹوئٹ کرکے کہا کہ بدعنوانی کے خوف سے جیل جانے سے بچنا ہے تو بی جے پی کے آگے گھٹنے ٹیکنا ہوگا۔ مہاراشٹر میں رات و رات میٹنگ ہوئی، رضامندی ہوئی، فیصلہ ہوا، عزت ماب سے وقت مانگا، وقت ملا، حکومت بنانے کا دعوی پیش ہوا، صدر راج ہٹانے کا عمل بھی ہوا، گورنر جی نے دعوت دی اور صبح صبح ہی حلف برداری ہوگئی۔ واہ کیا سرجیکل اسٹرائک ہوئی ہے، جمہوریت پر۔

خیال رہے کہ مہاراشٹر میں اسمبلی انتخابات 21 اکتوبر کو ہوئے تھے اور نتائج 24اکتوبر کو آئے تھے۔ 288رکنی اسمبلی میں بی جے پی کو سب سے زیادہ 105، شیوسینا کو 56، این سی پی کو 54 اور کانگریس کو 44 سیٹیں حاصل ہوئی تھیں۔ اکثریت کے لئے 145 اراکین اسمبلی کی حمایت ضروری ہے۔

الیکشن کے بعد ایک مہینے تک چلے سیاسی تعطل کے بعد اچانک ایک بڑے سیاسی الٹ پھیر میں سنیچر کو بی جے پی نے این سی پی کے ایک گروپ کے ساتھ اتحاد کرکے حکومت بنالی۔ گورنر بھگت سنگھ کوشیاری نے صبح تقریباََ ساڑھے سات بجے مسٹر دیوندر فدنویس کو وزیراعلی اور این سی پی کے مسٹر اجیت پوار کو نائب وزیراعلی کے عہدہ کا حلف دلایا۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close