اپنا دیشتازہ ترین خبریں

اناؤ عصمت دری معاملہ: متاثرہ کا بیان درج کرنے کیلئے ایمس میں لگی عدالت، ملزم سینگر کی پیشی

آل انڈیا انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز (ایمس) میں بدھ کو اناؤ آبروریز معاملے کی متاثرہ لڑکی کا بیان درج کرانے کے لئے ایک عارضی عدالت قائم کی گئی۔

یاد رہے کہ یہ عدالت ایمس کے ٹراما سنٹر میں بنائی گئی ہے۔ اناؤ آبروریزی متاثرہ لڑکی کا بیان ریکارڈ کرنے کے لئے یہ عدالت قائم کی گئی ہے۔ جس میں جج دھرمیش شرما کے سامنے متاثرہ کے بیانات ریکارڈ کیے جائیں گے۔ اناؤ آبروریزی معاملے میں ضلع کے بانگرمؤ سیٹ سے ایم ایل اے کلدیپ سنگھ سینگر اصل ملزم ہیں۔ سینگر اور اس معاملے کے دوسرے ملزم ششی سنگھ کو بھی عارضی عدالت میں لایا گیا۔ بتا دیں کہ معاملہ 2017 کا ہے جب متاثرہ کی عصمت دری کی گئی تھی۔ اس وقت متاثرہ نابالغ تھی۔

غور طلب ہے کہ متاثرہ 28 جولائی کو اپنے کنبے کے ساتھ رائے بریلی سے اناؤ واپس آ رہی تھی، جس گاڑی میں وہ اور اس کے اہل خانہ سوار تھی، ایک ٹرک نے ٹکر مار دی۔ اس حادثے میں متاثرہ کی والدہ سمیت اس کے کنبہ کے دو افراد ہلاک ہوگئے۔ اس معاملے میں متاثرہ شخص شدید زخمی ہوگئی تھی۔ بعد ازاں انہیں علاج کے لئے ایمس لایا گیا اور یہاں بھی ان کا علاج جاری ہے۔ واقعے میں متاثرہ کا وکیل بھی زخمی ہوگیا تھا۔

ایمس میں عارضی عدالت جئے پرکاش نارائن اپیکس ٹراما سینٹر کے پہلی منزل کے سیمینار ہال میں قائم کی گئی ہے۔ دہلی ہائی کورٹ کے حکم کے مطابق، مناسب انتظامات کیے گئے ہیں تاکہ متاثرہ اور ملزم ایم ایل اے کا آمنا سامنا نہ ہو۔ متاثرہ کا بیان لینے کا عمل بند کمرے میں کیا جا رہا ہے اور اس دوران کسی بھی آڈیو ویڈیو ریکارڈنگ کو مکمل طور پر ممنوع قرار دیا گیا ہے۔ عدالت نے ایمس انتظامیہ کو یہ یقینی بنانے کی ہدایت کی ہے۔ معاملے کی سماعت کے دوران ایمس کے سیمینار ہال میں نصب سی سی ٹی وی کیمرے بھی بند رہیں گے۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close