اپنا دیشتازہ ترین خبریں

بائیس لاکھ لینے کے بعد بھی سب انسپکٹر نے نہیں کی شادی، معاملہ درج

مدھیہ پردیش کے ضلع دتيا میں تعینات ایک سب انسپکٹر پر ضلع مرینا میں جہیز تشدد کے متعلق معاملہ درج ہوا ہے۔ سب انسپکٹر بھاسکر شرما پر الزام ہے کہ اس کے اہل خانہ نے لڑکی والوں سے پہلے 22 لاکھ روپے جہیز کے نام پر لے لئے۔ اس کے بعد انہوں نے لگژری گاڑی کا مطالبہ کیا، لیکن لڑکی والوں کی طرف سے گاڑی بعد میں دیئے جانے کی درخواست پر لڑکے والے عین شادی والے دن بارات لے کر نہیں پہنچے۔ ایسے میں لڑکی والوں نے پولیس کا سہارا لیا۔

اسٹیشن روڈ پولیس ذرائع کے مطابق مرینا کی پرانی ہاؤسنگ بورڈ کالونی سے تعلق ررکھنے والے رام نواس تیواری نے اپنی بیٹی پرینکا کی شادی دیوی سنگھ پورا کے رہنے والے بھاسکر شرما کے ساتھ طے کی تھی۔ بھاسکر شرما کے اہل خانہ نے 22 لاکھ روپے نقدی لے کر شادی پکی کی۔ لڑکی کے اہل خانہ کی طرف سے پولیس کو دی گئی عرضی میں الزام عائد کیاکہ دو جون کو پھل دان میں 22 لاکھ روپے لینے کے بعد سب انسپکٹر بھاسکر نے پرینکا کے بھائی اودیش تیواری سے جہیز میں ایک لگژری كریٹا کار کا مطالبہ کیا۔ لڑکی کے اہل خانہ نے شادی کے ایک سال بعد کار دینے کا وعدہ کیا، لیکن شادی سے پہلے گاڑی نہیں ملنے سے ناراض سب انسپکٹر بھاسکر شرما 10جون کو شادی کے دن بارات لے کر نہیں آیا۔

الزام ہے کہ اگلے دن لڑکی کے والد اور بھائی نے سٹی پولیس سپرنٹنڈنٹ سے لے کر پولیس سپرنٹنڈنٹ کو کئی مرتبہ عرضی دی، لیکن اسٹیشن روڈ تھانہ انچارج نے رپورٹ لکھنے سے صاف انکار کر دیا۔ اہل خانہ نے معاملے کی معلومات چمبل پولیس زون کے آئی جی اور ایڈیشنل آئی جی کو دی۔ اس کے بعد اسٹیشن روڈ تھانہ پولیس نے واقعہ کے 23 دن بعد گزشتہ روز جہیز ایکٹ کی دفعات کے تحت معاملہ درج کیا ہے۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close