اپنا دیشتازہ ترین خبریں

بنگال: ریسٹورنٹ، تفریحی مقامات اور سماجی سرگرمیوں پر روک، امتحانات ملتوی

مغربی بنگال محکمہ داخلہ نے آج نوٹس جاری کرتے ہوئے31مارچ تک ریسٹورنٹ، بپس، بار، کلب، نائٹ کلب ہوکا بار، مساج پارلر، میوزیم، پارک، چڑیا خانہ اور تمام سماجی سرگرمیوں پر پابندی عاید کردی ہے۔ وہیں ہائر سیکنڈری امتحانات کے محض تین پرچے باقی ہیں اس کے باوجود کورونا وائرس کے خطرات کی وجہ سے امتحانات ملتوی کردی گئی ہے۔

محکمہ تعلیم نے بتایا کہ 15اپریل تک امتحانات ملتوی کردیا گیا ہے۔ یہ فیصلہ کورونا وائرس کے بڑھتے ہوئے خطرات کے پیش نظر کیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ ہائی سیکنڈری اسکول کے داخلی امتحانات کو بھی ملتوی کردیا گیا ہے۔ بتا دیں کہ ہائر سیکنڈری امتحانات 12مارچ سے شروع ہوا تھا اور 27 مارچ تک امتحان ہونے والے تھے۔ 23,25,27 مارچ کے امتحانات کو ملتوی کردیئے گئے ہیں۔ ابھی فزکس، جغرافیہ، سنسکرت، فارسی، عربی، جرنلزم کے امتحانات ملتوی کردئیے گئے ہیں۔ حکومت نے 15اپریل تک اسکول، کالج اور دیگر امتحانات ملتوی کردئیے گئے ہیں۔

دوسری طرف محکمہ داخلہ کی جانب سے جاری ریلیز کے مطابق حکومت کورونا وائرس سے نمٹٹنے کیلئے ہر ممکن کوشش کررہی ہے، اس کےلئے سخت نگرانی کی جا رہی ہے اور اس بات کو یقینی بنانے کیلئے کورونا وائرس سے متاثر شخص عوامی بھیڑ بھاڑ کا حصہ بن کر لوگوں کو متاثر نہ کرے اس کیلئے احتیاطی اقدامات کئے جارہے ہیں۔ اس کے علاوہ حکومت نے کورونا وائرس سے متعلق بیداری پھیلانے کیلئے عوامی سطح پر مہم چلائی جا رہی ہے۔ حکومت نے کہا ہے کہ کورونا وائرس سے متاثر شخص کو صحت مند افراد سے بچانےکیلئے حکومت نے تمام سوشل سرگرمیوں پر پابندی عاید کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ حکومت نے لوگوں سے اپیل کی ہے کہ سماجی سرگرمیوں سے مکمل طور پر اجتناب کیا جانا چاہیے۔ اگر سماجی سرگرمی ناگزیر ہوجائے تو کم سے کم افراد اور مناسب دوریوں کے ساتھ کیا جا سکتا ہے۔

محکمہ داخلہ سے جاری نوٹیفکشن میں کہا گیا ہے کہ یہ پابندی 31مارچ تک جاری رہے گی اور اس کی خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔ دورسری جانب کلکتہ پولیس کمشنر انوج شرما نے آ کہا ہے کہ بیرون ممالک سے وطن واپس آنے والوں کو 14 دن تک قرنطینہ میں رہنا ہی ہوگا۔ اگر کوئی اس کی خلاف ورزی کرتا ہے تو اس کے خلاف کارروائی کی جائے گی۔

خیال رہے کہ حالیہ دنوں میں یہ معاملات سامنے آئے ہیں بیرون ممالک سے لونٹنے والوں نے اس کی خلاف ورزی کی ہے۔ جب کہ یہ لوگ اعلیٰ تعلیم یافتہ ہیں۔ بنگال میں کورونا وائرس کا جو پہلا کیس سامنے آیا ہے اس میں بھی لاپرواہی کا معاملہ سامنے آیا۔ جب کہ یہ نوجوان آکسفورڈ یونیورسٹی میں زیر تعلیم ہے اور ماں بھی ریاستی سیکریٹریٹ میں سینئر آفیسر ہیں۔ گذشتہ اتوار کو لندن سے واپس آیا۔ دمڈم ایئر پورٹ پر ان کی کوئی تھرمل اسکریننگ نہیں ہوئی تھی۔ اپنی والدہ کے اثر و رسوخ کی وجہ سے تھرمل اسکریننگ سے بچنے کی کوشش کی۔

ہوائی اڈے کے حکام نے اس کی کوئی بات نہیں مانی اور اسے بیلیا گھاٹا آئی ٹی ہسپتال جانے کا مشورہ دیا تھا۔ یہ نوجوان اتوار کی صبح ہوائی اڈے سے نکلا تھا اور سیدھا اپنی رہائش گاہ چلا گیا۔ وہ دو دن سے شہر میں گھوم رہا ہے۔ شاپنگ مال اور ریستورینٹ بھی گیا۔ کچھ دوستوں سے ملاقات بھی کی۔ اس کی وجہ سے اس وقت جہاں اس کے دوست، ماں کے ساتھ کام کرنے والے اہلکار اور ان کی ماںنے چوںکہ داخلہ سیکریٹری الاپن چکرورتی سے ملاقات کی تھی اس کی وجہ سے یہ سب آئسولیشن میں چلے گئے ہیں۔ اسی طرح کوروناوائرس کا دوسرا مریض بھی لندن سے آیا تھا اور وہ آئسولیشن میں رہنے کے بجائے کئی دنوں تک گھومتا رہا۔

ممتا بنرجی نے اس معاملے میں ناراضگی ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ جب تعلیم یافتہ طبقہ احتیاط برتنے کے بجائے اس طرح رویہ اپنائیں گے تو عام لوگ کیا کریں گے لال بازار کے ایک اعلی افسر نے بتایا کہ پولیس کمشنر انوج شرما کی ہدایت پر بیرون ملک سے لوٹنے والے ہر فرد کے بارے میں پولیس جانکاری جمع کر رہی ہے۔ انہیں لازمی طور پر یہ دیکھنا چاہئے کہ وہ 14 دن کے لئے قرنطینہ میں ہے یا نہیں۔ بصورت دیگر پولیس کمشنر نے حکم دیا ہے کہ ایسے لوگوں کے خلاف کارروائی کی جائے۔ تمام تھانوں اور ڈویژنل ڈپٹی کمشنرز کو ہدایت دی گئی ہے کہ ریاست بھر میں بی بنگال وبا کی بیماری کوویڈ ۔19 ریگولیشن 2020 کی خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف سخت کارروائی کی جائے۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close