صحت و تندرستی

اچانک وزن گرنا خطرناک بیماریوں کی طرف اشارہ

بدلتے طرز زندگی کی وجہ سے جہاں موٹاپے اور اس سے پیداہونے والے متعدد امراض کے تئیں لوگ محتاط رہتے ہیں وہیں انہیں اچانک گھٹنے والے وزن پر بھی محتاط رہنا چاہئے کیونکہ تیزی سے گھٹتے وزن پر توجہ نہ دینا خطرناک ثابت ہوسکتا ہے۔

ڈاکٹروں کی مانیں تو اچانک وزن گرنے کے تئیں لاپرواہی خطرناک ثابت ہوسکتی ہے اور وقت رہتے اس سمت توجہ دینے اور ڈاکٹروں کے ذریعہ بتائی گئی جانچ اور علاج کرانے سے صحت مند زندگی میں آئی رکاوٹ سے بچاجاسکتا ہے۔ ہندوستان اور امریکہ سمیت کئی ملکوں کے ماہرین اس بات سے اتفاق کرتے ہیں کہ اچانک وزن گھٹنے پر توجہ نہ دینا خطرناک ثابت ہوسکتا ہے۔

امریکہ کے نیشنل اسنٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ (این آئی ایچ)کے مطابق‘ ایڈیسن ڈیسیز ’میں مبتلا لوگوں کی بھوک بہت ہوجاتی ہے اور اچانک ان کا وزن گرنے لگتا ہے۔ مطالعوں سے پتہ چلا ہے کہ تناؤ بھی اچانک وزن گرنے کی اہم وجوہات میں سے ایک ہے۔ صفدرجنگ اسپتال میں نیفرولوجی ڈپارٹمنٹ کے ہیڈ رہ چکے ڈاکٹر بندو امیتابھ نے میڈیا کو بتایا کہ اچانک وزن گرنے سے کئی بیماریاں ہوسکتی ہیں۔ حال میں ہمدرد انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز میں میڈیسن محکمے میں پروفیسر ڈاکٹر امیتابھ نے کہا،“زیادہ تر لوگوں کو موٹاپے کے خطرے کے بارے میں معلوم ہے اور وہ اس سے نمٹنے کے لئے ورزش، یوگ، کھانے پینے پر کنٹرول اور صحت کے لحاظ سے مثبت طرز زندگی اختیار کرنے جیسے طریقے بھی کرتے ہیں لیکن اچانک وزن گرنا تشویش کا موضوع ہے، اس سے شاید کم ہوگ ہی واقف ہیں۔موسم کی تبدیلی اور کبھی کبھی نئے ماحول میں خود کو ڈھالنے کے عمل کے دوران وزن میں تھوڑی بہت کمی آسکتی ہے لیکن بے وجہ اچانک وزن گرنا ٹھیک نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ کسی شخص کا اگر چھ ماہ کے اندر بیس لائن باڈی ویٹ سے پانچ فیصد وزن کم ہوتا ہے تو اسے فوراً ڈاکٹر کو دکھانا چاہئے۔ ڈاکٹر اس شخص کی میڈیکل ہسٹری کا جائزہ اور ہارمون پینل سمیت کئی ضروری جانچ کرکے اس کی حقیقی وجہ پتہ کرتے ہیں اور مناسب علاج کی صلاح دیتے ہیں۔ اس موضوع پر ڈاکٹر امیتابھ کے مضمون قومی اور بین الاقوامی سطح کے جنرلوں میں شائع ہوچکے ہیں۔

ان کا خیال ہے کہ ذیابیطس،ایچ آئی وی انفیکشن،ہائپرتھائرائڈ،کینسر،رومیٹک ارتھرائٹس،ایڈیسن ڈیسیز،انفلومیٹری باؤل ڈیسیز،اینوریکسیا نارووسا،تپ دق انفیکشن وغیرہ بیماریوں کی وجہ سے کسی شخص کا وزن اچانک کم ہوسکتا ہے۔ تناؤ بھی اس کی بڑی وجہ ہوسکتا ہے،جس کا علاج بے حد ضروری ہے۔ایسے لوگ اگر نیند آنے میں پریشانی، موڈ سونگ، ہاتھوں میں کپکپی، جی مچلانا، باربار پیٹ خراب ہونا، پیٹ درد، گردن میں کسی طرح کی سوجن،جلدی تھکاوٹ اور کمزوری سمیت کسی طرح کی غیر معمولی پریشانی محسوس کرتے ہیں تو انہیں فوراً ڈاکٹر سے رابطہ کرنا چاہئے۔

ڈاکٹر امیتابھ نے کہا،“ذیابیطس میں کئی بار کسی طرح کی علامت سامنے نہیں آتی، اس لئے اچانک وزن کم ہونے کی صورت میں اس کی جانچ کروا لینی چاہئے۔ موٹاپے کے سلسلے میں ضرورت سے زیادہ محتاط رہنے والی لڑکیاں اینوریکسیانرووسیا میں مبتلا ہوسکتی ہیں، جس میں کبھی کبھی وزن کم ہونے کے معاملے میں دو ہزار 677لوگوں پر کی گئی تحقیق میں سات فیصد معاملے ڈپریشن کے تھے۔ ڈپریشن کی حالت میں بدن پر کئی طرح کے منفی اثرات پڑتے ہیں۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close