اپنا دیشتازہ ترین خبریں

ایجوکیشن لون معاف کرنے کا کوئی منصوبہ نہیں: مودی حکومت

حکومت نے واضح کیا کہ ملک اور غیر ملکوں میں طلبہ کو اعلی تعلیم حاصل کرنے میں مدد کےلئے قرض مہیا کیا جا رہا ہے اور اس سے اب تک لاکھوں طلبہ کو فائدہ پہنچا ہے لیکن اس قرض کو معاف کرنے کا اس کا کوئی منصوبہ نہیں ہے۔

وزیر مملکت برائے خزانہ انوراگ ٹھاکر نے پیر کو لوک سبھا میں ایک ضمنی سوال کے جواب میں بتایا کہ منصوبے کے تحت ملک میں تعلیم حاصل کرنے کےلئے طلبہ کو دس لاکھ روپے اور غیر ملکوں میں تعلیم حاصل کرنے کےلئے 20 لاکھ روپے تک کا قرض دیا جاتا ہے۔ منصوبے کے تحت چار لاکھ روپے تک کے قرض کےلئے کوئی گارنٹی نہیں ہے جبکہ ساڑھے سات لاکھ روپے تک کےلئے قرض لینے کےلئے تھرڈ پارٹ کی گارنٹی کا التزام ہے۔

انہوں نے کہاکہ یہ ٹرم لون ہے اور اس کی ادائیگی 15 سال کے اندر کی جانی ہے۔ اس میں ایک سال کےلئے طلبہ کو قرض لوٹانے میں راحت دینے کا بھی التزام کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ حکومت نے بینکوں کو تعلیم میں غیر ہراساں پالیسی اختیار کرنے کےلئے کہا ہے۔ وزیر نے کہاکہ اس قرض کو معاف کرنے کا حکومت کا کوئی منصوبہ نہیں ہے۔ یہ قرض سبھی ضرورت مند طلبہ کےلئے ہے۔ اس قرض سے متعلق معلومات حاصل کرنے کےلئے ودیا لکشمی پورٹل تیار کیا گیا ہے، جس میں ساری معلومات دی گئی ہے۔ پچھلے تین برس کے دوران بقایا ایجوکیشن لون ستمبر تک 75450.68 کروڑ روپے ہو گیا ہے۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close