اترپردیشتازہ ترین خبریں

اب ’آگرہ‘ کو ’اگرون‘ کرنے کی تیاری میں یوگی سرکار

اترپردیش حکومت آگرہ شہر کا نام تبدیل کرکے ’اگرون‘ کرنے کو تیار نہیں ہے اور اس ضمن میں کچھ بھی فیصلے کرنے میں تھوڑا وقت لے گی۔ بی جے پی کے کئی لیڈروں نے الہ آباد اورفیض آباد کی طرح تاریخی شہر آگرہ کا نام بدل کر ‘اگرون’ کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔

قابل ذکر ہے کہ ماضی اس بات کا مطالبہ کیا گیا تھا کہ آگرہ میں اگروالوں کی تعداد زیادہ ہے اور مہاراجا اگرسین کی وہ پوجا کرتے ہیں۔ اس لئے اس کا نام تبدیل کرکے ’اگرون‘ کر دیا جائے۔ آگرہ (شمالی) اسمبلی سیٹ سے پانچ بار کے رکن اسمبلی جگن پرساد گرگ نے ماضی میں یوگی حکومت کو ایک خط لکھ کر آگرہ کا نام تبدیل کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔

ذرائع کے مطابق ریاستی حکومت نے بھیم راؤ امبیڈکر یونیورسٹی کے شعبہ تاریخ سے آگرہ کے پرانے نام کے بارے میں تحقیق کرکے حقائق سے آگاہ کرنے کو کہا ہے۔ لیکن اس میں ابھی وقت لگے گا۔ ویسے آگرہ ایک عالمی سیاحتی مقام ہے لہذا اس کا نام تبدیل کرنا آسان نہیں ہے۔ وہیں یوپی حکومت کو ابھی ضلع چندولی کا نام تبدیل کرکے دین دیال اپادھیائے کرنے کی تجویز پر فیصلہ کرنا ہے۔ اس ضلع کے نام کی تبدیلی کے لئے ضلع سے مثبت سفارشات حکومت کو پہلی ہی مل چکی ہیں۔

اور دیکھیں

متعلقہ مضامین

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close