تازہ ترین خبریںدلی این سی آر

تین طلاق قانون مسلمانوں کی مذہبی آزادی پر حملہ: ملی کونسل

آل انڈیا ملی کونسل نے الزام لگایا ہے کہ مرکزی حکومت نے اپوزیشن کو جس طرح دھوکہ میں رکھ کر طلاق ثلاثہ بل منظور کرایا وہ جمہوریت کے قتل کے مترادف اور سیکولر اقدار پر بدنما داغ ہے۔

کونسل کے جنرل سکریٹری ڈاکٹر محمد منظور عالم نے آج یہاں جاری ایک بیان میں کہا کہ حکومت نے جس طرح طلاق ثلاثہ بل کو منظور کرایا ہے اس سے حکومت کی نیت پر سوالیہ نشان کھڑا ہوتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اپوزیشن کا مطالبہ تھاکہ بل کو سلیکٹ کمیٹی میں بھیجاجائے تاکہ کچھ ضروری ترمیمات ہو سکے لیکن حکومت نے اچانک یہ بل راجیہ سبھا میں پیش کرکے ووٹنگ کرا دی اور اس نے اپنی منصوبہ بندی کے تحت کامیابی حاصل کرلی۔

ڈاکٹر منظور عالم نے کہاکہ تین طلاق سے متعلق قانون میں بہت زیادہ تضاد ہے۔ ٹیکنیکل بنیاد پر یہ قانون غلط ہے۔ سرکار کو بل ڈرافٹ کرتے وقت متعلقہ فریق سے بھی بات کرنی چاہیئے تھی اور انہیں اعتماد میں لینا چاہیئے تھا تاکہ ایک جامع قانون بن پاتا لیکن ووٹ بینک کی سیاست کی بنیاد پر یہ ممکن نہیں ہو پایا اور ایک ایسا قانون بن گیا ہے جس میں مسلم خواتین کے حقوق اب غیر محفوظ ہو گئے ہیں۔ اس سے ازدواجی زندگی ڈسٹرب ہوگی۔ اس قانون کا غلط فائدہ اٹھانے کی کوشش کی جائے گی اور مسلم فیملی تباہ وبرباد ہوگی۔

انہوں نے الزام لگایاکہ تین طلاق بل دستور ہند کے صریح خلاف اور آئین میں دی گئی مذہبی آزادی پر حملہ ہے اور اس قانون کے ذریعہ بی جے پی کا مقصد ایک طبقہ کو یہ پیغام دینا ہے کہ اس نے مسلمانوں پر لگام لگا دیا ہے تاکہ وہ ووٹ بینک کی سیاست کر سکے۔ مسلم خواتین کے فلاح وبہبود کا اس بل سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close