اپنا دیشتازہ ترین خبریں

این آرسی نہیں ہمیں ”روٹی، کپڑا اور مکان“ کی ضرورت ہے: ممتا بنرجی

وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی نے ”شہریت ترمیمی بل“ کی مخالفت کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہماری ترجیحات میں ”روٹی کپڑا مکان“ ہے۔

مغربی مدنی پور ضلع کے کھڑکپور میں تقریر کرتے ہوئے کہا ہے کہ ”ملک کو مذہب کی بنیاد پر تقسیم کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی“۔ ممتا بنرجی نے کہا کہ ملک سے کسی کو بھی نہیں نکالنے دیا جائے گا۔ ممتا بنرجی نے کہا کہ این آر سی نہ نافذ ہوگا اور نہ ڈویژن اور مذہب کی بنیاد پر تقسیم کیا جائے گا۔ ممتا بنرجی نے کہا کہ ملک سے بڑا کوئی نہیں ہوگا۔ ممتا بنرجی نے کہا کہ کیپ اور این آر سی دونوں ایک ہی سکہ کے دورخ ہیں۔ ہم سب ہندوستانی شہری ہیں، ہمارے پاس ووٹر کارڈ ہیں اور ہمارے پاس راشن کارڈ ہیں اور اسکول سرٹیفکٹ ہے۔

ممتا بنرجی نے کہاکہ کچھ لوگوں کے ایمپلائی منٹ کارڈ ہے یا پھر زمین پٹہ کے کاغذات ہیں۔ممتا بنرجی نے کہا کہ شہریت ترمیمی بل میں بہت ہی زیادہ جھول ہے اور اس سے لوگوں میں پریشانی میں اضافہ ہوگا۔وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی نے کہا کہ ہم کیا کھائیں گے، کہاں جائیں گے، کیا کریں گے، یہ کیا چیز ہے۔ کیا ہم نے نہیں دیکھا ہے کہ این آر سی کے نام پر 19 لاکھ بنگالیوں کو نکال دیا گیا ہے۔ یہاں تک کہ ایک لاکھ بہاریوں کے نام این آر سی میں نہیں آیا ہے۔ کورگھاؤں کو بھی ہندو ستانی شہریت نہیں ملی۔ یہ بات سمجھنے کی ض رورت ہے کہ اس ملک کو کس چیز کی سب سے زیادہ ضرورت ہے۔روٹی، کپڑا اور مکان کی ہر ایک کو ضرورت ہے۔

ممتا بنرجی نے کہا کہ بنگال عظیم شخصیات کی سرزمین ہے یہاں کی مٹی نے کئی عظیم لوگوں کو پیدا کیا ہے۔ یہ سر زمین کلچر اور سویلائزیشن کا ہے۔ اس لیے ہم این آر سی اور کیپ سے نہیں ڈرتے ہیں۔ یہاں دوسری ریاستوں سے بڑی تعداد میں آکر آباد ہیں اور ہم سب مل کر رہتے ہیں۔ ایک فیملی کی طرح رہتے ہیں۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close